Friday , July 21 2017
Home / کھیل کی خبریں / کنگ فیڈرر کا آج ومبلڈن کے فائنل میں طاقتور سیلچ سے مقابلہ

کنگ فیڈرر کا آج ومبلڈن کے فائنل میں طاقتور سیلچ سے مقابلہ

راجر 2014 یوایس اوپن سیمی فائنل کا حساب برابر کرنے کے خواہاں

ومبلڈن ۔15 جولائی (سیاست ڈاٹ کام )سوئس ٹینس اسٹار راجر فیڈرر کا ومبلڈن اوپن ٹینس ٹورنمنٹ کے فائنل میں کل کروشیا کے مارین سیلچ سے مقابلہ ہو گا جہاں 7 مرتبہ کے چیمپئن فیڈرر اپنے 8 ویں ومبلڈن خطاب کے لئے کوشاں جبکہ سیلچ یو ایس اوپن 2014 کے بعد دوسرے گرانڈ سلام کے حصول میں سرگرم ہوں گے۔ گذشتہ رات سیزن کے تیسرے گرانڈ سلام ومبلڈن اوپن کے پہلے سیمی فائنل میں کروشیا کے مارین سیلچ اور امریکہ کے سیم کیوری مدمقابل تھے جہاں امریکی کھلاڑی نے پہلے سٹ میں کامیابی حاصل کی۔تاہم اس کے بعد 2014 کے یو ایس اوپن چیمپیئن سیلچ نے شاندار کھیل پیش کرتے ہوئے بہترین انداز میں میچ میں واپسی کی اور لگاتار تین سٹس جیت کر میچ میں 6-7، 6-4، 7-6 اور 7-5 سے کامیابی حاصل کی اور پہلی مرتبہ ومبلڈن اوپن کا فائنل کھیلنے کا اعزاز حاصل کر لیا جہاں ان کا مقابلہ 18مرتبہ کے گرانڈ سلام چیمپیئن راجر فیڈرر سے ہو گا۔ دن کے دوسرے سیمی فائنل میں عالمی شہرت یافتہ سوئٹزرلینڈ کے راجر فیڈرر نے بہترین فارم کا سلسلہ جاری رکھا اور چیک جمہوریائی کھلاڑی ٹامس برڈک کو راست سٹوں میں7-6، 7-6 اور 6-4 سے شکست دیکر11ویں مرتبہ ومبلڈن اوپن کا فائنل کھیلنے کا اعزاز حاصل کر لیا۔راجر فیڈرر کا اس سال ومبلڈن اوپن کا سفر انتہائی شاندار رہا ہے اور وہ ابھی تک پورے ٹورنمنٹ میں ایک سٹ بھی نہیں ہارے ہیں۔سات مرتبہ کے ومبلڈن اوپن چیمپیئن کیلئے نئی تاریخ رقم کرنے کا نادر موقع ہے جہاں اتوار کو فائنل جیتنے کی صورت میں وہ آٹھ مرتبہ ومبلڈن اوپن جیتنے والے دنیا کے پہلے کھلاڑی بن جائیں گے۔

فیڈرر کو اس سے قبل بھی دو مرتبہ یہ موقع ملا تھا لیکن دونوں مرتبہ 2014 اور 2015 میں نوواک جوکووچ کے خلاف شکست کے سبب وہ اس سے فائدہ اٹھانے میں ناکام رہے تھے تاہم اس مرتبہ ان کی فارم کو دیکھتے ہوئے امید کی جا سکتی ہے وہ یہ کارنامہ انجام دینے میں کامیاب رہیں گے۔فیڈرر ومبلڈن کا فائنل کھیلنے والے دنیا کے دوسرے معمر ترین کھلاڑی بن چکے ہیں کیونکہ اس سے قبل 1974 میں کین روسل نے 39 سال کی عمر میں فائنل کھیلا تھا جن کو خطابی مقابلے میں جمی کارنر کے خلاف شکست برداشت کرنی پڑی تھی جبکہ فیڈرر آئندہ ماہ اپنی 36 ویں سالگرہ منائیں گے۔فیڈرر نے فائنل کے متعلق عزائم ظاہر کرنے کے علاوہ کہا کہ رواں سیزن وہ اپنے شاندار فام سے خود حیران ہیں ۔ اتوار کو کامیابی کے ذریعہ وہ 2012ء کے بعد یہاں پہلی اور رواں سیزن کی دوسری گرانڈ سلام کامیابی حاصل کریں گے۔ علاوہ ازیں سیلچ اگر فیڈرر کو شکست دینے میں کامیاب ہوتے ہیں تو وہ نہ صرف اپنے کریر کا دوسرا گرانڈ سلام حاصل کریں گے بلکہ 2002ء کے بعد فیڈرر، مرے ، جوکووچ اور نڈال کے علاوہ خطاب حاصل کرنے والے وہ پہلے کھلاڑی ہوں گے کیونکہ 2003ء سے 2016ء تک مذکورہ چار کھلاڑی ہی چمپین بنے ہیں جبکہ 2002ء میں للیٹن ہیوٹ چمپین تھے۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT