Friday , September 22 2017
Home / شہر کی خبریں / پٹرول اور ڈیزل پر ویاٹ میں اضافہ کا فیصلہ

پٹرول اور ڈیزل پر ویاٹ میں اضافہ کا فیصلہ

عنقریب فیول کی قیمتوں میں اضافہ ممکن، حکومت تلنگانہ کا اقدام
حیدرآباد ۔ 18 ڈسمبر (سیاست نیوز) ریاستی حکومت تلنگانہ کی جانب سے پٹرول اور ڈیزل پر وصول کئے جانے والے ویاٹ میں اضافہ کا فیصلہ کیا گیا ہے اور بہت جلد ریاست میں پٹرول و ڈیزل کی قیمتوں میں بھاری اضافہ ہوسکتا ہے۔ پٹرول پر حکومت کی جانب سے اب تک 31 فیصد ویاٹ وصول کیا جارہا تھا جبکہ حالیہ دنوں میں کئے گئے فیصلہ کے مطابق حکومت بہت جلد اس میں 4.2 فیصد اضافہ کرتے ہوئے اسے 35.2 تک پہنچانے کا منصوبہ رکھتی ہے۔ اسی طرح ڈیزل پر فی الحال 22.25 فیصد ویاٹ وصول کیا جارہا تھا، 4.75 فیصد کا اضافہ کرتے ہوئے اسے 27 فیصد تک پہنچانے کا منصوبہ ہے۔ سرکاری ذرائع کے بموجب فوری طور پر اس اضافہ کے اثرات مرتب نہیں ہوں گے لیکن مستقبل میں پٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں اضافہ ممکن ہے۔ ریاستی حکومت نے جاریہ سال کے اوائل میں جی او جاری کرتے ہوئے پٹرول اور ڈیزل پر ویاٹ میں اضافہ کا اعلان کیا تھا لیکن سخت عوامی احتجاج اور شدید برہمی کے بعد حکومت نے اس جی او سے دستبرداری اختیار کرتے ہوئے دو ملازمین کو معطل کردیا اور یہ کہا گیا تھا کہ آپریٹر کی غلطی کے باعث یہ جی او جاری ہوا تھا۔ بعدازاں حکومت نے علحدہ جی او جاری کرتے ہوئے کہا تھا کہ حکومت پٹرول پر 31 فیصد ویاٹ کے علاوہ 2 روپئے فی لیٹر وصول کرے گی جبکہ اسی طرح ڈیزل پر بھی 22.25 فیصد ویاٹ کے علاوہ 2 روپئے فی لیٹر وصول کرے گی لیکن اب حکومت نے ویاٹ میں اضافہ کا فیصلہ کرلیا ہے۔ تیل کے تاجرین کا کہنا ہیکہ اس اضافہ کا فوری کوئی اثر صارفین پر نہیں ہوگا لیکن بتدریج اس کے اثرات عوام پر مرتب ہونے لگیں گے۔

TOPPOPULARRECENT