Tuesday , September 19 2017
Home / Top Stories / کانگریس ‘ عشرت کیس میں مودی کو پھانسنا چاہتی تھی : وینکیا نائیڈو

کانگریس ‘ عشرت کیس میں مودی کو پھانسنا چاہتی تھی : وینکیا نائیڈو

بی جے پی کے موجودہ صدر امیت شاہ کو ہراساں کیا گیا ، پارلیمنٹ میں جی ایس ٹی بل کی منظوری کی امید ، مرکزی وزیر کا بیان
ممبئی 12 فبروری ( سیاست ڈاٹ کام ) مرکزی وزیر ایم وینکیا نائیڈو نے آج الزام عائد کیا کہ کانگریس پارٹی چاہتی تھی کہ عشرت جہاں انکاؤنٹر کیس میں اس وقت کے گجرات چیف منسٹر نریندر مودی کو ماخوذ کرنا اور بی جے پی کے موجودہ صدر امیت شاہ کو ہراساں کرنا چاہتی تھی ۔ وینکیا نائیڈو نے کہا کہ کانگریس کو اب اپنے اقدامات پر سرعام افسوس کا اظہار کرنا چاہئے ۔ نائیڈو نے یہ ریمارکس ایسے وقت میں کئے ہیں جبکہ پاکستانی امریکی دہشت گرد ڈیوڈ ہیڈلی نے کل ممبئی کی ایک عدالت میں یہ انکشاف کیا کہ ممبرا سے تعلق رکھنے والی 19 سالہ عشرت جہاں در اصل لشکرطیبہ کی کارکن تھی ۔ نائیڈو نے اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ افسوس کی بات ہے کہ سابقہ حکومت نے بی جے پی قائدین کو ہراساں کرنے کی کوشش کی ۔ حکومت اس وقت کے چیف منسٹر کو ماخوذ کرنا چاہتی تھی اور انہوں نے میری جماعت کے صدر کو بھی ہراساں کیا ہے ۔ اب جبکہ حقیقت منظرعام پر آگئی ہے تو کانگریس کو اپنی غلطی کا اعتراف اور سر عام افسوس کا اظہار کرنا چاہئے ۔ کانگریس پر قومی سلامتی جیسے اہم مسئلہ پر سیاست کھیلنے کا الزام عائد کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ افسوس کی بات ہے کہ کچھ لوگوں کو جو حقائق منظر عام پر آئے ہیں ان سے زیادہ عشرت جہاں میں یقین تھا ۔ انہوں نے کہا کہ ان دہشت گردوں کوکچھ ہندوستانی افراد نے بھی مدد کی ہے ۔ مقامی مدد کے بغیر حالات ایسے نہیں ہوتے ۔

 

اس سوال پر کہ ہیڈلی دوہرا ایجنٹ تھا اور اب وہ حراست میں ہے اس کے بیانات کو کتنی اہمیت دی جانی چاہئے، نائیڈو نے کہا کہ یہ بیان ایک عدالت کے سامنے دیا گیا ہے اور اب اس کی ثبوت کی حیثیت ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اگر ہیڈلی وہ کچھ کہتا جو دوسروں کو بہتر معلوم ہوتا تو وہ درست تھا اور اگر یہ دوسروں کیلئے درست نہیں تو اسے غلط قرار دیا جا رہا ہے ۔ اسے عدالتوں پر چھوڑ دینا چاہئے ۔ اس کیس میں پہلی مرتبہ ثبوت و شواہد سامنے آئے ہیں۔ نائیڈو نے کہا کہ ان کی حکومت قومی سلامتی کے مسائل میں سخت ترین کارروائی کرنا چاہتی ہے۔ تاہم انہوں نے اس مسئلہ میں مذہب کو سامنے لا کر توجہ ہٹانے کیلئے کچھ افراد کو مورد الزام ٹھہرایا ۔ نائیڈو نے پارلیمنٹ کی کارروائی کے تعلق سے یقین ظاہر کیا کہ اس میں کچھ اہم بلز منظور کئے جائیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ بجٹ سشن میں جی ایس ٹی اور رئیل اسٹیٹ ریگولیٹر سے متعلق بلز منظور ہوجائیں گے ۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ کانگریس پارٹی پارلیمنٹ کے کام کاج کو پرسکون بنانے میں تعاون کرے گی ۔ انہوں نے کہا کہ اصل مسئلہ ایوان میں کام کاج کا ہے ۔ کانگریس نے دو سیشن میں کوئی کام ہونے نہیں دیا ۔ انہیں امید ہے کہ کانگریس اس بار سیشن میں تعاون کرے گی ۔

TOPPOPULARRECENT