Sunday , September 24 2017
Home / Top Stories / ’’کرین حادثے کے باوجود حج معمول کے مطابق ہو گا‘‘

’’کرین حادثے کے باوجود حج معمول کے مطابق ہو گا‘‘

عالم اسلام سوگوار ، دنیا بھر کے سربراہان کی خادم حرمین شریفین شاہ سلمان سے اظہار تعزیت

مکہ مکرمہ۔ 12 سپٹمبر۔(سیاست ڈاٹ کام) سعودی عرب کے ایک اعلیٰ عہدیدار نے کہا ہے کہ مسجد الحرام میں کرین گرنے کے حادثے کے باوجود حج معمول کے مطابق ہوگا۔ اس حادثے میں ایک سو سے زیادہ عازمین حج جاں بحق ہوگئے ہیں۔اس سعودی عہدے دار نے اپنی شناخت ظاہر کیے بغیر کہا ہے کہ ’’کرین کا حادثہ حج پر اثر انداز نہیں ہوگا اور مسجد الحرام کے متاثرہ حصوں کی آئندہ چند روز میں مرمت کردی جائے گی۔حج کے مناسک واعمال یقینی طور پر معمول کے مطابق جاری رہیں گے‘‘۔ جمعہ کے روز شدید آندھی اور بارش کی وجہ سے تعمیراتی کام میں استعمال ہونے والی ایک بڑی کرین مسجد الحرام کے صحن میں گر گئی تھی جس کے نتیجے میں وہاں موجود 107 افراد جاں بحق اور 238 زخمی ہوگئے تھے۔ دو ہندوستانی جاں بحق اور 15 زخمی ہوئے جبکہ  47 پاکستانی بھی زخمیوں میں شامل ہیں۔واضح رہے کہ حج کی ادائی کیلئے دنیا بھر سے تقریباً آٹھ لاکھ فرزندان توحید مکہ مکرمہ پہنچ چکے ہیں۔مناسکِ حج کا آغاز 21ستمبر کو متوقع ہے۔اس دوران گذشتہ روز مسجدحرام میں پیش آئے المناک حادثے اور اس میں ہونے والے جانی نقصان پر پورا عالم اسلام سوگوار ہے۔ کرین حادثے پر عالمی رہنمائوں اور کئی سربراہان مملکت نے خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز سے تعزیت کا اظہار کیا ہے۔سعودی عرب کی خبر رساں ایجنسی ’’واس‘‘ کے مطابق کئی عالمی قائدین نے ٹیلیفون پر شاہ سلمان بن عبدالعزیز سے کرین حادثے پر افسوس کا اظہار کیا۔ مصر کے صدر عبدالفتاح السیسی، بحرینی فرمانروا شاہ حمدبن عیسیٰ آل خلیفہ، ترکی کے صدر رجب طیب اردغان، متحدہ عرب امارات کے ولیعہد الشیخ محمدبن زاید نے ٹیلیفون پر شاہ سلمان سے کرین حادثے پر تعزیت کی۔اس کے علاوہ امیرکویت الشیخ صباح احمدالصباح، کویتی ولی عہد الشیخ نواف احمد الجابر الصباح اور وزیراعظم الشیخ جابر المبارک الاحمد الصباح نے الگ الگ  پیغامات کے ذریعے شاہ سلمان اور پوری سعودی قوم سے افسوسناک حادثے پر تعزیت کا اظہار کیا۔ گذشتہ روز خوفناک آندھی اور طوفان کے باعث مسجد حرام کے زیرتعمیر حصے میں لگی ایک کرین ٹوٹ کر نمازیوں پرآ گری تھی جس کے نتیجے میں ایک سو سے زائد افراد جاں بحق اور دو سوسے زائد زخمی ہوگئے تھے۔

TOPPOPULARRECENT