Wednesday , August 23 2017
Home / پاکستان / کوئیٹہ کے دواخانہ پر خود کش حملہ ‘ 75 افراد ہلاک 115 زخمی

کوئیٹہ کے دواخانہ پر خود کش حملہ ‘ 75 افراد ہلاک 115 زخمی

تحریک طالبان تنظیم الاحرار نے ذمہ داری قبول کرلی ‘ نواز شریف و راحیل شریف کا دورہ ‘مہلوکین میں وکلا کی اکثریت

کراچی 8 اگسٹ ( سیاست ڈاٹ کام ) ایک طالبان خود کش بمبار نے پاکستان کے بلوچستان صوبہ میںکوئیٹہ کے ایک سرکاری دواخانہ میں خود کش دھماکہ کیا جس کے نتیجہ میں کم از کم 75 افراد ہلاک اور 115 دوسرے زخمی ہوگئے ۔ یہ دھماکہ ایسے وقت کیا گیا جبکہ کچھ لوگ دواخانہ میں ایک میت کے سلسلہ میں جمع تھے ۔ یہاں جمع افراد میں اکثریت وکلا کی بتائی گئی ہے ۔ جاریہ سال پاکستان میں یہ سب سے زیادہ ہلاکت خیز دھماکہ سمجھا جا رہا ہے ۔ یہ دھماکہ ایسے وقت کیا گیا جبکہ سرکاری سیول ہاسپٹل کوئیٹہ میں ایک معروف وکیل بلال انور قاضی کی میت لائی گئی تھی جنہیں دن میں گولی مار دی گئی تھی ۔ قاضی بلوچستان بار اسوسی ایشن کے صدر تھے ۔ تقریبا 200 افراد دواخانہ میں موجود تھے جب یہ بم دھماکہ کیا گیا ۔ دھماکہ کی ایک بھاری آواز سنی گئی جو ایمرجنسی ڈپارٹمنٹ کے قریب سے آئی جہاں قاضی کی نعش پوسٹ مارٹم کیلئے رکھی گئی تھی ۔ دھماکہ کے بعد فائرنگ کا تبادلہ بھی عمل میں آیا ۔

پولیس نے کہا کہ یہ ایک خود کش بم دھماکہ تھا جس میں آٹھ کیلو گرام دھماکو مادہ استعمال کیا گیا تھا ۔ ایک پولیس عہدیدار نے بتایا کہ دھماکہ کے مقام پر کوئی گڑھا نہیں پایا گیا اور ایسا لگتا ہے کہ بمبار نے دھماکو مادے اپنے سینے پر لپیٹ رکھے تھے ۔ بم کو ناکارہ بنانے والے عملہ کے عہدیداروں نے بھی توثیق کی کہ دھماکہ خود کش کارروائی تھا ۔ تحریک طالبان پاکستان کے ایک گروپ جماعت الاحرار نے کے ایک ترجمان نے کہا کہ اس کا گروپ اس حملہ کی ذمہداری قبول کرتا ہے ۔ اس نے کہا کہ پاکستان میں اسلامی نظام لاگو کئے جانے تک ایسے حملوں کا سلسلہ جاری رہے گا ۔ ترجمان احسان اللہ احسان نے میڈیا اداروں کو ایک ای میل روانہ کرتے ہوئے کہا کہ تحریک طالبان پاکستان جماعت الاحرار اس دھماکہ کی ذمہ داری قبول کرتی ہے اور یہ عہد کرتی ہے کہ ایسے حملے جا ری رہیں گے ۔ اس حملہ پر جلد ویڈیو رپورٹ بھی جاری کی جائیگی ۔

حملہ کے فوری بعد وزیر اعظم نواز شریف اور فوجی سربراہ جنرل راحیل شریف بھی یہاں پہونچ گئے اور انہوں نے صورتحال کا جائزہ لینے دواخانہ کا دورہ بھی کیا ۔ ڈاکٹروں اور بچاؤ کارکنوں نے مہلوکین کی تعداد 75 بتائی ہے اور کہا کہ اس میں مزید اضافہ ہوسکتا ہے کیونکہ کچھ زخمیوں کی حالت تشویشناک ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ حملہ میں 115 افراد زخمی ہوئے ہیں۔ بلوچستان کے وزیر داخلہ میر سرفراز بگٹی نے کہا کہ خود کش بمبار نے دواخانہ کے باب الداخلہ پر خود کو دھماکہ سے اڑا لیا کیونکہ وہاں کئی وکلا اور غمزدہ افراد مہلوک قاضی کی نعش حاصل کرنے جمع تھے ۔ انہوں نے کہا کہ یہ ایک منظم اور منصوبہ بند خود کش حملہ تھا جس کا مقصد زیادہ سے زیادہ جانی نقصان کرنا تھا ۔ بگٹی نے بتایا کہ دھماکہ اس قدر طاقتور تھا کہ دواخانہ کے اطراف کی کئی گاڑیاں اور بائیکس بھی تباہ ہوگئیں۔ مہلوکین میںایک مقامی ٹی وی چینل کا کیمرہ مین بھی شامل ہے جبکہ دوسرے چینل کا کیمرہ مین اور رپورٹر اس میں زخمی ہوگئے ۔ بلوچستان بار اسوسی ایشن کے بیرسٹر علی ظفر نے بتایا کہ مہلوکین اور زخمیوں میں اکثریت وکلا کی ہے ۔

 

کوئیٹہ ہاسپٹل حملہ کی مذمت
بان کی مون کا بیان
اقوام متحدہ 8 اگسٹ ( سیاست ڈاٹ کام ) اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل بان کی مون نے آج پاکستان کے کوئیٹہ شہر میں ہوئے خود کش بم دھماکہ کی مذمت کی ہے ۔ انہوں نے اپنے ترجمان کے ذریعہ جاری ایک بیان میں کہا کہ سیول ہاسپٹل میں غمزدہ افراد کو نشانہ بناکر دھماکہ انتہائی افسوسناک عمل ہے ۔ انہوں نے دہشت گردانہ بمباری کی مذمت کی اور حکومت سے کہا کہ وہ اپنی آبادی کا تحفظ کرے اور ایسے حملے کرنے والوں کو کیفر کردار تک پہونچائے ۔ انہوں نے غمزدہ افراد خاندان سے اظہار ہمدردی کیا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT