Wednesday , September 20 2017
Home / سیاسیات / کانگریس ارکان اسمبلی کا صرف اظہار ناراضگی کا ادعا، انحراف کی تردید

کانگریس ارکان اسمبلی کا صرف اظہار ناراضگی کا ادعا، انحراف کی تردید

اتراکھنڈ ہائیکورٹ میں بیان، اظہار ناراضگی صحتمند جمہوریت کی علامت، سینئر ایڈوکیٹ سندرم کی دلیل

نینی تال ۔ 25 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) کانگریس کے 9 ناراض ارکان نے آج اتراکھنڈ ہائیکورٹ کے اجلاس پر کہا کہ انہوں نے پارٹی سے ترک تعلق نہیں کیا ہے۔ وہ صرف چیف منسٹر اور ان کی حکومت کی علحدگی چاہتے تھے تاکہ کسی اور قائد کے تحت ایک بہتر حکومت قائم کی جاچکے۔ جسٹس یو سی دھیانی کے اجلاس پر بیان دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ وہ کانگریس کے مخالف نہیں ہیں۔ صرف اس کو ’’صاف ستھرا‘‘ بنانا چاہتے تھے کیونکہ ان کے خیال میں چیف منسٹر ہریش راوت کی زیرقیادت حکومت کی وجہ سے پارٹی کی اچھی شبیہہ متاثر ہورہی تھی۔ ارکان اسمبلی جنہوں نے اسپیکر گوند سنگھ کنجوال کی جانب سے نااہل قرار دینے کے اقدام کو چیلنج کیا ہے، عدالت سے کہا کہ انہوں نے بی جے پی میں شمولیت اختیار نہیں کی۔ انہوں نے اپنے آپ کو بی جے پی سے مختلف قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ انہوں نے صرف ووٹوں کی تقسیم کیلئے گورنر کو روانہ کردہ یادداشت پر دستخط کئے تھے۔ ارکان اسمبلی کی پیروی کرتے ہوئے سینئر ایڈوکیٹ پی اے سندرم نے دلیل پیش کی کہ حکومت سے ناراضگی جو برسراقتدار پارٹی کے کسی رکن کی جانب سے ہو ’’صحتمند جمہوریت‘‘ کا ایک حصہ ہے اور یہ پارٹی سے انحراف کے مترادف نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ چیف منسٹر اور اسپیکر نے فرض کرلیا ہیکہ حکومت اور پارٹی ایک ہی ہیں۔ اگر ان کے اس نظریہ کو تسلیم کرلیا جائے تو یہ جمہوریت کے تابوت میں موت کی کیل ٹھوکنے کے مترادف ہوگی۔ حکومت یا قائد ؍ چیف منسٹر سے (برسراقتدار پارٹی کے ایک رکن) کا ترک تعلق پارٹی سے انحراف کے مترادف نہیں ہے۔ دسویں شیڈول کے تحت بھی انحراف کا مطلب پارٹی سے ترک تعلق ہے، ناراضگی نہیں۔ انہوں نے دلیل دی کہ وہ چیف منسٹر کے انتخاب کے خلاف ناراض تھے۔ یہ بین پارٹی جمہوریت کا ایک جزولازم ہے۔ آپ کسی شخص کو چیف منسٹر کے خلاف بیان دینے پر نااہل قرار نہیں دے سکتے۔ انہوں نے ادعا کرتے ہوئے کہا کہ صرف ’’ظاہری کارروائی‘‘ جو انہوں نے کی ہے، گورنر سے یہ خواہش کرنے کیلئے کی کہ ’’حکومت اور چیف منسٹر کو برطرف کردیں‘‘۔ یہ پارٹی کی رکنیت سے ترک تعلق کے مترادف نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ بحیثیت کانگریسی ہم یہ کہنا جاری رکھیں گے کہ چیف منسٹر (راوت) کی زیرقیادت یہ حکومت تبدیل کی جانی  چاہئے۔ ہم پارٹی کے اندر چیف منسٹر کی تبدیلی کا مطالبہ کررہے ہیں۔ انہیں (کانگریس کو) کسی چیف منسٹر کے تحت ایک اور حکومت قائم کرنے کا حق ختم نہیں کرنا چاہئے۔ کانگریس کے ناراض ارکان اسمبلی نے اعتراض کیا کہ کیا اس کا مطلب یہ ہیکہ ہم نے پارٹی سے ترک تعلق کرلیاہے۔

TOPPOPULARRECENT