Tuesday , September 19 2017
Home / سیاسیات / کانگریس کا احتجاج ‘ اڈیشہ اسمبلی کی کارروائی ملتوی

کانگریس کا احتجاج ‘ اڈیشہ اسمبلی کی کارروائی ملتوی

طالبات کو محروس کردینے پر چیف منسٹر سے معذرت کا مطالبہ
بھنیشور۔/4ڈسمبر، ( سیاست ڈاٹ کام ) اڈیشہ اسمبلی کی کارروائی کو آج کئی مرتبہ ملتوی کردینا پڑا جبکہ کانگریس ارکان نے چیف منسٹر نوین پٹنائیک کے حالیہ دورہ سٹی کالج کے موقع پر بعض طالبات کو ایک کمرہ میں بند کردینے پر معذرت خواہی کا مطالبہ کرتے ہوئے ہنگامہ آرائی کی۔ ایوان میں وقفہ صفر کی کارروائی شروع ہوتے ہی کانگریس چیف وہپ تارا پرساد بھائینی پتی نے یہ مسئلہ اٹھایا اور اخبارات کے تراشے لہراتے ہوئے یہ الزام عائد کیاکہ ماں رما دیوی یونیورسٹی کی طالبات کو پولیس نے ایک کمرہ میں بند کردیا تاکہ چیف منسٹر نوین پٹنائیک کے دورہ کے موقع پر امکانی احتجاج کو روکا جاسکے۔ چیف منسٹر نوین پٹنائیک جوکہ وزیر داخلہ بھی ہیں اس واقعہ پر غیر مشروط معافی کا مطالبہ کرتے ہوئے کانگریس ارکان نے اسپیکر کے پوڈیم پر چڑھ گئے اور ان کا مائیک چھین لیا۔ حالات قابو سے باہر ہوجانے پر اسپیکر نرنجن پجاری نے ایوان کی کارروائی12 بجے تک ملتوی کردی۔ ایوان کی کارروائی کا دوبارہ آغاز ہوتے ہی کانگریس ارکان نے پھر ایک بار شور شرابہ کرتے ہوئے رکاوٹ پیدا کردی جس کے نتیجہ میں 3بجے تک کارروائی ملتوی کردی گئی۔ اپوزیشن لیڈر نرسنگھا مصرا ( کانگریس ) نے مطالبہ کیا کہ چیف منسٹر ایوان میں آئیں اور طالبات کو ان کے ہی کالج میں محروس کردینے پر معذرت خواہی کریں۔ انہوں نے پولیس کی کارروائی کو طالبات کے جمہوری اور دستوری حقوق کی خلاف ورزی قرار دیا۔ ایک اور اپوزیشن جماعت بی جے پی ارکان نے بھی اس واقعہ پر تشویش کا اظہار کیا اور اپنی نشستوں سے اٹھ کر پولیس کارروائی کے خلاف سخت احتجاج کیا۔ بی جے پی کی خاتون رکن شریمتی رادھا رانی پانڈا نے کہا کہ یہ ایک یر انسانی واقعہ ہے اور یہ سوال کیا کہ کس طرح پولیس ایک کمرہ میں طالبات کو گھنٹوں تک محروس کرسکتی ہے تاہم حکمران بیجو جنتا دل کے رکن اسمبلی نے یہ ادعا کیا کہ طالبات کو روم میں بند نہیں کیا گیا بلکہ یونیفارم اور شناختی کارڈ کے ساتھ نہ آنے پر ان طالبات کو داخلے سے روک دیا گیا تھا۔

TOPPOPULARRECENT