Monday , August 21 2017
Home / کھیل کی خبریں / چمپئن ویسٹ انڈیز کے سامنے بورڈ نے گھٹنے ٹیک دیئے

چمپئن ویسٹ انڈیز کے سامنے بورڈ نے گھٹنے ٹیک دیئے

سینٹ جانس ، انٹیگا ؍ کولکاتا ، 4 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) دوسری مرتبہ ورلڈ ٹی ٹوئنٹی کا ٹائٹل جیت کر نئی تاریخ رقم کرنے والے ویسٹ انڈیز نے بالآخر اپنے کرکٹ بورڈ کو گھٹنے ٹیکنے پر مجبور کردیا اور وہ مذاکرات پر آمادہ ہو گئے ہیں۔ عالمی ٹی ٹوئنٹی چمپئن ویسٹ انڈیز کے کپتان ڈارن سامی نے انگلینڈ کے خلاف گزشتہ شب کولکاتا میں فائنل میں کامیابی کے بعد کہا تھا کہ اُن کی ٹیم نے بورڈ کی جانب سے عدم تعاون اور لوگوں کی جانب سے شدید تنقید کے باوجود ثابت کردیا کہ ہم 15 میچ ونر کھلاڑی ہیں۔ ویسٹ انڈیز کو دو دفعہ ٹی ٹوئنٹی چمپئن بنانے والے سامی نے پرنم آنکھوں کے ساتھ ٹیم کو درپیش مسائل بیان کرتے ہوئے ویسٹ انڈیز کرکٹ بورڈ کی بے اعتنائیوں کا ذکر کیا۔ اُنھوں نے کہا کہ انھیں کریبین کمیونٹی کے سربراہوں کی جانب سے بھرپور حمایت ملی اور گریناڈا کے وزیر اعظم کیتھ مچل کی جانب سے ٹیم کے نام ای میل بھی موصول ہوا ہے اور فون کالس بھی آئے لیکن خود ویسٹ انڈین کرکٹ بورڈ (ڈبلیو آئی سی بی)  کی جانب سے ایسی کوئی بات سننے کو نہیں ملی۔ ویسٹ انڈیز کے کھلاڑیوں اور بورڈ کے درمیان تنازعہ اس وقت کھڑا ہوا تھا جب بورڈ کے سربراہ ڈیو کیمرون نے کھلاڑیوں سے بات چیت کرنے سے انکار کرتے ہوئے اُن سے ویسٹ انڈین پلیئرز اسوسی ایشن (ڈبلیو آئی پی اے) سے معاملت کرنے پر زور دیا۔ تاہم ویسٹ انڈین پلیئرز اسوسی ایشن کے صدر واویل ہائنڈز نے 2014ء میں بورڈ سے انتہائی کمتر رقم پر معاملت کر لی تھی جس پر احتجاجاً ویسٹ انڈیز کے کھلاڑی ہندوستان کا دورہ اَدھورا چھوڑ کر واپس آ گئے تھے۔ ماضی میں کھلاڑیوں سے بے اعتنائی اور سخت لہجہ اختیار کرنے والے ویسٹ انڈین کرکٹ بورڈ کے صدر نے ٹیم کی ورلڈ ٹی ٹوئنٹی میں فتح کے بعد کپتان سامی کے ریمارکس کو نامناسب قرار دیا لیکن اس مرتبہ نرم لہجہ اختیار کرتے ہوئے کہا کہ انڈین پریمیئر لیگ (آئی پی ایل) کے بعد وہ کھلاڑیوں سے ملاقات کر کے کوئی درمیانی راستہ نکال لیں گے۔ انہوں نے سامی کے الفاظ کو مایوس کن قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس سال مئی میں بورڈ سالانہ جائزہ لے گا اور ہم دیکھیں گے کہ کیا درمیانی راستہ نکالا جا سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ ملاقات مئی میں اس لئے رکھی گئی ہے کیونکہ ویسٹ انڈیز کے اکثر سینئر کھلاڑی جیسے سامی، کرس گیل، ڈوین براوو اور کیرن پولارڈ وغیرہ 9 اپریل سے 29 مئی تک جاری رہنے والی انڈین پریمیر لیگ میں مصروف رہیں گے۔ ویسٹ انڈیز کے کھلاڑیوں کی جانب سے ہندوستان کا دورہ اَدھورا چھوڑ کر واپس آنے کے بعد بورڈ نے براوو، سامی اور پولارڈ جیسے کھلاڑیوں کو ایک روزہ میچوں کے اسکواڈ سے باہر نکال دیا تھا۔ کلائیو لائیڈ کی زیر سربراہی کے ساتھ تشکیل شدہ سلیکشن پیانل نے گزشتہ سال ورلڈ کپ کیلئے براوو اور پولارڈ کے ٹیم میں انتخاب پر غور نہیں کیا تھا اور ان دونوں کھلاڑیوں نے اکتوبر 2014ء کے بعد سے کوئی ونڈے انٹرنیشنل میچ نہیں کھیلا۔ تاہم ویسٹ انڈین ٹیم کی جانب سے چمپینس کا تاج سر پر سجانے کے باوجود بورڈ نے ٹیم یا کھلاڑیوں کو کسی قسم کی مبارکباد دینے کی زحمت گوارا نہ کی۔ بورڈ کے بیان میں صرف اتنا کہا گیا کہ ویسٹ انڈین کرکٹ بورڈ اس بات پر بہت خوش ہے کہ مرد اور خواتین کی دونوں ٹیموں نے ٹی20 ٹائٹلز اپنے نام کئے۔ ڈیو کیمرون نے ورلڈ چمپینس ٹیم کے کپتان ڈارن سامی کے ریمارکس کی تحقیقات کر کے اُن کے خلاف کارروائی کا اِشارہ بھی دیا اور کہا کہ بورڈ اُن کے سخت تبصروں اور جملوں پر لاکھوں کروڑوں شائقین سے معافی مانگتا ہے۔

TOPPOPULARRECENT