Friday , August 18 2017
Home / ہندوستان / پٹنہ میں بی جے پی آفس پر حملہ کی کوشش

پٹنہ میں بی جے پی آفس پر حملہ کی کوشش

اے آئی ایس ایف اور آر جے ڈی کارکنوں کا احتجاج
پٹنہ ۔ 18 ۔ فروری : ( سیاست ڈاٹ کام) : جواہر لال نہرو یونیورسٹی اسٹوڈنٹس یونین صدر کنہیا کمار کی بغاوت کیس میں گرفتاری کے تنازعہ پر اے آئی ایس ایف اور آر جے ڈی طلباء تنظیم کے قائدین آج یہاں زعفرانی پارٹی آفس کے باہر بی جے پی ورکرس سے متصادم ہوگئے ۔ سٹی پولیس کمشنر چندناکشورہا نے بتایا کہ سی پی آئی کی طلباء تنظیم اے آئی ایس ایف ، لالو پرساد یادو کی پارٹی کی تنظیم نوجوانان سے کارکن بی جے پی ریاستی آفس پہنچ کر کنہیا کمار کی گرفتاری کے خلاف احتجاج کیا ۔ اور بی جے پی ورکرس کے جوابی احتجاج میں جھڑپ ہوگئی ۔ دونوں طرف سے سنگباری اور ایک دوسرے پر پانی کی بوتلوں سے حملہ کیا گیا ۔ تاہم پولیس نے فی الفور ہلکا سا لاٹھی چارج کر کے متصادم گروپس کو منتشر کردیا ۔ کوتوالی پولیس اسٹیشن کے انسپکٹر مسٹر رمیش کمار سنگھ نے بتایا کہ اے آئی ایس ایف اور آر جے ڈی کارکنان بغیر کسی اطلاع کے بی جے پی آفس پہنچ گئے ۔ اگرچیکہ بی جے پی نے پارٹی آفس سے ایک جلوس یا مارچ نکالنے کی اجازت طلب کی تھی لیکن انکار کرتے ہوئے انہیں پارٹی آفس پر ہی روک دیا ۔ سٹی ایس پی نے بتایا کہ صورتحال قابو میں ہے اور امکانی تصادم ٹالنے کے لیے پولیس کا اضافی دستہ طلب کرلیا گیا ۔ دریں اثناء بی جے پی کے ریاستی نائب صدر سنجے میوکھ نے بتایا کہ آج کے واقعہ سے نتیش کمار حکومت کا فاشست چہرہ بے نقاب ہوگیا ۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ اے آئی ایس ایف اور آر جے ڈی کارکن لاٹھیوں کے ساتھ پارٹی آفس پر حملہ آوار ہوگئے ۔ لیکن پولیس خاموش تماشہ دیکھتے رہ گئی ۔ جے این یو کا تنازعہ اب بہار کی سیاست کو گرما دیا ہے کیوں کہ اسٹوڈنٹس یونین صدر کنہیا کمار کا تعلق بھی ریاست بہار سے ہے جنہیں قوم دشمن نعرے بلند کرنے کے الزام میں دہلی پولیس نے گرفتار کرلیا اور ریاست میں اتحادی جماعتوں کانگریس ، جے ڈی یو اور آر جے ڈی نے کمار کی گرفتاری کی مذمت کی ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT