Wednesday , August 23 2017
Home / اضلاع کی خبریں / کرناٹک میں معیار تعلیم کو بلند کرنے جامع منصوبہ بندی

کرناٹک میں معیار تعلیم کو بلند کرنے جامع منصوبہ بندی

یونیورسٹیز میں بدعنوانی کی روک تھام کیلئے ماہرین کی کمیٹی تشکیل۔ وزیر تعلیم بسواراج ریڈی کا بیان

بنگلورو۔20نومبر: (سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) ریاستی حکومت شعبۂ اعلیٰ تعلیم میں تعلیم کے معیار کو بلند کرنے اور اس شعبہ کو بہترین سہولیات سے آراستہ کرنے کیلئے ایک جامع منصوبہ تیار کرچکی ہے۔ بہت جلد اس منصوبے کو عملی شکل دی جائے گی۔ یہ بات  وزیر برائے اعلیٰ تعلیمات بسوراج رایا ریڈی نے کہی۔ بحیثیت وزیر اپنے سو دن کی تکمیل کے سلسلے میں وزیراعلیٰ سدرامیاکو اپنی کارکردگی کی رپورٹ پیش کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ ریاست کے تمام سرکاری فرسٹ گریڈ کالجوں ، پالی ٹیکنیکوں ، یونیورسٹیوں وغیرہ میں حاصل سہولتیں ، عمارتیں ،اساتذہ اور عملے کی تمام تفصیلات محکمہ نے یکجا کی ہیں۔ ان تمام کو بنیاد بناکر مستقبل کے لائحہ عمل کو حتمی شکل دی جائے گی۔ شعبۂ اعلیٰ تعلیمات کو ترقی کی روش پر آگے بڑھانے کیلئے محکمہ ایک ماسٹر پلان وضع کرے گا۔ انہوں نے کہاکہ یونیورسٹیوں میں ہونے والی ہمہ قسم کی دھاندلیوں پر روک لگانے کا حکومت نے قدم اٹھایا ہے، اس کیلئے ان دھاندلیوں کا جائزہ لے کر مشورہ دینے کیلئے ماہرین کی ایک کمیٹی قائم کی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ یونیورسٹیوں میں ایک کروڑ روپیوں سے زیادہ کی لاگت کے سبھی کاموں کو کابینہ کی منظوری لازمی قرار دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ اس اقدام کا مطلب یہ نہیں کہ حکومت یونیورسٹیوں کی آزادی سلب کرنا چاہتی ہے، لیکن یونیورسٹیوں میں احساس جوابدہی کو بڑھانے کیلئے یہ قدم اٹھایا گیا ہے۔ریاست کی تمام یونیورسٹیوں میں یکساں ضابطہ وضع کیا جائے گا۔آئندہ بجٹ اجلاس میں اس سلسلے میں ایک یونیورسٹی قانون ترمیمی بل لانے کی تیاریاں کی جارہی ہیں۔ انہوں نے کہاکہ یونیورسٹیوں کے وائس چانسلروں اور رجسٹرار کی تعلیمی سرگرمیوں میں شرکت کو لازمی قرار دیا جائے گا۔ ریاست کی تمام یونیورسٹیوں میں یکساں تعلیمی تقویم قائم کی جائے گی۔ داخلوں کے مرحلے میں اور انٹرنس امتحانات کے نتائج کے اعلان کے علاوہ سالانہ امتحان کے نتائج کے اعلان میں بھی یکسانیت لانے کی سخت ہدایت جاری کی گئی ہے۔ نجی یونیورسٹیوں میں طلبا پر جاری مظالم کو روکنے کیلئے حکومت ان یونیورسٹیوں کی نگرانی کیلئے بھی ایک قانو ن وضع کررہی ہے۔ بنگلور یونیورسٹی میں ڈاکٹر بی آر امبیڈ کر سے منسوب بین الاقوامی اسکول آف ایکنامک قائم کرنے کے منصوبے کا بھی انہوں نے اعلان کیا ، انہوں نے بتایاکہ یونیورسٹیوں میں لکچرارس ، اسسٹنٹ پروفیسرس اور پروفیسرس کو خصوصی تربیت لازمی قرار دی گئی ہے۔اس کیلئے دھارواڑ میں 90 کروڑ روپیوں کی لاگت پر کرناٹکا ہائیر ایجوکیشن اکاڈمی کی عمارت زیر تعمیر ہے۔انہوں نے کہاکہ بلگاوی کی کتور رانی چنما یونیورسٹی کو محکمۂ جنگلات کی زمین منتقل کرنے کا کام پورا ہوچکا ہے۔اس یونیورسٹی کے علاوہ ریاست کی تمام یونیورسٹیوں کیلئے وائس چانسلروں کے تقرر کے عمل میں شفافیت لائی گئی ہے۔ کرناٹکا اسٹیٹ اوپن یونیورسٹی کو یو جی سی سے دوبارہ منظوری دلانے کیلئے اس کے ضابطہ میں ترمیم لانے پر اتفاق کرتے ہوئے مسٹر بسوراج رایا ریڈی نے بتایاکہ اگلے لیجسلیچر اجلاس میں اس ضمن میں پہل کی جائے گی۔ انہوں نے کہاکہ ریاست بھر میں ڈگری کالجوں کیلئے ذمہ دار یونیورسٹیوں اور کالجوں کے تعلیمی نظام میں جامع سدھار کے علاوہ تکنیکی یونیورسٹیوں ، تکنیکل ایجوکیشن بورڈ وغیرہ میں اصلاح کیلئے ماہرین سے مشورے طلب کئے جارہے ہیں۔اس موقع پر اڈیشنل چیف سکریٹری اور محکمۂ اعلیٰ تعلیمات کے پرنسپل سکریٹری بھرت لال مینا ، ہائیر ایجوکیشن بورڈ کے ممبر پروفیسر کوری وغیرہ موجود تھے۔

TOPPOPULARRECENT