Thursday , August 17 2017
Home / ہندوستان / کشمیر میں پھر جھڑپ ‘ ایک شخص ہلاک ‘ تعداد 65 ہوگئی

کشمیر میں پھر جھڑپ ‘ ایک شخص ہلاک ‘ تعداد 65 ہوگئی

دن بھر حالات پرامن رہنے کے بعد شام میں واقعہ ۔ سرینگر میں کرفیو ہنوز جاری
سرینگر 21 اگسٹ ( سیاست ڈاٹ کام ) سرینگر میں ایک ہجوم اور سکیوریٹی فورسیس کے مابین آج شام ہوئے جھڑپ میں ایک شخص ہلاک ہوگیا اس طرح آج صبح سے قائم ہوا امن درہم برہم ہوکر رہ گیا ۔ دارالحکومت سرینگر کے علاوہ دوسرے دو ٹاؤنس میں بھی کرفیو نافذ ہے ۔ ایک پولیس عہدیدار نے بتایا کہ عرفان احمد نامی یہ شخص سنگباری کرنے والے ہجوم اور سکیوریٹی فورسیس کے مابین فتح کدل علاقہ میںجھڑپ کے دوران زخمی ہوگیا تھا اور وہ بعد ازاں دواخانہ میںاپنے زخموں سے جانبر نہ ہوسکا ۔ اس ہلاکت کے بعد کشمیر میں گذشتہ 44 دن سے جاری ہنگاموں اور بدامنی میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد بڑھ کر 65 ہوگئی ہے ۔ مہلوکین میں دو پولیس ملازمین بھی شامل ہیں۔ قبل ازیںآج دن بھر شہر میں حالات پرامن تھے جبکہ تین مقامات کنگن ( گدربل ) اور ترم گنڈ و بہرام پورہ ( سوپور ) میں ہی سنگباری کے واقعات کی اطلاع ملی تھی ۔ پولیس ترجمان نے بتایا کہ کچھ لوگ سڑکوں پر جمع ہوگئے تھے اور بعد ازاں انہوں نے پولیس اور سکیوریٹی فورسیس پر سنگباری کی ۔ ان واقعات کے سوا صورتحال ساری وادی میں پرامن تھی اور بعد میں جھڑپ کا واقعہ پیش آیا ۔ انہوں نے بتایا کہ وادی کے دوسرے علاقوں میں عوام کی نقل و حرکت پر تحدیدات بھی برقرار ہیں۔ دوکانیں ‘ خانگی دفاتر اور پٹرول پمپس بھی بند رہے جبکہ عوامی ٹرانسپورٹ بھی سڑکوں سے غائب رہی تھی ۔ ساری وادی میں موبائیل انٹرنیٹ بھی ہنوز بند ہے جبکہ پوسٹ پیڈ موبائیل خدمات اور پری پیڈ موبائیلس پر ان کمنگ سہولتیں کل بحال کردی گئی تھیں۔ تاہم پری پیڈ خدمات پر آوٹ گوئنگ سرویس ہنوز بند ہے ۔ علیحدگی پسندوں نے عوام سے اپیل کی تھی کہ وہ آج سہ پیر تین بجے سے پانچ بجے کے درمیان مقامی چوک اور مراکز پر جمع ہوجائیں۔ علیحدگی پسندوں نے عوام سے اپیل کی تھی کہ وہ دیواروں پر تحریریں کرتے ہوئے تمام سیاسی جماعتوں کے ارکان اسمبلی اور ارکان کونسل کے علاوہ وزرا سے اپنے سرکاری اور جماعتی عہدوں سے سبکدوش ہوجانے اور استعفے پیش کردینے کا مطالبہ بھی کریں۔ علیحدگی پسندوںنے سید علی شاہ گیلانی ‘ میرواعظ عمر فاروق اور محمد یسین ملک کی قیادت میں اپنے احتجاج کو 25 اگسٹ تک توسیع دینے کا اعلان بھی کیا تھا ۔

TOPPOPULARRECENT