Friday , October 20 2017
Home / اضلاع کی خبریں / پہاڑوں کو توڑنے سے مواضعات کے عوام کو مشکلات

پہاڑوں کو توڑنے سے مواضعات کے عوام کو مشکلات

کریم نگر ۔ 21 ۔ جنوری ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز ) ضلع کریم نگر کے تقریباً ہر گاؤں میں پہاڑوں کا سلسلہ تھا اب آہستہ آہستہ یہ پہاڑ کم ہوتے جارہے ہیں ۔ ان پہاڑوں سے کئی فائدے جن میں ماحولیات کا توازن برقرار تھا ۔ ان پہاڑوں کو توڑنے کے سبب جو جنگلی جانور ان پہاڑوں میں پناہ لینے آتے تھے وہ سب پہاڑوں کے ختم ہونے سے آبادیوں کا رخ کررہے ہیں ۔ یہ پہاڑ کچھ طبقات کیلئے روزگار کا وسیلہ تھے ۔ گرامنا پیٹ کے بیوپاری ان پہاڑوں کو مسطح کرتے ہوئے یہاں میدان بنارہے ہیں ۔ حکومت کی منظوری حاصل کرتے ہوئے ان کاموں کو انجام دے رہے ہیں ۔ پہاڑوں کی چٹانوں کو بیرونی ملک بھیجا جارہا ہے ۔ پہاڑوں سے جنگلی جانوروں کی آبادیوں کو منتقلی سے یہاں کے لوگوں کو مشکلات پیش آرہی ہیں ۔ جانی نقصان بھی ہورہا ہے اس کے خلاف مواضعات کے عوام نے احتجاج کیا ہے جس کا حکومت پر کوئی اثر دکھائی نہیں دیتا ۔ حکومت کو چٹانوں کی تجارت سے کافی آمدنی ہورہی ہے ۔ گزشتہ 11 سال سے گراناپیٹ پہاڑوں کو لیز پر دیا جارہاہے ۔ اس سے حکومت کو سال 2004 – 05 میں 10.17 کروڑ ، 2005 – 06 میں 14.71 کروڑ ، 2006 – 07 میں 52,46 کروڑ، 2007 – 08 میں 53.03 کروڑ ، 2008 – 09 میں 50.45 کروڑ ، 2009 – 10 میں 41.23 کروڑ ، 2010 – 11 میں 66.17 کروڑ ، 2011 – 12 میں 88.63 کروڑ ، 2012-13 میں 152,18 کروڑ ، 2013 – 14 میں 92.1 کروڑ ، 2014 – 15 میں 118.26 کروڑ روپئے اس طرح جملہ 249 لاکھ کروڑ 57 لاکھ روپئے حکومت کو موصول ہوچکے ہیں ۔ مقامی ادارہ جات کو 80 کروڑ روپئے دیئے گئے ۔ بیاریج فنڈ میں پنچایتوں کو پچاس فیصد منڈل پریشد کو 30 فیصد ضلع پریشد کو 20 فیصد فنڈز مختص کیا جاتا رہا ہے ۔ یہ فنڈس مواضعات میں موریوں ، سی سی روڈس کی تعمیر اور دیگر اہم ترقیاتی ضروریات پر خرچ کئے جاتے رہے ہیں ۔ لیکن اب حکومت ان ضروریات پر برائے نام فنڈز خرچ کررہی ہے جس سے مواضعات کی خاطر خواہ ترقی نہیں ہورہی ہے ۔ ایک اندازے کے مطابق ضلع میں تقریباً 450 پہاڑ اور چمکدار پتھروں کی کانیں ہیںقاعدے قانون کی خلاف ورزی کرتے ہوئے رشوت کے بل بوتے پر معاہدوں کی خلاف ورزی کرتے ہوئے حدود سے ہٹ کر زیر زمین کالونی سے چمکدار پتھر نکالے جارہے ہیں ۔ محکمہ طبقات الارض محکمہ معدنیات کا کہنا ہے کہ مستقبل میں ضلع میں زلزلہ کا خطرہ پیدا ہوسکتا ہے ، ماحولیات کی تباہی ہورہی ہے ۔ پہاڑوں کے غائب ہونے سے جانوروں کے چارہ کی مشکلات پیدا ہورہی ہے اس کے علاوہ بارش میں کمی ہورہی ہے ۔ حکومت کو فائدہ ہورہا ہے تاہم مقامی افراد کو نقصان ہورہا ہے ۔ چودہویں فینانس کمیشن سے راست پنچایتوں کو فنڈز کی منتقلی سے منڈل سطح پر ضلع پریشد کو فنڈز نہیں مل رہا ہے جس پر حالیہ ضلع پریشد اجلاس میں اس مسئلہ پر کافی شور شرابہ ہنگامہ ہوا ، زیڈ پی ٹیز کا کہنا ہے کہ انہیں نہ کوئی اختیارات دیئے گئے ہیں اور نہ کوئی فنڈز دیئے گئے ہیں ۔ ان کا کہنا ہے کہ حکومت کم از کم پہاڑوں ، گرانائیٹ بیاریج سے جو آمدنی ہورہی ہے اس سے 70 فیصد فنڈز ترقیاتی کاموں کیلئے مختص کرے تو فعال ادارہ جات کی کچھ نہ کچھ عوام یں شناخت باقی رہنے کا موقع فراہم ہوگا ۔ زیڈ پی ٹیز قائدین نے اس طرح اظہار خیال کیا ۔

TOPPOPULARRECENT