Saturday , August 19 2017
Home / ہندوستان / چیف منسٹر کیرالا کے خلاف جنسی ہراسانی کاالزام

چیف منسٹر کیرالا کے خلاف جنسی ہراسانی کاالزام

عوام ہی منہ توڑ جواب دیں گے، اومن چنڈی کی منطق
تھروننتھا پورم ۔ 4 ۔ اپریل (سیاست ڈاٹ کام) سولار اسکام کی ملزمہ سریتا نائر کی جانب سے عائد کردہ جنسی ہراسانی کے الزام کو مضحکہ خیز قرار دیتے ہوئے چیف منسٹر اومن چنڈی نے آج کہا کہ 16 مئی کے انتخابات میں عوام منہ توڑ جواب دیں گے جبکہ اپوزیشن نے تنقید کانشانہ بناتے ہوئے چیف منسٹر اور دیگر وزراء کے خلاف تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے ۔ چیف منسٹر آج اپنی سرکاری قیامگاہ کلیف ہاوز پر پریس کانفرنس سے مخاطب تھے۔ میڈیا کے نمائندوں نے جب سریتا نائر کے الزام کے بارے میں سوال کیا تو وہ مسکرانے لگے اور کہا کہ میں ا یک عزت دار خاندانی زندگی گزارنے والوں میں سے ہوں اور الزامات کا سامنا کرنے کیلئے ممکنہ قانونی اقدامات کئے جاسکے۔ سریتا نے سال 2013 ء میں 25 صفحات پر مشتمل ایک مکتوب میں اس وقت مذکورہ الزام عائد کیا تھا جس پر سولار اسکام میں گرفتار کے بعد پولیس حراست میں تھیں اور کہا تھا کہ اومن چنڈی نے اپنی سرکاری قیامگاہ پر انہیں (سریتا) جنسی ہراسانی کا شکار بنایا تھا۔ اس تنازعہ پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے اپوزیشن لیڈر اور مارکسسٹ دانشور وی ایس اچھوتا نندی نے بے بس خواتین کے استحکام کیلئے سرکاری قیامگاہ کے بیجا استعمال پر چیف منسٹر نے معذرت خواہی کا مطالبہ کیا ہے جبکہ یہ خواتین کی مدد کیلئے چیف منسٹر سے رجوع ہوئی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ الزام انتہائی سنگین نوعیت کا ہے ۔ سریتا کے الزامات کی تحقیقات کا اصرار کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ چنڈی اور دیگر وزراء بشمول کے سی وینو گوپال ، جوز کے منی ، ایم پی اور ایم ایل ہیبی ایڈن اور پی سی وشواناتھ کے خلاف کیس درج کیا جائے۔ یہ دریافت کئے جانے پر اسمبلی انتخابات میں بعض ذمہ دار وزراء کو دوبارہ کیوں نامزد کیا گیا ہے ۔ چنڈی نے کہا کہ وہ گزشتہ 5 سال سے الزامات کے گھیرے میں ہیں اور باشعور عور منہ توڑ جواب دیں گے۔ تاہم انہوں نے یہ بھی ادعاء کیا کہ پارٹی ہائی کمان امیدواروں کی فہرست کو قطعیت دیگی اور امید ہے کہ بہتر امیدواروں کا انتخاب کیا جائے گا۔

TOPPOPULARRECENT