Saturday , October 21 2017
Home / Top Stories / کرناٹک میں ’ٹیپو جینتی‘ منانے سے باز رکھنے کی درخواست خارج

کرناٹک میں ’ٹیپو جینتی‘ منانے سے باز رکھنے کی درخواست خارج

ہائیکورٹ کا فیصلہ ، آر ایس ایس ، بی جے پی شیرمیسور کی یوم پیدائش کا جشن منانے کے خلاف
بنگلور۔ 3 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) کرناٹک ہائیکورٹ نے آج ریاستی حکومت کی جانب سے منائی جانے والی ’’ٹیپو جینتی‘‘ تقاریب کو چیلنج کرتے ہوئے داخل کردہ مفاد عامہ کی درخواست کو خارج کردیا۔ درخواست گذار نے عدالت سے خواہش کی تھی کہ وہ حکومت پر دباؤ ڈالتے ہوئے ٹیپوسلطان کی یوم پیدائش کا جشن منانے سے روک دیا جائے۔ عدالت نے درخواست کو ہدایت دی کہ وہ پنا معاملہ ریاستی چیف سکریٹری سے رجوع کرے اور ان کی جانب سے اس تقریب کے خلاف جو اعتراضات اٹھائے گئے ہیں، واقف کروائے۔ عدالت کی دو رکنی ڈیویژن بنچ نے جس کی قیادت چیف جسٹس سباراؤ کمل مکرجی کررہے تھے، یہ احکام جاری کئے کہ ٹیپوسلطان کی یوم پیدائش تقاریب سے متعلق جو اعتراضات اٹھائے گئے ہیں اس پر غور کرنے کیلئے چیف سکریٹری سے رجوع کیا جائے۔ درخواست گذار نے ٹیپوجینتی منانے کے پیچھے حکومت کی منطق کا سوال اٹھایا تھا۔

جسٹس آر بی بدہیل نے جو بنچ کے ایک اور رکن ہے، کل زبانی طور پر احساس ظاہر کیا تھا کہ گذشتہ سال بھی اس طرح کی جینتی منائی گئی تھی جس سے احتجاجیوں تشدد پیدا کیا تھا۔ یہ درخواست جنوبی گوڈاگو کے رہنے والے اے پی منجوناتھ نے داخل کی تھی۔ درخواست گذار کے وکیل سجن پویا نے الزام عائد کیا کہ ٹیپوسلطان ایک غدار حکمراں تھے، جنہوں نے کئی طبقات سے تعلق رکھنے والے افرادکا قتل کیا تھا۔ تاہم سرکاری وکیل ایم آر نائیک نے ٹیپو سلطان یوم پیدائش تقاریب منانے کی مدافعت کی اور کہا کہ ٹیپوسلطان ایک عظیم جنگجو بادشاہ تھے جنہوں نے برطانوی حکومت کے خلاف جنگ کی تھی۔ 18 ویں صدی کے حکمراں شیرمیسور ٹیپوسلطان کی یوم پیدائش منانے کانگریس حکومت کے فیصلہ کی آر ایس ایس اور بی جے پی نے مخالفت کی ہے۔ ریاست بھر میں 10 نومبر کو ٹیپوسلطان کی یوم پیدائش منائی جارہی ہے۔ گذشتہ سال ریاستی حکومت نے اس طرح کی تقاریب منعقد کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔ اس سے بہت بڑا تنازعہ پیدا ہوگیا تھا اور گذشتہ نومبر میں ضلع گوڈاگو میں تشدد بھڑک اٹھا تھا۔ بی جے پی اور آر ایس ایس نے ٹیپوسلطان یوم پیدائش جشن منانے کی مخالفت کرتے ہوئے اپنے موقف کی مدافعت کی ہے۔

بھوپال انکاؤنٹر، مسلم خواتین کا احتجاج
اجین ۔ 3 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) مدھیہ پردیش اجین کے مقام مہت پور علاقہ میں تقریباً 2000 مسلم خواتین اور طالبات نے احتجاجی مظاہرہ کرتے ہوئے پیر کے دن سیمی کے 8 کارکنوں کا متنازعہ انکاونٹر کئے جانے کی تحقیقات کا مطالبہ کیا۔ برقعہ میں ملبوس یہ خواتین نعرے لگا رہے تھے اور ہم انصاف چاہتے ہیں جیسے نعرے بلند کرتے ہوئے فرضی انکاونٹر کی تحقیقات کا مطالبہ کیا۔

TOPPOPULARRECENT