Sunday , August 20 2017
Home / اضلاع کی خبریں / ڈاکٹروں کے لئے دیہی خدمات قانون کا لزوم

ڈاکٹروں کے لئے دیہی خدمات قانون کا لزوم

کرناٹک میںڈینگو پر قابو پانے موثر اقدامات ‘ریاستی وزیر صحت یوٹی قادر کا بیان
بنگلورو۔9 ؍اگست(سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) وزیر صحت یوٹی قادر نے کہاکہ رواں سال سے ہی دیہی علاقوں میں سرکاری ڈاکٹروں کی خدمات کا لزوم لاگو کردیا جائے گا۔اس سلسلے میں ریاستی حکومت نے نوٹی فکیشن جاری کردیا ہے۔انہوں نے کہاکہ ڈاکٹروں کی دیہی خدمات کا قانون نافذ ہونے کے ساتھ ہر سال کم از کم 2500 ڈاکٹروں کو دیہی خدمات پر مامور کیا جائے گا۔ ریاست کے ہر پرائمری ہیلتھ سنٹر میں ایک ایک ڈاکٹر کو تعینات کیا جائے گا۔ اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ ڈاکٹروں کی دیہی خدمات یقینی بنانے کیلئے راجیو گاندھی ہیلتھ یونیورسٹی کو نوڈل ادارہ بنایا گیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ ایم بی بی ایس طلبا اگر پوسٹ گریجویشن کرنا چاہیں گے تو انہیں دیہی خدمات سے عارضی رعایت دی جائے گی ، البتہ پوسٹ گریجویشن مکمل ہونے کے بعد انہیں دیہی خدمات انجام دینی ہوں گی۔کونسلنگ اور میرٹ کی بنیاد پر ڈاکٹروں کو دیہی علاقوں میں خدمات کیلئے تعینات کیا جائے گا، سال میں دومرتبہ یہ کونسلنگ کی جائے گی۔ دیہی علاقوں میں تعینات ڈاکٹروں کو حکومت کی طرف سے مشاہرہ ادا کیا جائے گا۔ایم بی بی ایس ڈاکٹروں کو 38 ہزار روپے اور پوسٹ گریجویٹ ڈاکٹروں کو42 ہزار روپے ماہانہ دئے جائیں گے۔ انہوںنے کہاکہ دیہی علاقوں میں لازمی خدمات قانون کے تحت ڈاکٹروں کی تعینات کے بعد بھی اگر ڈاکٹر بچے رہے تو ان کی خدمات دیگر ریاستوں میں استعمال میں لائی جائیں گی۔ اس سلسلے میں جلد ہی وہ مرکزی وزیر صحت سے بات کریں گے۔ ریاست میں ڈاکٹر اور ماہرین کی مخلوعہ اسامیوں کو پر کرنے کے متعلق مسٹر قادر نے بتایا کہ کرناٹکا پبلک سرویس کمیشن کی طرف سے اس کیلئے درخواستیں طلب کی جاچکی ہیں۔ ، اس مدت کو مزید دس دنوں کیلئے بڑھایا گیا ہے۔ اس ماہ کے اواخر تک ڈاکٹروں کی بھرتی کے عمل کو مکمل کرلیا جائے گا۔ اس تقرر کے پورا ہوتے ہی ریاست کے تمام پرائمری ہیلتھ سنٹروں میں ڈاکٹروں کی کمی کو کافی حد تک دور کیا جاسکتاہے۔ سرکاری اسپتالوں میں مریضوں کے ساتھ رہنے والے معاونین کیلئے بھی دوپہر کے کھانے کی اسکیم شروع کرنے کا اعلان کرتے ہوئے یوٹی قادر نے بتایاکہ تجرباتی طورپر منگلور کی وین لاک اسپتال میں 14اگست سے لاگو کیا جارہا ہے۔ رضاکار ادارے اگر آگے آئیں گے تو ریاست کے تمام سرکاری اسپتالوں میں اس اسکیم کو لاگو کیا جائے گا۔ سرکاری اسپتالوں میں دوران علاج فوت ہونے والے غریب افراد کی میت کو ان کے گھروں تک پہنچانے کیلئے ایمبولنس سہولت شروع کرنے کے متعلق انہوں نے بتایاکہ 108 ایمبولنسوں کو ہدایت دی گئی ہے کہ ایسی میتوں کو بلامعاوضہ ان کے گھروں تک پہنچایا جائے۔ ریاست بھر میں ڈینگو پر قابو پانے کیلئے ریاستی حکومت کے اقدامات کا تذکرہ کرتے ہوئے قادر نے بتایاکہ حکومت کی طرف سے اس سلسلے میں تمام قدم اٹھائے گئے ہیں البتہ بعض نجی اسپتالوں کی طرف سے ڈینگو کی جانچ کے بہانے لوگوں سے کافی رقم اینٹے جانے کی شکایات موصول ہورہی ہیں۔ ان سے نمٹنے کیلئے سخت کارروائی کی جائے گی۔ انہوں نے کہاکہ ڈینگو کی جانچ کیلئے تمام ضلعی اسپتالوں کے ساتھ تمام ڈیاگناسٹک سنٹرس کو ہدایت دی گئی ہے۔

TOPPOPULARRECENT