Wednesday , August 23 2017
Home / ہندوستان / کرنل پروہت کی ضمانت عرضداشت پر سپریم کورٹ میں سماعت ٹلی

کرنل پروہت کی ضمانت عرضداشت پر سپریم کورٹ میں سماعت ٹلی

ممبئی،19 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) مالیگاؤں 2008ء بم دھماکہ معاملے کے کلیدی ملزم لیفٹننٹ کرنل پرسادپروہیت نے ممبئی ہائی کورٹ کی جانب سے اس کی ضمانت عرضداشت مسترد کیے جانے کے بعد سپریم کورٹ سے رجوع کیا ہے جس پر آج سپریم کورٹ آف انڈیا کی دو رکنی بینچ کے سامنے سماعت متوقع تھی لیکن نجی معاملات بنیادی حقوق میں شامل ہیں کہ نہیں والے معاملے پر 9 ججوں کی بینچ نے سماعت شروع کردی جس کے وجہ سے کرنل پروہیت کی ضمانت عرضداشت پر سنوائی شروع نہیں ہوسکی ۔ یہ اطلاع آج یہاں ممبئی میں جمعیۃ علماء مہاراشٹر(ارشد مدنی) قانونی امداد کمیٹی کے سربراہ گلزار اعظمی نے دی۔انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کی دورکنی بینچ کے جسٹس آر کے اگروال اور جسٹس ابھے منوہر سپرے کی عدالت میں آج ملزم کی جانب سے داخل کردہ ضمانت عرضداشت پر سماعت ہونا تھی لیکن دو رکنی بینچ کے جسٹس حضرات کے دوسرے معاملے (کونسٹی ٹیوشنل بینچ) میں مصروف ہونے کی وجہ سے معاملہ کی سماعت ٹل گئی ہے نیز اگلے چند ایام میں پتہ لگے گاکہ آیا اب معاملے کی سماعت کب اور کس بینچ کے سامنے ہوگی۔گلزار اعظمی نے اس تعلق سے کہا کہ مالیگاؤں 2008 بم دھماکہ معاملے کے کلیدی ملزم کرنل شریکانت پروہیت کی ضمانت کی مخالفت کرنے کے لیے جمعیۃ علماء نے تیاری کی ہے اور اس تعلق سے سینئر ایڈوکیٹ امریندر شرن(سابق ایڈیشنل سالیسٹر جنرل آف انڈیا) اور ایڈوکیٹ آن ریکارڈ اعجاز مقبول کی خدمات حاصل کی گئیں ہیں۔انہوں نے کہا کہ دھماکوں کے متاثرین میں سے ایک نثاراحمد سید بلال جن کا جواں سال فرزند سید اظہر دھماکوں میں شہید ہوگیا تھا کی جانب سے بطور مداخلت کار سپریم کورٹ میں عرضداشت داخل کی گئی تھی جسے گذشتہ سماعت پر ہی عدالت نے قبول کرلیا تھا نیز ملزمین کی ضمانت عرضداشت پر سماعت کے دوران جمعیۃ کے وکلاء ملزم کو ضمانت پر رہا کیے جانے کی سخت لفظوں میں مخالفت کریں گے ۔

TOPPOPULARRECENT