Sunday , August 20 2017
Home / شہر کی خبریں / ڈاکٹر بی آر امبیڈکر اوپن یونیورسٹی اردو میڈیم ڈگری کورس کا اردو ترجمہ

ڈاکٹر بی آر امبیڈکر اوپن یونیورسٹی اردو میڈیم ڈگری کورس کا اردو ترجمہ

مولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی کو آج ترجمہ کی ذمہ داری سونپنے کا فیصلہ : محمد محمود علی
حیدرآباد۔ 24 جولائی (سیاست نیوز) ڈاکٹر بی آر امبیڈکر اوپن یونیورسٹی میں اردو میں گریجویشن کورس کی بحالی کے سلسلہ میں نصابی کتب کے اردو ترجمے کا کام کل 25 جولائی کو مولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی کے حوالے کیا جائے گا۔ ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی کے چیمبر میں منعقدہ اعلی سطحی اجلاس میں فیصلہ کیا گیا تھا کہ اردو گریجویشن کورسس کے پہلے سمسٹر کی نصابی کتب اردو یونیورسٹی سے ترجمہ کرائی جائے۔ اس سلسلہ میں رجسٹرار اردویونیورسٹی شکیل احمد نے تعاون کا یقین دلایا۔ انگریزی سے اردو میں نصابی کتب کا ترجمہ کیا جائے گا۔ سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل کو یہ ذمہ داری دی گئی۔ انہوں نے بتایا کہ امبیڈکر یونیورسٹی کے حکام نصابی کتب کے ساتھ منگل کے دن پہنچیں گے اور ان کے ہمراہ رجسٹرار اردو یونیورسٹی سے ملاقات کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ پہلے مرحلہ میں فرسٹ سمسٹر کے نصاب کو تیار کیا جائے گا اور دوسرے سمسٹر کا کام ضرورت پڑنے پر اردو اکیڈیمی تیار کرے گی۔ سکریٹری ڈائرکٹر اردو اکیڈیمی پروفیسر ایس اے شکور نے ترجمہ کے سلسلہ میں محتلف مضامین کے ماہرین سے ربط قائم کیا ہے جن میں کئی ریٹائرڈ پروفیسر اور موجودہ لیکچررس شامل ہیں۔ سکریٹری اقلیتی بہبود نے بتایا کہ اردو یونیورسٹی سے خواہش کی جائیگی کہ ترجمہ کا کام جلد از جلد مکمل کرلیں تاکہ جاریہ سال اردو گریجویشن کورس کے آغاز میں کوئی رکاوٹ نہ ہو۔ اسی دوران کورس کی بحالی کے فیصلے کے باوجود یونیورسٹی نے اپنی ویب سائٹ پر میڈیم کی فہرست میں تلگو اور انگریزی کے ساتھ اردو کو بحال نہیں کیا ہے جس سے طلبہ میں تشویش پائی جاتی ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ یونیورسٹی حکام کو اردو کورس کے احیاء میں کوئی دلچسپی نہیں اور انہوں نے ڈپٹی چیف منسٹر کے دبائو کے تحت بادل ناخواستہ اردو گریجویشن کورس کے آغاز کی حامی بھردی تھی۔ بتایا جاتا ہے کہ کوالیفائنگ انٹرنس ٹسٹ کے انعقاد کے بعد اچانک یونیورسٹی نے اردو کو مسدود کردیا تھا جس پر ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی اور قائد اپوزیشن محمد علی شبیر نے ڈپٹی چیف منسٹر اور وزیر تعلیم کڈیم سری ہری سے بات چیت کرتے ہوئے یونیورسٹی حکام کے ساتھ اجلاس کو یقینی بنایا۔

TOPPOPULARRECENT