Wednesday , October 18 2017
Home / سیاسیات / کرنسی منسوخی سے عوام بدحال ، بی جے پی کو سبق سکھانا ضروری

کرنسی منسوخی سے عوام بدحال ، بی جے پی کو سبق سکھانا ضروری

حریف پارٹیوں کو مالیاتی طور پر کنگال کرنے کی سازش ، سماج وادی پارٹی کا شدید ردعمل

لکھنؤ۔27 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) اُترپردیش کی حکمرانی سماج وادی پارٹی نے آج کہا کہ نریندر مودی حکومت کا نوٹوں کی منسوخی کا فیصلہ حریف سیاسی پارٹیوں کو مالیاتی طور پر کنگال کرنے کی ایک کوشش ہے۔ اترپردیش اسمبلی انتخابات سے قبل نوٹوں کو تبدیل کردینے سے کئی مسائل پیدا ہوئے ہیں۔ سماج وادی پارٹی کے قومی نائب صدر کرنموئے نندانے کہا کہ اس طرح کے فیصلہ سے عوام کو بدحال کردیا ہے۔ لوگ سخت ناراض اور شدید پریشان ہیں۔ وہ اسمبلی انتخابات میں بی جے پی کو سبق سکھائیں گے۔ ’’زعفرانی ٹولی‘‘ کو سزا دینا ضروری ہے۔ وزیراعظم نریندر مودی کے اقدام نے مالیاتی بحران پیدا کردیا ہے۔ خاص کر 2017ء میں اُترپردیش میں سیاسی حریف پارٹیوں کو مالیاتی طور پر ضرب پہونچانی نسبت سے یہ فیصلہ کیا ہے۔ یہ اسمبلی انتخابات بی جے پی کے لئے کرو یا مرو کے مترادف ہوں گے۔ بی جے پی سمجھتی ہے کہ نوٹوں کی منسوخی کے باعث ریاست میں اس کی حریف پارٹیاں انتخابات کے لئے رقم نکالنے سے قاصر رہیں گی۔ بی جے پی یہ ہرگز نہیں مانتی کہ اس کا یہ قدم پارٹی کے لئے خودکشی کا سبب بنے گا۔ عوام خود کا پیسہ نکالنے کیلئے قطار میں کھڑے ہیں۔ اب یہی برہم اور ناراض لوگ بی جے پی کو اچھی طرح سبق سکھائیں گے اور اپنی ناراضگی کا ثبوت دولت کے ذریعہ دیں گے۔ جبکہ انہوں نے یہ واضح کیا کہ سماج وادی کالے دھن کو ختم کرنے کے خڈف نہیں ہے۔ سماج وادی پارٹی کے سینئر ایم پی نے کہا کہ حکومت نے جس طریقہ سے نوٹوں کو منسوخ کیا ہے۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ پالیسی سازی کا کوئی تجربہ نہیں ہے۔ ناتجربہ کاری بتاتی ہے کہ حکومت عوام کے لئے مسائل پیدا کررہی ہے۔ اس وسیع و عریض ملک میں ہر پانچ مواضعات میں سے چار مواضعات میں بینک کی سہولتیں نہیں ہیں۔ دیہی عوام کو اپنے ہی پیسہ کی ضرورت کیلئے دولت مندوں یا ساہوکاروں پر انحصار کرنا پڑتا ہے۔ نوٹوں کی منسوخی کی وجہ سے لیبر طبقہ روزگار سے محروم ہوچکا ہے۔ روزمرہ کی روٹی روزی کرنے والے فاقہ کشی کا شکار ہوچکے ہیں۔ مرکز نے ان مسائل کو صحیح فکر کے ساتھ نہیں دیکھی ہے۔ ملک کی 80% کرنسی کو بند کرنے سے قبل حکومت کو ہزارہا بار اس پر غور کرنے کی ضرورت تھی جس طریقہ سے مرکز وزیر فینانس روزانہ کی اساس پر قواعد بدل رہے ہیں۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ وہ لوگ نوٹوں کی منسوخی کے اقدام سے پڑنے والے اثرات سے نمٹنے کے لئے تیار نہیں تھے۔ چیف منسٹر نے ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ اور پولیس سپرنٹنڈنٹس کو ہدایت دی ہے کہ وہ نوٹوں کی منسوخی کے بعد پیدا ہونے والی صورتحال سے نمٹنے سماج کے تمام طبقات کے لئے ایک بہتر ضلع نظم و نسق دیا جانا چاہئے۔ جو لوگ عوام کے ساتھ خراب برتاؤ کررہے ہیں، انہیں بھی عوام کی برہمی کا سامنا کرنا پڑے گا۔ چیف منسٹر نے یہ بھی ہدایت دی ہے کہ تمام ڈی ایمس اس بات کو یقینی بنائیں کہ کسانوں کو کوئی مسئلہ ڈحق نہ ہو اور انہیں فصل بوائی کے لئے بہترین بیج سربراہ کی جائے۔ فرٹیلائزر اور دیگر اشیاء کو فوری روانہ کیا جائے۔ جاریہ موسم ربیع کا ہے۔ سماج وادی پارٹی ایسے سخت اقدام کی شدید مخالفت کرتی ہے۔ چیف منسٹر اکھیلیش یادو نے بھی اس سلسلے میں وزیراعظم نریندر مودی کو واقف کروایا ہے اور کوآپریٹیو بینکوں کو ٹنڈرس جاری کرنے کے لئے زور دیا ہے۔

TOPPOPULARRECENT