Wednesday , June 28 2017
Home / شہر کی خبریں / ڈوبتی کشتی کو بچانے بی جے پی قائدین فرقہ پرستی کی آگ اُگل رہے ہیں

ڈوبتی کشتی کو بچانے بی جے پی قائدین فرقہ پرستی کی آگ اُگل رہے ہیں

ر5ریاستوں کے انتخابات میں کانگریس کی لہر ‘ بی جے پی اور مجلس کی جگل بندی اترپردیش میں بھی ناکام ہوگی : ڈگ وجئے سنگھ

n نریندر مودی ملک کیلئے سب سے بڑا خطرہ
n ناکامیوں کو چھپانے پاکستان سے جنگ کی تیاری
n مسلمانوں میں عدم تحفظ کے احساس کیلئے سیکولر جماعتیں ذمہ دار
n ٹی آر ایس حکومت پر بھی زعفرانی رنگ غالب

محمد نعیم وجاہت
حیدرآباد ۔ 20فبروری ۔ جنرل سکریٹری آل انڈیا کانگریس کمیٹی ڈگ وجئے سنگھ نے کہا کہ بی جے پی انتخابات میں بری طرح شکست سے دوچار ہورہی ہے ۔ ڈوبتی کشتی کو بچانے کیلئے وزیراعظم کے بشمول بی جے پی کے قائدین اپنی زبانوں سے فرقہ پرستی کی آگ اُگل رہے ہیں ‘ پھر بھی 5ریاستوں میں بی جے پی کو جہاں شکست ہوگی اسکی حامی مجلس کو مایوسی ہوگی ۔ بہار کی طرح بی جے پی اور مجلس کی جگل بندی اترپردیش میں بھی ناکام ہوگی ۔ نریندر مودی ملک کیلئے بہت بڑا خطرہ ہیں ‘ اپنی ناکامیوں سے عوام کی توجہ ہٹانے کیلئے پاکستان سے 2018ء یا 2019ء میں جنگ کرنے کی تیاری کررہے ہیں ۔ ہندوستانی فوجیوں کی خفیہ اطلاعات پاکستانی دہشت گردوں کو بی جے پی کے قائدین جاسوسی کرتے ہوئے پہنچا رہے ہیں اور مسلمانوں کو بدنام کرنے کی کوشش کی جارہی ہے ۔ مسلمانوں میں عدم تحفظ کا جو احساس پیدا ہوا ہے اس کیلئے سیکولر جماعتیں اور قائدین پوری طرح ذمہ دار ہیں ۔ر وزنامہ ’’سیاست ‘‘ کو خصوصی انٹرویو دیتے ہوئے ڈگ وجئے سنگھ نے کہا کہ پانچ ریاستوں کے انتخابات میں کانگریس کی لہر چل رہی ہے ۔ پنجاب ‘ گوا اور منی پور میں حکومت تشکیل دینے کیلئے
کانگریس کو مکمل اکثریت حاصل ہوگی ۔ اتراکھنڈ میں کانگریس پارٹی سب سے بڑی جماعت بن کر ابھرے گی ۔ اترپردیش میں سماج وادی پارٹی اور کانگریس اتحاد کو حکومت تشکیل دینے کیلئے واضح اکثریت حاصل ہوجائے گی ۔ تین مرحلوں کے انتخابات کے بعد اترپردیش میں سیاسی منظر نامہ صاف ہوگیا ہے 70تا 80 فیصد حلقوں پر کانگریس اور سماج وادی پارٹی کے ارکان بھاری اکثریت سے کامیابی حاصل کریں گے ۔ اترپردیش میں اصل مقابلہ سماج وادی پارٹی ۔ کانگریس اتحاد اور بی ایس پی کے درمیان ہے ۔ بی جے پی تیسرے مقام کیلئے جدوجہد کررہی ہے ۔ شکست کو قریب سے دیکھنے کے بعد وزیراعظم نریندر مودی بوکھلاہٹ کا شکار ہوگئے ہیں ۔ قبرستان اور شمشان گھاٹ کی سیاست کرتے ہوئے فرقہ پرستی کو فروغ دینے کی کوشش کررہے ہیں ۔ ’’ اچھے دن کا خواب ‘‘ دکھانے والی بی جے پی کو انتخابات سے عین قبل رام مندر ‘ تین طلاق ‘ لو جہاد ‘ گھر واپسی ‘ دہشت گردی کی یاد آجاتی ہے اور فرقہ وارانہ ماحول پیدا کرتے ہوئے کامیابی حاصل کرنے کی کوشش کرتی ہے ۔ مسلمانوں کے چار شادیوں پر وبال مچائی ہے ۔ 2050ء تک ملک میں مسلمانوں کی آبادی ہندو آبادی سے تجاوز کرجانے کا ہندوؤں میں ڈر و خوف پیدا کرتے ہوئے اپنی سیاسی
روٹیاں سینکنے کی سازش کررہی ہے مگر اس مرتبہ بی جے پی کو ملک کے عوام کبھی معاف نہیں کریں گے ۔ مہاراشٹرا کے بعد مجلس نے بہار میں مسلم ووٹوں کو تقسیم کراتے ہوئے بی جے پی کو فائدہ پہنچانے کی کوشش کی ہے مگر بہار کے عوام نے مجلس پر بھروسہ نہیں کیاتومجلس ووٹ تقسیم کرانے کیلئے اترپردیش پہنچ گئی ہے ۔ اترپردیش کے عوام بالخصوص مجلس اور بی جے پی کی جگل بندی کو بھانپ چکے ہیں ‘ جہاں بی جے پی کو شکست سے دوچار کرہے ہیں وہیں مجلس کو بھی
مایوس کردیں گے ۔ مجلس کا سکہ اترپردیش میں بھی نہیں چلے گا ۔ ڈگ وجئے سنگھ نے کہا کہ ہندوستان کی پاکستان سے جاوسوسی کرنیوالوں میں ہندوؤں کی اکثریت ہے مگر ہمیشہ ملک کے مسلمانوں پر شک و شبہات کا اظہار کیا جاتا ہے ۔ بی جے پی آئی ٹی سیل کے 10سے زیادہ قائدین پاکستان کی آئی ایس آئی کو ہندوستانی فوجیوں کے خفیہ راز فراہم کرتے ہوئے پکڑے گئے ہیں مگر افسوس کی بات ہیکہ اس پر کوئی واویلا نہیں مچا ہے اور نہ ہی وزیراعظم یا بی جے پی کے قومی صدر نے اس پر کوئی ردعمل کا اظہار کیا ہے اور نہ ہی میڈیا نے بخوبی اپنی ذمہ داری نبھائی ہے ۔ اگر مسلمان ایسے معاملہ میں پکڑے جاتے تو بی جے پی قائدین آسمان سرپر اٹھالیتے اور میڈیا صبح سے شام تک اس کو بریکنگ نیوز کے طور پر پیش کرتا ۔ وہ ایسے مسائل پر کھل کر بولتے ہیں تو ہندو توا طاقتیں اس پر انہیں تنقید کا نشانہ بناتے ہیں ۔ کئی بار کانگریس قائدین بھی میرے موقف پر اعتراض کرتے ہیں مگر انہیں اس کی کوئی فکر نہیں ہے اور نہ ہی وہ ڈرنے گھبرانے والے ہیں ۔ ملک کے اقلیتوں بالخصوص مسلمانوں میں عدم تحفظ کا جو احساس پیدا ہوا ہے اس کیلئے سیکولر جماعتوں اور قائدین کی خاموشی ذمہ دار ہے ۔ نریندر مودی کی ڈھائی سالہ میعاد مایوس کن ہے ۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT