Tuesday , August 22 2017
Home / بچوں کا صفحہ / کبوتراپنا راستہ کیسے تلا ش کرتے ہیں؟

کبوتراپنا راستہ کیسے تلا ش کرتے ہیں؟

بچو ! کبوترانتہائی معصوم اور خوبصورت پرندہ ہے یہ جتنا معصوم اور بھولا بھالا ،اتنا ہی سمجھدا ر بھی۔اس کی یاد داشت بھی بہت تیز ہوتی ہے ،اس لئے اسے اپنا ٹھکانا یاد رہتا ہے ، کبوتر انجانی جگہوں پر بھی اپنا ٹھکانا کا راستہ کیونکر تلاش کر لیتے ہیں ؟ یہ بات آج تک معلوم نہ ہو سکی۔پہلے کبوتروں کی اس خوبی کی وجہ سے انہیں پیام رسانی کیلئے استعمال کیا جاتا تھا ، پیام رساں کبوتروں کو خاص انداز سے تر یبت دی جاتی تھی۔
یہ کبوتر دو دن تک مسلسل پرواز کرکے تقریبا 16سو کل میٹر یعنی ایک ہزار میل سے زیادہ فاصلہ طئے کر سکتے تھے اور پھر جہاں سے انہیں روانہ کیا یا تھا۔اسی مقام پر بخیر وعافیت واپس بھی آجاتے تھے۔ کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ اس پرندے میں ایک پْر اسرار صلاحیت پائی جاتی ہے جس کے باعث یہ زمین کے مقنا طیسی میدان کے ذریعہ سمتوں کا تعین کر لیتے ہیں۔کچھ لوگوں کا کہنا ہے کہ یہ پرندے سورج کے مقام سے رہنمائی حاصل کر تے ہیں۔لیکن وہ درست راستے کا تعین کیسے کرتے ہیں ؟یہ اب تک واضح نہ ہوسکا۔البتہ کسی دھند آلود دن یا جب آسمان پر بادل چھائے ہوں تو یہ اپنا راستہ بھول سکتے ہیں۔ پیام رساں کبوتروں میں قدرتی مناظر کو اپنی یادداشت میں محفوظ کر لینے کی حیرت انگیز صلا حیت مو جود ہوتی ہے۔ بہت سے لوگ قاصد کبوتروں کی پروا زوں کے مقابلے منعقد کراتے ہیں۔ایسے مقابلے بھی کروائے ہیں جس میں پروازوں کی حد 970یعنی 6سو میل رکھی گئی تھی۔ جن پرندوں کو ایسے مقابلوں میں حصہ لینا ہوتا ہے ان کے مالکان انہیں مقابلہ منعقد ہونے کی جگہ پر تر بیت دیتے ہیں۔سب سے زیادہ کا میاب قاصد کبوتروں کو ہی مقابلوں کیلئے منتخب کیا جاتا ہے۔

TOPPOPULARRECENT