Tuesday , September 19 2017
Home / Top Stories / کشمیر میں غیریقینی صورتحال ختم کرنے مذاکرات ناگزیر :فاروق عبداللہ

کشمیر میں غیریقینی صورتحال ختم کرنے مذاکرات ناگزیر :فاروق عبداللہ

سری نگر 25مئی (سیاست ڈاٹ کام ) نیشنل کانفرنس کے صدر اور رکن پارلیمنٹ ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہا ہے کہ جب تک مسئلہ کشمیر کے حل کرنے کی کوشش اور پہل نہیں کی جائے گی تب تک ریاست جموں وکشمیر کے لوگ بے چینی ، بدامنی اور عدم تحفظ کے شکار رہیں گے ۔انہوں نے کہا کہ مرکزی سرکار کو افہام و تفہیم اور مذاکرات کا راستہ اختیار کرنے کے لئے قائل کرنا ریاست کی موجودہ سرکار کا فرض بنتا تھا تاکہ ریاست کے حالات میں ٹھہراؤ آسکے اور مسئلہ کشمیر کے حل کے لئے پہل ہوسکے۔ تاہم بقول فاروق عبداللہ ریاستی حکومت بدقسمتی سے ایسا کرنے سے قاصر ہے کیونکہ یہ لوگ سوچتے ہیں کہ ایسا کرنے سے زعفرانی قائدین ناراض ہوجائیں گے ، جو بعد میں اقتدار سے ہاتھ دھونے کا سبب بھی بن سکتا ہے ۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ بر سراقتدار جماعت پی ڈی پی کے قائدین بی جے پی قیادت کو ناراض کرنے کی گستاخی کرنا گوارا نہیں کررہے ہیں۔ فاروق عبداللہ نے آج یہاں نیشنل کانفرنس کے ایک خصوصی اجلاس سے خطاب کررہے تھے۔انہوں نے الزام لگایا کہ اقتدار کی سلامتی کے بدلے ریاستی سرکار کو ناگپور اور نئی دہلی سے جو بھی فرمان ملتے ہیں، وہ ان پر من و عن عمل کررہی ہے۔ فاروق عبداللہ نے کہا کہ پی ڈی پی ۔ بی جے پی مخلوط حکومت کا مقصد نہ صرف ریاست جموں و کشمیر کے خصوصی موقف کو ختم کرنا ہے بلکہ یہاں کی نوجوان نسل کے مستقبل کو تاریک بنانا ہے ۔انہوں نے کہاکہ عوام دشمن اور نوجوان دشمن پالیسیوں سے حکومت دن بہ دن رسوا اور عوامی نظروں میں گرتی جارہی ہے ۔ اس دوران پارٹی کے ایک ترجمان نے بتایا کہ فاروق عبداللہ کی صدارت میں منعقدہ اجلاس میں پارٹی کے جنرل سکریٹری علی محمد ساگر، سینئر لیڈر عبدالرحیم راتھر،صوبائی صدر ناصر اسلم وانی، پارٹی سے وابستہ ارکان اسمبلی اور دیگر موجود تھے ۔ انہوں نے بتایا کہ اجلاس میں کشمیر کے تئیں مرکز کی سخت گیر پالیسی،ریاست کی مجموعی سیاسی صورتحال، تنظیمی امورات اور موجودہ مخلوط حکومت کی غفلت سے لوگوں کو درپیش گوناگوں مسائل و مشکلات کے بارے میں سیر حاصل بحث ہوئی۔ اجلاس کے شرکا نے ریاست کے موجودہ نامساعد اور ناگفتہ بہہ حالات جاری رہنے پر زبردست تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ حالات سدھارنے اور ریاست میں امن وامان کی فضا پٹری پر لانے کا واحد راستہ افہام و تفہیم اور بات چیت ہی ہے۔ قائدین نے کہا کہ مسلسل غیر یقینی صورتحال سے وادی کو اقتصادی بدحالی کے بھنور میں ڈھکیلا جارہا ہے۔

TOPPOPULARRECENT