Saturday , October 21 2017
Home / شہر کی خبریں / کانگریس قائدین کی انحراف پسندی پر جانا ریڈی روپڑے

کانگریس قائدین کی انحراف پسندی پر جانا ریڈی روپڑے

قائد اپوزیشن کے بشمول تمام عہدوں سے مستعفی ہونے کا پیشکش ، پریس کانفرنس سے خطاب
حیدرآباد ۔ 14 ۔ جون : ( سیاست نیوز ) : کانگریس کے عوامی منتخب نمائندوں کے پارٹی انحراف سے قائد اپوزیشن مسٹر کے جانا ریڈی جذبات سے مغلوب ہوگئے اور ان کی آنکھیں نم ہوگئی ۔ قائد اپوزیشن کے بشمول تمام عہدوں سے مستعفی ہوجانے کا پیشکش کیا ۔ تلنگانہ میں جاری سیاسی اتھل پتھل پر تشویش کا اظہار کیا ۔ آج سی ایل پی آفس اسمبلی میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے یہ بات بتائی ۔ اس موقع پر قائد اپوزیشن تلنگانہ قانون ساز کونسل مسٹر محمد علی شبیر ڈپٹی فلور لیڈر مسٹر کومٹ ریڈی وینکٹ ریڈی بھی موجود تھے ۔ ایک بعد دیگر کانگریس قائدین بالخصوص ضلع نلگنڈہ کے کانگریس قائدین کانگریس سے مستعفی ہو کر ٹی آر ایس میں شامل ہونے کا فیصلہ کرنے پر سخت ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ تلنگانہ کی تحریک نوجوانوں کی قربانیاں اور کانگریس قائدین کی جانب سے بھروسہ دلانے کے بعد صدر کانگریس مسز سونیا گاندھی نے پڑوسی ریاست میں پارٹی کے نقصان کی پرواہ کئے بغیر علحدہ تلنگانہ ریاست تشکیل دیا ہے ۔ سونیا گاندھی سے کیے گئے وعدے کو پورا کرنے کے بجائے کانگریس کے قائدین ذاتی مفادات کی خاطر پارٹی چھوڑ کر حکمران ٹی آر ایس میں شامل ہورہے ہیں جس پر انہیں بڑا صدمہ پہونچا ہے اور ساتھ ہی حکمران ٹی آر ایس کے رویہ پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ تلنگانہ کے عوام نے 2014 کے عام انتخابات میں ٹی آر ایس کو مکمل اکثریت فراہم کی ہے ۔ عوام سے کیے گئے وعدوں کو پورا کرنے کے بجائے ٹی آر ایس قیادت ریاست سے اپوزیشن کا صفایا کرنے پر اپنی ساری توجہ مرکوز کی ہے اور مختلف جماعتوں سے منتخب عوامی نمائندوں کو مختلف طریقوں سے رجحاتے ہوئے انہیں سیاسی انحراف کی ترغیب دی جارہی ہے ۔ عہدوں کی لالچ اور دوسرے امور کے لیے عوامی منتخب نمائندوں کے سیاسی وفاداریاں تبدیل کرنے پر انہیں بے حد تکلیف ہوئی ہے ۔ پارٹی صدر مسز سونیا گاندھی سے ملاقات کے بعد وہ قائد اپوزیشن کے بشمول دوسرے تمام عہدوں سے مستعفی ہوتے ہوئے صرف پارٹی ورکر کی حیثیت سے کام کریں گے اور تمام عہدوں کی قربانی دیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ ایک موقع پر انہیں چیف منسٹر عہدے کی بھی پیشکش کی گئی تھی تاہم انہوں نے چیف منسٹر کے عہدے سے زیادہ علحدہ تلنگانہ ریاست کو ترجیح دی تھی ۔ مسٹر کے جانا ریڈی نے کہا کہ انہیں عہدوں کی کوئی لالچ نہیں ہے اگر ہائی کمان کی جانب سے پیشکش کی بھی جاتی ہے تو وہ اس کو قبول نہیں کریں گے ۔ علحدہ تلنگانہ ریاست تشکیل دینے پر صدر کانگریس مسز سونیا گاندھی سے اظہار تشکر کیا ۔ مسٹر کے جانا ریڈی نے چیف منسٹر کے سی آر سے استفسار کیا کہ کیا سیاسی انحراف سے سنہرا تلنگانہ حاصل ہوگا ساتھ ہی انہوں نے سیاسی وفاداریاں تبدیل کرنے والے قائدین کو استعفیٰ دے کر دوبارہ کامیاب ہونے کا مشورہ دیا ۔۔

TOPPOPULARRECENT