Tuesday , September 26 2017
Home / Top Stories / کشمیر کے عوام خوف کی زندگی کے خلاف جدوجہد کریں

کشمیر کے عوام خوف کی زندگی کے خلاف جدوجہد کریں

خوشحال ریاست کا قیام شہیدوں کا خواب ۔ خراج عقیدت پیش کرنے کے بعد محبوبہ مفتی کا بیان
سرینگر 13 جولائی ( سیاست ڈاٹ کام ) چیف منسٹر جموںو کشمیر محبوبہ مفتی نے آج کہا کہ وادی کے عوام کو چاہئے کہ وہ خوف کی زندگی کے خلاف جدوجہد کریں اور کچھ طاقتوں نے صورتحال کو جو یرغمال بنالیا ہے اس کے خلاف اقدامات کریں تاکہ ایک خوشحال ریاست کا قیام ممکن ہوسکے ۔ 1931 کے شہیدوں کو خراج پیش کرنے کے بعد اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے محبوبہ مفتی نے کہا کہ ہمیں خوف کی اس زندگی کے خلاف جدوجہد کرنے کی ضرورت ہے ۔ جموںو کشمیر کی صورتحال کے خلاف جدوجہد کی ضرورت ہے جسے کچھ افراد نے یرغمال بنایا ہوا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ہم کو اقدامات کرنے کی ضرورت ہے کہ ایک خوشحال ریاست قائم کرسکیں جس کیلئے ان شہیدوں نے اپنی زندگیاں قربان کردی تھیں۔ انہوں نے کہا کہ ریاست کے عوام کو شہیدوں کی قربانیوں کو یاد رکھنے کی ضرورت ہے جنہوں نے ایک جمہوریت کے قیام اور ایک خوشحال ریاست کے قیام کیلئے اپنی زندگیوں کی قربانی دی جہاں کشمیریت ایک بنیادی اصول ہونا چاہئے ۔ چیف منسٹر نے کہا کہ جس طرح سے وادی کے عوام نے امرناتھ یاترا پر حملہ کی مذمت کیلئے اتحاد کا مظاہرہ کیا ہے اس سے ساری دنیا کو یہ پیام دیا جاسکا ہے کہ کشمیریت ابھی زندہ ہے ۔ انہوں نے کہا کہ جس طرح سے مختلف نظریات رکھنے والے افراد نے ایک جٹ ہوکر اس حملے کی مذمت کی ہے اس سے ایک بار پھر دنیا کو یہ پیام دیا جاسکا ہے کہ کشمیریت ابھی زندہ ہے اور یہاں کے لوگ ایسی کوئی حرکت برداشت نہیں کرینگے جو کشمیریت کے مغائر ہو ۔ محبوبہ مفتی کے ساتھ ان کے کابینی رفقا اور دوسرے سینئر پارٹی قائدین بھی موجود تھے جنہوں نے 21 افراد کی قبو رپر گلہائے عقیدت پیش کئے جنہوں نے 1931 میں آج کے دن ڈوگرا فوج کی فائرنگ میں اپنی زندگیاں قربان کردی تھیں۔ تاہم ریاست کی مخلوط حکومت میں فریق بی جے پی کا کوئی بھی لیڈر ان شہیدوں کو خراج پیش کرنے کیلئے موجود نہیں تھا ۔

 

حریت لیڈر میر واعظ عمر فاروق گرفتار
سرینگر 13 جولائی ( سیاست ڈاٹ کام ) پولیس نے آج اعتدال پسند حریت کانفرنس لیڈر میرواعظ عمر فاروق کو گرفتار کرلیا جبکہ وہ اپنے حامیوں کی قیادت کرتے ہوئے نقشبند صاحب علاقہ میں شہیدوں کے قبرستان کی سمت جانے کی کوشش کر رہے تھے ۔ میرواعظ کو ان کی قیامگاہ کے باہر ہی گرفتار کرلیا گیا اور انہیں مقامی پولیس اسٹیشن منتقل کیا گیا ۔ پولیس نے بتایا کہ یہ احتیاطی گرفتاری تھی ۔

TOPPOPULARRECENT