Friday , October 20 2017
Home / شہر کی خبریں / کسانوں کو ملناساگر اور مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات کی جھوٹی تسلی

کسانوں کو ملناساگر اور مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات کی جھوٹی تسلی

عوام کو گمراہ کرنے سدھیر کمیشن کا قیام ، کاماریڈی میں اجلاس ، کونسل کے اپوزیشن لیڈرمحمد علی شبیر اور دیگر کا خطاب
کاماریڈی:17؍ جولائی ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) قانون ساز کونسل کے اپوزیشن لیڈر محمد علی شبیر نے آج کاماریڈی حلقہ کے بھکنور منڈل کے رامیشور پلی میں کسانوں کے ایک اجلاس سے مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ برسراقتدار حکومت کسانوں اور مسلمانوں کو گمراہ کرنے میں زبردست اور کامیاب رول ادا کیا ،کسانوں کو ملنا ساگر سے پانی فراہم کرنے کی جھوٹی تسلی دیتے ہوئے دھوکہ دے رہی ہے تو مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات فراہم کرنے کا جھوٹی تسلی دیتے ہوئے وقت ضائع کررہی ہے ۔انہوں نے کہا کہ ملنا ساگر سے کاماریڈی کو کسی بھی صورت میں پانی نہیں پہنچایاجاسکتا ہے۔400 کلو میٹر طویل فاصلہ ہے اور ابھی تک اراضی کا حصول باقی ہے اور کس طرح دو سال میں پانی کاماریڈی تک لایاجاسکتا ہے یہ صرف ہتھیلی میں جنت دکھانے والی بات کے سوا کچھ بھی نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات فراہم کرنے کا کے سی آر نے بلند بانگ دعویٰ کیا تھا لیکن ابھی تک اس پر عمل آوری کیلئے کو ئی بھی اقدامات نہیں کئے گئے اور سدھیر کمیشن کے قیام کے ذریعہ عوام کو گمراہ کیا جارہا ہے ۔اس موقع پر مسٹر محمد علی شبیر نے جلسہ میں مسلمانوں کو مجلس کے بارے میں واقف کرانے کیلئے چار مینار کے سابق کارپوریٹر محمد غوث کو بھی ان کے ہمراہ ساتھ رکھا۔ اس موقع پر محمد غوث نے اپنی تقریر میں کہا کہ کانگریس پارٹی سیکولر کردار کی حامل ہے اور کانگریس کے ترنگے میں جو تین رنگ ہے اسی طرح کانگریس پارٹی میں بھی ہندو مسلم، سکھ و دیگر طبقات کا اتحاد ہے انہوں نے مجلس پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ دہلی میں بڑا مودی ہے تو حیدرآباد میں اسد الدین
اویسی چھوٹا مودی ہے اور ان دونوں کے درمیان اتحاد ہے اس کا انکشاف بھی ہوچکا ہے۔اس موقع پر ایم ایل سی آکولہ للیتا نے اپنی تقریر میں کہا کہ کسانوں اور خواتین کی فلاح بہبودی میں حکومت ناکام ہوئی ہے اور گذشتہ دو سالوں سے عوام کو گمراہ کے سواکوئی ٹھوس کام انجام نہیں دیا۔ انہوں نے کسانوں کو قرضہ جات کی ادائیگی میں بھی ناکام ہونے کا الزام عائد کیا۔ ضلع کانگریس کے صدر مسٹر طاہر بن حمدان نے کہا کہ ضلع کانگریس کے زیر اہتمام حکومت کی ناکامیوں کیخلاف سلسلہ وار احتجاجی پروگرام جاری ہے۔ او یو جے ای سی کے قائد ایلم نے اپنی تقریر میں کہا کہ چندر شیکھر رائو نے تلنگانہ کے حصول کیلئے شروع کردہ مرن برت صرف دو دن میں ختم کیا تھا اوران کے بھانجے ہریش رائو اس بات کو واضح کیا تھا کہ چندر شیکھررائو کی طبیعت ناساز ہونے کی وجہ سے مرن برتک و ختم کردیا ہے لیکن عثمانیہ یونیورسٹی کے طلباء نے چندر شیکھر رائو کو مرن برت کو جاری رکھنے پر مجبور کردیا تھا اور چندر شیکھر رائو نے عثمانیہ یونیورسٹی کے طلباء کے دبائو پر اپنے مرن برت کو جاری رکھا تھا
لیکن آج عثمانیہ یونیورسٹی کے طلباء پر زیادتیاں کی جارہی ہے انہوں نے اپنے نغموں کے ذریعہ چندر شیکھر رائو کیخلاف شرکاء کو واقف کرانے کی کوشش کی اس موقع پر پی سی سی کے وائس پریسیڈنٹ وجئے پرسادنے حکومت پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ حکومت ہر محاز میں ناکام ثابت ہوئی ہے اور حکومت کیخلاف کانگریس پارٹی منصوبہ بند طریقہ سے اپنے پروگرام کو جاری رکھے گی۔ سیٹ ون کے چیرمین مقصود کے علاوہ سابق رکن پارلیمنٹ ظہیر آباد سریش شٹکر، سابق رکن اسمبلی گنگارام ، صدرنشین بلدیہ کاماریڈی پی سشما، سابق صدرنشین سنٹرل کوآپریٹیو بینک اے راج ریڈی، سابق صدرنشین بلدیہ کے سرینواس، اندراکرن ریڈی و دیگر نے بھی مخاطب کیا۔ اس پروگرام میں کانگریسی قائدین وینکٹی، رام کمار گوڑ،محمد علی اسحاق شیروو دیگر بھی موجود تھے۔

TOPPOPULARRECENT