Saturday , September 23 2017
Home / سیاسیات / کسانوں، مزدوروں پر وزیراعظم کی کوئی توجہ نہیں

کسانوں، مزدوروں پر وزیراعظم کی کوئی توجہ نہیں

مختلف ریاستوں کے کسان وفود سے ملاقات کے بعد راہول گاندھی کا ریمارک
نئی دہلی ، 12 سپٹمبر (سیاست ڈاٹ کام) وزیراعظم نریندر مودی کے خلاف جارحانہ مہم میں شدت پیدا کرتے ہوئے راہول گاندھی نے آج انھیں جمہوریت کی باتوں میں کسانوں اور مزدوروں کو یکسر نظرانداز کردینے کا موردِ الزام ٹھہرایا۔ ’’مودی جی جمہوریت کے تعلق سے بات کرتے ہیں لیکن ہمارے کسانوں اور مزدوروں کی بات نہیں کرتے، جو اس جمہوریت کو چلاتے ہیں۔ وہ انھیں فراموش کررہے ہیں،‘‘ نائب صدر کانگریس راہول نے یہ بات کسانوں سے ملاقات کے بعد کہی، جو یوتھ کانگریس کے زیراہتمام فتح جلوس میں حصہ لینے آئے تھے۔ راہول نے کہا کہ کسانوں اور مزدوروں کو اس قوم کی ترقی میں مساوی شراکت دار بنانے کیلئے اُن کی جدوجہد جاری رہے گی۔ کانگریس نے اعلیٰ سطح کی کمیٹی تشکیل دی تاکہ 20 سپٹمبر کو ’کسان سمان‘ ریلی منظم کرتے ہوئے مودی حکومت کو بہار اسمبلی چناؤ سے قبل ’’کسان دشمن‘‘ کے طور پر نشانہ بنایا جائے۔ راہول نے ٹوئٹر پر بتایا کہ مختلف ریاستوں کے کسانوں کے وفود سے ملاقات کی اور انھیں کانگریس پارٹی کی بے تکان تائید و حمایت کا یقین دلایا۔ فخر ہے کہ اراضی بل میں این ڈی اے حکومت کی مخالف کسان ترامیم کے خلاف کسانوں کے ساتھ مل کر جدوجہد کی ہے۔ لیکن کسانوں کو اس قوم کی ترقی میں مساوی شراکت دار یقینی بنانے کیلئے جدوجہد جاری ہے اور کانگریس اس مقصد کیلئے پابند عہد ہے۔ قبل ازیں راہول نے دہلی، ہریانہ، ہماچل پردیش، راجستھان اور پنجاب کے تقریباً 400 کسانوں سے صدر کانگریس سونیا گاندھی کی قیامگاہ 10 جن پتھ پر ملاقات کی۔ سونیا نے بھی ان کسانوں سے بات کی۔ انھوں نے کہا کہ پارٹی کے ویٹرن لیڈر اے کے انٹونی کی سربراہی میں ایک رابطہ کمیٹی تشکیل دی گئی ہے تاکہ مجوزہ ریلی کی تفصیلات ترتیب دی جاسکیں۔ سابق چیف منسٹر ہریانہ بھوپندر سنگھ ہوڈا اور اے آئی سی سی جنرل سکریٹری ڈگ وجئے سنگھ اس کمیٹی کے شریک صدورنشین ہیں، جس میں سابق چیف منسٹر دہلی شیلا ڈکشٹ اور اے آئی سی سی خازن موتی لال وورا ممبرز بنائے گئے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT