Friday , August 18 2017
Home / اضلاع کی خبریں / کمزور طبقات کی ترقی حکومت کا نصب العین

کمزور طبقات کی ترقی حکومت کا نصب العین

کریم نگر میں دوبدو پروگرام سے بی سی کمیشن چیرمین بی ایس راملو کا خطاب
کریم نگر /13 جنوری ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز ) ریاست میں ایس سی ایس ٹی بی سی میناریٹی کی ترقی ہی حکومت کا نصب العین ہے ۔ ریاستی بی سی کمیشن چیرمین بی ایس راملو نے یہ بات کہی ۔ کریم نگر ضلع پریشد میٹنگ ہال میں پچھڑے کمزور طبقات کے ترقیاتی محکمہ کے زیر اہتمام ملازمین عہدیداروں دانشوروں کے ساتھ جمعرات کی شام منعقدہ دوبدو پروگرام میں بحیثیت مہمان خصوصی خطاب کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کے سبھی روبہ عمل ترقیاتی اسکیمات سے استفادہ کرنا ہوگا مشورہ دیا ۔ مورثی پیشہ وارانہ فنون کام کی اب مارکٹ میں کوئی قدر و قیمت نہیں ہے ۔ اس پر مایوس ہونے کی ضرورت نہیں ہے ۔ آبائی پیشہ میں عصری سہولتوں آلات سے استفادہ کریں اور فنی مہارت پیدا کریں اور بدلتے ہوئے حالات ضرورت کے مطابق اپنی پیداوار میں تمام سہولتوں کا اضافہ کریں مشورہ دیا ۔ 85 فیصد آبادی کا حصہ ایس سی ، ایس ٹی ، بی سی کو چاہئے کہ اقتدار کے فائدے حاصل کرنے کی کوشش کریں ۔ آزادی ملنے کے اتنے طویل عرصہ گذرجانے کے بعد بھی جو صورتحال ہے اس کا مکمل جائزہ لیا جاکر رپورٹ حوالے کی گئی ہے ۔ زیڈ پی چیرپرسن تلا اوما بی سی ویلفیر آفیسر اے سروپا بی سی سنگھموں ملازمین قائدین جی ناگابھوشنم اناورم دیویندر پی ہنمنت کمار سریدھر راجو رویندر چاری ہاسٹل ویلفیر عہدیداروں نے شرکت کی ۔ اس موقع پر مختلف سنگھموں کی جانب سے انہیں یادداشتیں پیش کی گئیں ۔ بی سی ریزرویشن 22 سے 52 تک اضافہ کئے جانے کی خواہش کرتے ہوئے تلنگانہ بی سی ویلفیر سنگھم جنرل سکریٹری کے سریدھر راجو کے زیر قیادت ایک یادداشت حوالے کی گئی ۔ روزگار سے محروم پیشہ وارانہ طبقات کی حکومت کی جانب سے ہر طرح سے مدد کرنے کا مطالبہ کیا گیا ۔ پی رمیش ٹی راج کمار رندھیر سنگھ کے رویندر سرینواس وغیرہ شریک تھے ۔ دو دیواکلا ( لداف ) فیڈریشن میناریٹی ویلفیر سے 10 کروڑ روپئے مختص کئے جائیں مطالبہ کرتے ہوئے ریاستی نورباش بی سی بہبود سوسائٹی ریاستی سکریٹری بابوجانی ( احمد محی الدین ) راج محمد کے زیر قیادت یادداشت حوالے کی گئی ۔ بشیر نواب نے شرکت کی ۔ مدیراج طبقہ کو بی سی اے گروپ میں شریک کرنے کا مطالبہ کو مسترد کیا جانا چاہئے کہتے ہوئے تلنگانہ رتیکا سنگھم ریاستی صدر پی ہنمنت راجہ کے وینکنا نوین ڈی رمیش وی شنکر گنگادھر وغیرہ نے یادداشت پیش کی ۔

TOPPOPULARRECENT