Tuesday , September 19 2017
Home / اضلاع کی خبریں / کریم نگر مجلس بلدیہ کا اجلاس ہنگامہ آرائی کی نزد

کریم نگر مجلس بلدیہ کا اجلاس ہنگامہ آرائی کی نزد

کریم نگر /12 جنوری ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز ) کریم نگر مجلس بلدیہ کا منعقدہ اجلاس پہلی بار 285 مدات پر زیر بحث لائے ایک بھاری ایجنڈہ ترتیب دیا گیا تھا ۔ لکن زیروں اجلاس میں صفائی کے کاموں کی عمل آوری پ گرما گرم بحث شروع ہوگئی ۔ 23 ویں ڈیویژن میں جوکہ برسر اقتدار پارٹی ٹی آر ایس کارپوریٹر این پربھاوتی اپنے ڈیویژن میں بغیر اجامت زیر تعمیر کو کیا وجہ ہے کہ کارروائی نہیں کی جارہی ہے کہتے ہوئے مسٹر کے پوڈیم کے پاس جاکر یادداشت حوالے کی ۔اسی دوران چوتھے ڈیویژن ٹی آر ایس کارپوریٹر اے سریتا بھی پوڈیم کے پاسجاکر پربھاوتی نے انتباہ دیا گیا ۔ میرے ڈیویژن میں مداخلت کرنے پر خاموشی اختیار نہیں کی جائے گا ۔ چپل نکالتے ہوئے انتباہ دیا ۔ اے سریتا کے شوہر کو اطلاع ملنے پر بھارتی کے خلاف بولتے ہوئے اجلاس ہال میں داخل ہوگیا ۔ اس پر مئیر نے دخل دیتے ہوئے دوپہر کے کھانے کے وقفہ کا اعلان کردیا ۔ اجلاس میں چپل نکالنے پر بحث شروع ہوگئی کہ یہ ناشائستہ حرکت ہے ۔ اجلاس کی توہین ہے ۔ اس پر مئیر نے اپنے چیمبر میں کچھ کارپوریٹرس اور عہدیداروں کے ساتھ مشورہ کیا ۔ بعد ازاں میٹنگ ہال میں داخل ہوکر کہا کہ اجلاس کی شروعات پر اس طرح کے واقعات انتہائی بدبختانہ ہیں ۔ چنانچہ اس کے ذمہ دار کارپوریٹر پربھاوتی کو میونسپل قاعدہ 9 کے تحت برطرف کرنے کا مجھے اختیار ہے ۔ انہیں چاہئے کہ اندرون دس منٹ اجلاس سے بلاکسی شرط معافی مانگنے پر کوئی کارروائی نہیں ہوگی اعلان کیا ۔ یہ خبر ملتے ہی پربھاوتی اجلاس میں داخل ہوکر معافی مانگنے کا ارادہ ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ مجھے انتباہ دینے والی سریتا کے خلاف بھی کارروائی کی جائے ، بصورت دیگر میرے خلاف کارروائی کرنے سے باز آجائیں خواہش کی ۔ اس پر مئیر نے جواب نہیں دیا ۔ اس پر پربربھاوتی نے مائیک کے وائر کو اپنے گلے میں لپیٹ کر خودکشی کرنے کی کوشش پر کارپوریٹرس نے چھڑا لیا ۔ مجھے برطرف کرنے پر کیڑے مار دوا پی کر خودکشی کرلوں گی کہا ۔ کریم نگر کارپوریشن کا مئیر ڈپٹی مئیر کارپوریٹرس اور معاون کارپوریٹرس سبھی برسر اقتدار پارٹی ٹی آر ایس کے ہیں ۔ اس کے باوجود ایک دوسرے کے خلاف تنقید بحث و تکرار پر سمجھ میں نہیں آرہا تھا کہ آیا یہ کارپوریٹرس ایک ہی پارٹی کے ہیں یا مختلف پارٹیوں کے ہیں ۔ اس طرح کا منظر بلدیہ اجلاس میں کبھی نظر نہیں آیا ۔ کچھ سینئیر کارپوریٹرس نے اظہار خیال کیا ۔ آئی اے ایس آفیسر کمشنر کا جائزہ لینے کے بعد یہ پہلا اجلاس تھا ۔ اس میں اہم مسائل پر فیصلے لئے جاتے تھے لیکن اجلاس میں کمشنر نے صرف اپنا تعارف ہی پیش کرسکے ۔ بغیر کسی قرارداد کے بلوں کو ادائیگی کیا معنی؟ کانگریس کے فلور قائد جی مادھوی نے کہا 2013 میں جاری کردہ حکومت کے احکامات کی خلاف ورزی کرتے ہوئے کروڑوں روپئے کونسلروں کی قرارداد کے بغیر دئے گئے اس پر وائی سنیل راؤ نے کہا کہ اب صفائی کے کاموں پر بحث جاری ہے ۔ ایسے میں خلاف معمولی بلوں کی ادائیگی کا سوال کیا معنی ۔ دونوں کارپوریٹرس میں توتو میں میں شروع ہوگئی ۔ بجٹ میں 30 فیصد فنڈز تقریباً 4 کروڑ تک صفائی کے کاموں پر مختص کئے جانے کے باوجود صفائی کے کا ٹھپ کیوں ہیں ۔ سوال اٹھایا گیا ۔ اس میں بڑے پیمانے پر بدعنوانی ہوئی ہے ۔ سینئیر کارپوریٹر اے پرکاش نے الزام لگایا ۔ اس پرکئی کارپوریٹرس ڈپٹی مئیر جی رمیش ، کے لنگیا ، رویندر وجئے نے بھی سوال کیا کہ کنٹراکٹ میں کس کا کس قدر حصہ ہے واقف کروایا جائے مطالبہ کیا ۔ ار پر کچھ دیر سخت الفاظ کا تبادلہ ہوتا رہا ۔ صفائی کے کاموں کے تعلق سے کوئی مستقل حل نکالا جائے اور صفائی کے کاموں کیلئے مزدوروں کا اضافہ کرنے کا مطالبہ کیا ۔ ہر ڈیویژن میں 70 تا ایک کروڑ فنڈز مختص کرنے کا مشورہ دیا ۔ سڑکوں کی تعمیر اور دیگر ترقیاتی کاموں کی انجام دہی کیلئے مفید مشورے دینے کی خواہش کی ۔ 2000 سے تاحال 14 مزدور فوت ہوچکے ہیں ۔ ان کی جگہ کسی کا تقرر نہیں کیا گیا ۔ مزدوروں کو ہر ماہ پابندی سے تنخواہ دینے کا مطالبہ کیا ۔

TOPPOPULARRECENT