Wednesday , August 23 2017
Home / اضلاع کی خبریں / کسانوں کیساتھ حکومت کی ناانصافی

کسانوں کیساتھ حکومت کی ناانصافی

عنقریب بڑے پیمانے پر احتجاج، جڑچرلہ میں ڈاکٹر ملوروی کا بیان
جڑچرلہ 15 جولائی (ذریعہ ای میل) جڑچرلہ کانگریس پارٹی دفتر میں جڑچرلہ کانگریس پارٹی حلقہ اسمبلی انچارج ڈاکٹر ملو روی کی سالگرہ تقریب جوش و خروش کے ساتھ منائی گئی جس میں جڑچرلہ، بالانگر، میڑچل، نوارپیٹھ منڈلوں سے تعلق رکھنے والے کانگریس کارکنوں نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔ بعدازاں ان کے ہاتھوں کیک کاٹا گیا۔ اِس ضمن میں ڈاکٹر ملو روی نے مقامی اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہاکہ ٹی آر ایس حکومت میں آکر 2 سال مکمل ہوچکے ہیں لیکن زرعی کسانوں، بے روزگار نوجوانوں، غریب عوام کو مکانات کی تعمیری کام کے وعدوں میں سے ایک وعدہ بھی مکمل نہیں کیا گیا جس سے تلنگانہ کے تقریباً عوام ٹی آر ایس حکومت سے سخت ناراض ہیں کیوں کہ زرعی کسانوں کو ایک لاکھ روپیوں کے قرضہ جات کو تین مرحلوں میں معاف کرنے کا وعدہ کیا تھا جس میں صرف دو مرتبہ ہی معاف کئے ہیں۔ زرعی فصل کا کام شروع ہوکر تقریباً ایک ماہ مکمل ہوچکا ہے۔ زرعی کسان دوبارہ بینکوں سے قرضہ جات منظور نہیں کررہے ہیں جس سے کسان کافی پریشان حال ہیں۔ اس کے علاوہ جڑچرلہ منڈل ولور، ودینڈپور، خانہ پور، کور کنڈہ، ستاپور مواضعات پارلمور لفٹ پراجکٹ میں مکمل طور پر ان مواضعات چلے جارہے ہیں۔ انھوں نے کہاکہ جی او نمبر 123 کے تحت ان افراد کی اراضی کو قیمت پر خریدنے کا مطالبہ کیا۔ فی زرعی کسان 30 تا 40 لاکھ فی ایکر زمین کی قیمت سے خریدنے کا تیقن دیا۔ ورنہ 16 جولائی کو تلنگانہ کانگریس پارٹی صدر اتم کمار ریڈی، جانا ریڈی، بی واکرلا ریڈی کے علاوہ دیگر اضلاع کے کانگریس پارٹی کے ارکان اسمبلی، صدر ڈی سی سی کے ساتھ کسانوں سے ملاقات کرکے بڑے پیمانے پر ٹی آر ایس حکومت کے خلاف احتجاجی جلسہ منعقد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ پالمور رنگاریڈی لفٹ پراجکٹ کو دوبارہ سروے کروانے کی اپیل کی۔ اس موقع پر جڑچرلہ سرپنچ ، بوکا وینکٹشم ، ملک شاگر سابق نائب صدرنشین زرعی مارکٹ ہائے پلی، سرفراز احمد، سید منہاج الدین، شیخ حبیب، سید اقبال، جی اینکا سابق سرپنچ، سابق ایم پی پی ستانندم، سدرشن گوڑ، یادیا، وسیم، ایم اے قیوم، خواجہ اجمیری، سابق ایم پی پی بھوت پور نرسمہلو، اشوک کمار، نصیرالدین، کرشنا، اپو کرشنا، ایم اے قیوم، للیتا، کے علی طاہر، نگاش کے علاوہ دیگر کانگریس پارٹی قائدین اس موقع پر موجود تھے۔ بعدازاں غریب نادار بیواؤں میں کپڑوں کی تقسیم عمل میں آئی۔

TOPPOPULARRECENT