Saturday , August 19 2017
Home / شہر کی خبریں / کانگریس قائدین پی گوردھن ریڈی اور محمد علی شبیر کے درمیان ٹھن گئی

کانگریس قائدین پی گوردھن ریڈی اور محمد علی شبیر کے درمیان ٹھن گئی

جانا ریڈی پر ریمارکس کی وضاحت کرنے پر زور ، پارٹی میں انتشار کا اضافہ
حیدرآباد ۔ 9 ۔ جون : ( سیاست نیوز ) : قائد اپوزیشن تلنگانہ قانون ساز کونسل مسٹر محمد علی شبیر اور کانگریس کے سینئیر قائد و رکن راجیہ سبھا مسٹر پی گوردھن ریڈی کے درمیان ٹھن گئی ۔ جنرل سکریٹری آل انڈیا کانگریس کمیٹی ڈگ وجئے سنگھ نے مسٹر پی گوردھن ریڈی سے جانا ریڈی کے خلاف ریمارکس کرنے پر وضاحت طلب کی ۔ کانگریس پارٹی قائدین کے درمیان پیدا شدہ تنازعات میں دن بہ دن شدت پیدا ہورہی ہے ۔ مسٹر محمد علی شبیر نے قائد اپوزیشن اسمبلی مسٹر کے جانا ریڈی کو تنقید کا نشانہ بنانے اور انہیں کے سی آر کا مخبر قرار دینے کی سخت مذمت کرتے ہوئے پارٹی ڈسپلن کی خلاف ورزی کرنے والے مسٹر پی گوردھن ریڈی کو وجہ نمائی نوٹس جاری کرنے کا آل انڈیا کانگریس کمیٹی سے مطالبہ کیا ۔ انہوں نے کہا کہ ڈسپلن کے پابند نہ رہنے والے قائدین کا پارٹی میں نہیں رہنا بہتر ہے ۔ انہوں نے کہا کہ علحدہ تلنگانہ ریاست کانگریس پارٹی نے تشکیل دی ہے مگر مسٹر پی گوردھن ریڈی جیسے قائدین کی وجہ سے کانگریس پارٹی اقتدار سے محروم ہوئی ہے ۔ سینئیر قائد ہونے کا احترام کرنے پر اپنی عزت رکھ لینے کے بجائے فضول کی باتوں سے پارٹی کو نقصان پہونچا رہے ہیں ۔ مسٹر پی گوردھن ریڈی نے مسٹر محمد علی شبیر کے ریمارکس پر سخت ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ شبیر علی کون ہے ۔ میں ہی سب سے بڑا قائد اپوزیشن ہوں ۔ انہوں نے جانا ریڈی کو مخبر قرار دینے کی تردید کرتے ہوئے کہاکہ میڈیا نے اس کو غلط انداز میں پیش کیا ہے ۔ وہ پیروی کرنے والے قائدین کی فہرست میں شامل نہیں ہے ۔ ریاست میں سب سے سینئیر قائد ہے ۔ اے آئی سی سی نے انہیں وجہ نمائی نوٹس جاری نہیں کی ہے ۔ صرف ڈگ وجئے سنگھ نے ان سے ٹیلی فون پر بات چیت کی ہے ۔ مجھے وجہ نمائی نوٹس جاری کرنا کسی کے بس کی بات نہیں ہے ۔ کانگریس پارٹی کے باوثوق ذرائع سے پتہ چلا ہے کہ کانگریس کے قائدین نے سینئیر قائد مسٹر پی گوردھن ریڈی کی جانب سے جانا ریڈی کو تنقید کا نشانہ بنانے کی شکایت کی ہے اور ان کے خلاف سخت کارروائی کرنے کا مطالبہ کیا ہے ۔ جس پر جنرل سکریٹری آل انڈیا کانگریس کمیٹی و انچارج تلنگانہ کانگریس امور مسٹر ڈگ وجئے سنگھ نے ٹیلی فون پر مسٹر پی گوردھن ریڈی سے بات چیت کرتے ہوئے ان کے تنقیدوں پر وضاحت طلب کی ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT