Wednesday , August 23 2017
Home / شہر کی خبریں / چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر کو چین میں ہی مقیم رہنے کا مشورہ

چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر کو چین میں ہی مقیم رہنے کا مشورہ

دورۂ چین پر روانگی کے بعد ریاست میں بارش، پونم پربھاکر کا طنزیہ ریمارک
حیدرآباد /11 ستمبر (سیاست نیوز) کانگریس کے سابق رکن پارلیمنٹ پونم پربھاکر نے چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر کے دورہ چین پر روانہ ہونے کے بعد ریاست میں موسلا دھار بارش ہونے کا ادعا کرتے ہوئے انھیں دو سال تک چین میں رہنے کا مشورہ دیا۔ آج گاندھی بھون میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ جب سے کے سی آر تلنگانہ کے چیف منسٹر بنے ہیں، ریاست خشک سالی کا شکار ہے، ناکافی بارش سے بڑے پیمانے پر فصلوں کو نقصان ہو رہا ہے اور کسان خودکشی کر رہے ہیں، لیکن جب سے وہ چین کے دورہ پر روانہ ہوئے بشمول حیدرآباد تلنگانہ میں موسلا دھار بارش ہو رہی ہے اور آبپاشی پراجکٹس میں پانی جمع ہو رہا ہے۔ انھوں نے کہا کہ اگر چیف منسٹر دو سال چین میں قیام کریں تو تلنگانہ کی ترقی ہوگی اور کسانوں کے چہروں پر خوشی لوٹ آئے گی۔ انھوں نے کہا کہ تلنگانہ میں ٹی آر ایس کے دور حکومت میں حکومت کے عدم تعاون، خشک سالی، قرض معاف نہ ہونے، نئے قرضہ جات نہ ملنے، فصلوں کے نقصانات کا انشورنس نہ ملنے اور سود کا بوجھ بڑھ جانے کی وجہ سے اب تک 1300 کسان خودکشی کرچکے ہیں، تاہم حکومت نے ان کسانوں پر کوئی توجہ نہیں دی اور نہ ہی چیف منسٹر یا وزراء نے متاثرہ کسانوں کے ارکان خاندان سے ملنا گوارا کیا، یہاں تک کہ کسانوں کو خودکشی نہ کرنے کا مشورہ بھی نہیں دیا گیا۔ انھوں نے کہا کہ حیدرآباد میں ایک کسان کی خودکشی پر ساری سرکاری مشنری چوکس ہو گئی اور خودکشی کرنے والے کسان کی رپورٹ پیش کی، جب کہ دیگر کسانوں کے خودکشی کے واقعات پر رپورٹ جاری کرنا مناسب نہیں سمجھا گیا۔ انھوں نے کہا کہ دیگر کسانوں کی خودکشی پر بھی اگر حکومت سرگرمی ظاہر کرتی تو کسانوں کو فائدہ پہنچ سکتا تھا۔ انھوں نے اسمبلی کا خصوصی اجلاس طلب کرکے کسانوں کے بشمول دیگر اہم مسائل پر غور کرنے کا مطالبہ کیا۔

TOPPOPULARRECENT