Tuesday , September 26 2017
Home / شہر کی خبریں / چیف منسٹر کے جلسہ میں احتجاجی طالب علم پر نکسلائٹ سے تعلقات کا الزام

چیف منسٹر کے جلسہ میں احتجاجی طالب علم پر نکسلائٹ سے تعلقات کا الزام

جمہوری حکومت میں پولیس کا راج، ملو روی ترجمان کانگریس کی پریس کانفرنس
حیدرآباد /19 نومبر (سیاست نیوز) تلنگانہ پردیش کانگریس نے چیف منسٹر کے جلسہ عام میں احتجاج کرنے والے طالب علم وجے پر نکسلائٹس کے ساتھ تعلقات کا الزام عائد کرتے ہوئے گرفتار کرنے کی سخت مذمت کی۔ آج گاندھی بھون میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ترجمان کانگریس ملو روی نے کہا ورنگل میں چیف منسٹر تلنگانہ کے جلسہ عام میں احتجاج کرنے والے ایم ٹیک کے طالب علم وجے کو کھمم میں گرفتار کیا گیا، جب کہ انتخابات سے قبل کے سی آر نے نکسلائٹس کے ایجنڈے کو ٹی آر ایس کا ایجنڈا قرار دیا تھا۔ انھوں نے جلسہ عام میں کے سی آر سے سوال کرنے پر نکسلائٹس کے ساتھ روابط کے الزام اور وجے کی گرفتاری پر حیرت کا اظہار کیا اور کہا کہ ریاست میں جمہوری حکومت ہے یا پولیس کا راج چل رہا ہے؟۔ انھوں نے ٹی آر ایس حکومت پر نکسلائٹس کے خاتمہ کی منصوبہ بندی کا الزام عائد کرتے ہوئے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وجے کے خلاف مقدمہ درج کئے بغیر اسے غیر مشروط طورپر رہا کردیا جائے، بصورت دیگر ورنگل کے عوام ضمنی انتخاب میں ٹی آر ایس کو سبق سکھائیں گے۔ کانگریس کے رکن قانون ساز کونسل پی سدھاکر ریڈی نے کہا کہ ریاست میں پولیس راج چل رہا ہے، تاہم ورنگل کے رائے دہندے باشعور ہیں، وہ ووٹوں کی طاقت کے ذریعہ حکمراں ٹی آر ایس کو سبق سکھائیں گے۔ انھوں نے کہا کہ ورنگل میں مخالف حکومت لہر چل رہی ہے، عوام جگہ جگہ ٹی آر ایس کے وزراء اور قائدین کے خلاف اپنی ناراضگی کا اظہار کر رہے ہیں اور کانگریس امیدوار ستیہ نارائنا کو کامیاب بناکر ورنگل لوک سبھا نشست صدر کانگریس سونیا گاندھی کو تحفہ میں پیش کرنا چاہتے ہیں۔ اس موقع پر جی نرنجن اور دیگر بھی موجود تھے۔

TOPPOPULARRECENT