Friday , August 18 2017
Home / ہندوستان / کشمیر میں احتجاجی بند سے عام زندگی متاثر

کشمیر میں احتجاجی بند سے عام زندگی متاثر

سرینگر، 26 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) ضلع راجوری کے ایک گاؤں میں دفاعی کمیٹی کے ارکان کے ہاتھوں ایک ماں اور بچہ کی ہلاکت کے خلاف صدرنشین حریت کانفرنس سید علی شاہ گیلانی کی جانب سے ہڑتال کی اپیل پر آج وادیٔ کشمیر میں عام زندگی درہم برہم ہوگئی۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ سرینگر اور مضافاتی علاقوں میں دکانات، تجارتی ادارے، خانگی دفاتر اور پٹرول پمپس بند رکھے گئے جبکہ ہڑتال کے باعث سرکاری دفاتر میں حاضری برائے نام رہی۔ اگرچیکہ عوامی ٹرانسپورٹ کو سڑکوں سے ہٹادیا گیا لیکن خانگی گاڑیاں بشمول کیابس اور آٹو رکشے حسب معمول چلائے گئے۔ مہینے کے چوتھے ہفتہ کے پیش نظر بینکس بند رکھے گئے جبکہ سرمائی تعطیلات کے باعث اسکولوں کو چھٹیاں دے دی گئی تھیں۔ انھوں نے بتایا کہ وادی کے بیشتر ضلع ہیڈ کوارٹرس سے بند کی اطلاعات ہیں۔ واضح رہے کہ سید علی شاہ گیلانی نے ولیج ڈیفنس کمیٹی رکن مشتاق احمد کے ہاتھوں شمیمہ اختر اور ان کے 3 سالہ لڑکے کی ہلاکت کے خلاف ریاست گیر احتجاجی بند کا اعلان کیا تھا۔ قبل ازیں 19 ڈسمبر کو ایک اور ولیج ڈیفنس کمیٹی رکن کیول شرما نے معمولی جھگڑا پر این سی لیڈر مشتاق احمد کو گولی مار کر ہلاک کردیا جس کے بعد اپوزیشن جماعتوں اور علیحدگی پسندوں نے ولیج ڈیفنس کمیٹیوں کو برخاست کردینے کا مطالبہ کیا ہے۔

TOPPOPULARRECENT