Wednesday , August 23 2017
Home / Top Stories / پی ڈی پی۔بی جے پی حکومت کشمیر میں بے چینی کی ذمہ دار

پی ڈی پی۔بی جے پی حکومت کشمیر میں بے چینی کی ذمہ دار

سینئر کانگریس قائد سابق مرکزی وزیر داخلہ پی چدمبرم کا بیان
نئی دہلی۔17 اگست (سیاست ڈاٹ کام) سینئر کانگریس قائد اور سابق مرکزی وزیر داخلہ پی چدمبرم نے آج پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی اور بھارتیہ جنتا پارٹی کی مخلوط حکومت کو وادی کشمیر میں بے چینی کا ذمہ دار قرار دیا اور کہا کہ وزیراعظم نریندر مودی کا بیان ’’بحران میں شدت پیدا کرنے‘‘ کی وجہ بن گیا ہے۔ چدمبرم نے کہا کہ انہیں جموں و کشمیر کی صورتحال پر گہری تشویش ہے جو مکمل انتشار کے عالم کی جانب تیزی سے بڑھ رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پی ڈی پی۔بی جے پی مخلوط ریاستی حکومت صورتحال میں گزشتہ چھ ہفتوں میں نمایاں انحطاط پیدا ہونے کی مکمل طور پر ذمہ دار ہے۔ یو پی اے دور اقتدار میں وزیر داخلہ اور وزیر فینانس پی چدمبرم نے کہا کہ وزیراعظم اور مرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ کے علاوہ وزیر دفاع منوہر پاریکر نے بحران میں شدت پیدا کردی ہے۔ الفاظ میں اعتدال اور کارروائیوں میں نرمی کی صورتحال میں بہتری پیدا کرسکتے ہیں۔ انسانی جانیں ذائع ہورہی ہیں۔ ان میں احتجاج کرنے والے نوجوان دیگر بے قصور شہری اور فوجی شامل ہیں۔ اس سے ہم سب کو پریشانی لاحق ہوگئی ہے یہ تمام رک جانا چاہئے۔ چدمبرم نے کہا کہ جس انداز میں بحران بے قابو ہورہا ہے انہیں خوف ہے کہ اس کو موجودہ حکومت نہیں روک سکے گی کیوں کہ اس کی بنیادی وجہ خود موجودہ حکومت ہے۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس اور نیشنل کانفرنس اگر آمادہ ہوں تو پی ڈی پی ان کے ساتھ اتحاد کرکے مسئلہ حل کرسکتی ہے۔

سب سے پہلے تشدد روکا جانا چاہئے اس کے بعد امید پیدا ہوگی۔ امن اور خوشحالی آئے گی۔ جموں و کشمیر کے عوام وادی کشمیر میں زندگی کو معمول کے مطابق لائیں گے۔ فی الحال حسب المجاہدین کے کمانڈر برحان وانی کی فوج کے ساتھ انکائونٹر میں 8 جولائی کو ہلاکت کے بعد احتجاجی مظاہروں کے دوران تاحال 63 افراد ہلاک ہوچکے ہیں اور دیگر ہزاروں زخمی ہیں۔ گزشتہ ماہ چدمبرم نے کہا تھا کہ کشمیر کی صورتحال سے غلط طریقہ سے نمٹا گیا ہے۔ کشمیر اور دہلی میں قائم ہونے والے حکومتوں نے یکے بعد دیگررے اس مسئلہ سے غلط طریقہ سے نمٹا ہے۔ ہم (یو پی اے حکومت) نے بے شک غلطی کی تھی لیکن 2010ء میں ہم نے از خود اپنی اصلاح کرلی تھی۔ اب مرکز اور ریاست دونوں کی حکومتیں بہت بری طرح صورتحال سے نمٹ رہی ہیں۔ چدمبرم نے تجویز پیش کی کہ بنیادی حل کشمیر کی صورتحال کا بڑے پیمانے پر سودے بازی اور معمول کی حال بحال کرنے کی سمت پیش رفت ہے۔ کشمیر کا ہندوستان سے الحاق جن شرائط پر ہوا تھا، ان کے مطابق اسے عظیم تر خود اختیاری عطاء کی جانی چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ ان کے خیال میں موجودہ مرکزاور ریاستی حکومتوں کا رویہ غلط ہے۔

TOPPOPULARRECENT