Wednesday , August 23 2017
Home / ہندوستان / کلبھوشن جادھو اور نیہال انصاری تک سفارتی رسائی فراہم کرنے کی خواہش

کلبھوشن جادھو اور نیہال انصاری تک سفارتی رسائی فراہم کرنے کی خواہش

ہندوستان کی پاکستان سے درخواست ،دونوں ممالک کے قیدیوں کی فہرست کا تبادلہ ، 546 ہندوستانی شہری پاکستانی جیلوں میں قید

نئی دہلی؍ اسلام آباد۔ یکم جولائی (سیاست ڈاٹ کام) ہندوستان نے آج ایک بار پھر پاکستان سے کہا ہے کہ اس کے شہری کلبھوشن جادھو تک سفارتی رسائی فراہم کرے۔ کلبھوشن جادھو کو پاکستان کی فوجی عدالت نے سزائے موت سنائی ہے۔ آج دونوں ممالک نے ایک دوسرے کی جیلوں میں موجود قیدیوں کی فہرست کا تبادلہ کیا۔ پاکستان نے جو فہرست فراہم کی ہے، اس کے مطابق 546 ہندوستانی شہری بشمول تقریباً 500 ماہی گیر پاکستانی جیلوں میں قید ہیں۔ وزارت اُمور خارجہ نے آج دہلی میں ایک بیان جاری کرتے ہوئے کہا کہ ہندوستان نے ایک بار پھر پاکستانی تحویل میں موجود ہندوستانی شہریوں بشمول حامد نیہال انصاری اور کلبھوشن جادھو تک سفارتی رسائی فراہم کرنے کی خواہش کی ہے۔ جادھو کو جاسوسی اور سبوتاج کرنے والی سرگرمیوں کے الزامات پر پاکستانی فوجی عدالت نے اپریل میں سزائے موت سنائی ہے۔ ہندوستان نے اس فیصلہ کے خلاف 18 مئی کو انٹرنیشنل کورٹ آف جسٹس (آئی سی جے) سے رجوع ہوکر سزائے موت کی تعمیل پر حکم التواء حاصل کیا ہے۔ ممبئی کے ایک شہری حامد نیہال انصاری کو 2012ء میں افغانستان کے ذریعہ پاکستان میں غیرقانونی داخلے پر گرفتار کیا گیا۔ وہ ایک لڑکی سے ملاقات کیلئے جارہے تھے جس کے ساتھ آن لائن دوستی ہوئی اور وہ پھر لاپتہ ہوگئی تھی۔ نیہال کو بھی گرفتار کرنے کے بعد پاکستانی فوجی عدالت میں مقدمہ چلایا گیا جس نے انہیں جاسوسی کا مجرم قرار دیا۔ پاکستانی دفتر خارجہ نے جو فہرست فراہم کی ہے، اس کے مطابق ہندوستانی قیدیوں میں 52 شہری اور 494 ماہی گیر ہیں۔ فہرست کا یہ تبادلہ باہمی معاہدہ کے تحت انجام پایا جس پر دونوں ممالک نے 21 مئی 2008ء کو دستخط کئے تھے۔ اس معاہدہ کے مطابق دونوں ممالک ہر سال یکم جنوری اور یکم جولائی کو دو مرتبہ اپنے ملک میں موجود قیدیوں کی فہرست کا تبادلہ کریں گے۔ ہندوستان نے ایک بار پھر پاکستان سے درخواست کی ہے کہ ہندوستانیوں قیدیوں کو جلد از جلد رہا کیا جائے اور ان کی حوالگی عمل میں لائی جائے۔ ہندوستانی دفاعی عملہ کے علاوہ ماہی گیروں کو ان کی کشتیوں کے ساتھ رہا کیا جائے۔ دفتر خارجہ نے کہا کہ ہندوستان انسانی بنیادوں پر پاکستان کے ساتھ تمام اُمور کی عاجلانہ یکسوئی کا خواہاں ہے جو قیدیوں اور ماہی گیروں سے متعلق ہیں۔ اس پس منظر میں ہمیں ہندوستان میں تحویل میں لئے گئے پاکستانی شہریوں کی پاکستان کی جانب سے توثیق کا انتظار ہے تاکہ باہمی طور پر رہائی اور حوالگی کا عمل انجام دیا جاسکے۔ پاکستانی دفتر خارجہ نے بتایا کہ 6 جون کو 219 ہندوستانی ماہی گیروں کو رہا کیا گیا اور مزید 77 ماہی گیروں کے علاوہ ایک شہری کو 10 جولائی کو رہا کیا جائے گا۔

TOPPOPULARRECENT