Wednesday , September 20 2017
Home / شہر کی خبریں / چندرائن گٹہ حملہ کیس ‘ جیل میںملزمین کی شناختی پریڈ کی توثیق

چندرائن گٹہ حملہ کیس ‘ جیل میںملزمین کی شناختی پریڈ کی توثیق

عدالت میںاسپیشل مجسٹریٹ بی ستیہ نارائنا کا بیان ۔ اویسی ہاسپٹل کے سابق میڈیکل آفیسرپر بھی جرح

حیدرآباد۔ 5 جنوری (سیاست نیوز) اکبر اویسی حملہ کیس کی سماعت 21 جنوری تک مکمل کرنے کی سپریم کورٹ کی ہدایت کے پیش نظر اس کیس کی سماعت روزانہ کی اساس پر جاری ہے اور ایک دن میں دو گواہوں کے بیانات قلمبند کئے جارہے ہیں۔ آج سماعت کے موقع پر اسپیشل مجسٹریٹ بی ستیہ نارائنا نے VII ایڈیشنل میٹروپولیٹن مجسٹریٹ کے اجلاس پر اپنا بیان قلمبند کروایا اور تصدیق کی کہ کیس کے ملزمین کی شناختی پریڈ کروائی تھی ۔ مجسٹریٹ نے بتایا کہ سی سی ایس پولیس کی جانب سے 24 مئی 2011ء کو درخواست موصول ہوئی تھی جس میں چندرائن گٹہ رکن اسمبلی حملہ کیس میں ملزمین کی شناختی پریڈ کروانے کی گزارش کی گئی تھی جس پر انہوں نے چرلہ پلی جیل پہنچ کر پہلے پانچ گواہوں کا معائنہ کیا۔ انہوں نے بتایا کہ شناختی پریڈ کے دوران پانچ گواہوں نے سات ملزمین حسن بن عمر یافعی، عبداللہ بن یونس یافعی، عیسیٰ بن یونس یافعی، یحییٰ بن یونس یافعی ، محمد بن صالح وھلان اور دیگر کی شناخت کی۔ انہوں نے عدالت کو بتایا کہ ملزمین نے اپنے بیان میں یہ واضح طور پر بتایا کہ سی سی ایس میں ہی پہلے گواہوں کو ان کی شناخت کروائی گئی، پولیس نے ان کی تصاویر اور ویڈیوگرافی بھی کی جس کی مدد سے ان کی شناخت کی جارہی ہے۔ سماعت کے دوران اویسی ہاسپٹل کے سابق میڈیکل آفیسر ڈاکٹر عبدالباری پر دوبارہ جرح کی گئی ۔ انہوں نے بتایا کہ اکبر اویسی کو عثمان، فیاض اور

TOPPOPULARRECENT