Tuesday , August 22 2017
Home / Top Stories / کولکتہ میں جلوس ،کشمیر کی آزادی کا مطالبہ ،یاترا ملتوی

کولکتہ میں جلوس ،کشمیر کی آزادی کا مطالبہ ،یاترا ملتوی

کانگریس کا اظہار تشویش ، شیوسینا کا صدر راج کے نفاذ کا مطالبہ ، عمر عبداللہ ۔راجناتھ ملاقات
کولکتہ ۔ /14 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) مسلح افواج خصوصی اختیارات قانون کی کشمیر میں تنسیخ اور کشمیر کی آزادی کا مطالبہ کرتے ہوئے کولکتہ میں آج جلوس کے دوران نعرہ بازی کی گئی ۔ جلوس کا اہتمام سی پی آئی ایم ایل سے ملحق طلباء اسوسی ایشن نے کیا تھا ۔ فوج کے ساتھ جھڑپوں میں کشمیری شہریوں کی ہلاکت کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے فوج کے خصوصی اختیارات قانون کی وادی کشمیر میں منسوخی کا مطالبہ بھی کیا گیا ۔ جموں سے موصولہ اطلاع کے بموجب امرناتھ یاترا آج اندرون ایک ہفتہ دوسری مرتبہ معطل کردی گئی کیونکہ وادی کشمیر میں صیانتی صورتحال احتجاجی مظاہروں کی وجہ سے ناخوشگوار ہے ۔ دریں اثناء جموں و کشمیر کانگریس نے وادی کشمیر میں صیانتی صورتحال پر اظہار تشویش کیا ہے اور امرناتھ یاتریوں کے تحفظ کا مطالبہ کیا ہے ۔ علاوہ ازیں وادی میں برسرکار کشمیری پنڈتوں کے طبقہ سے تعلق رکھنے والے نوجوانوں کے تحفظ کا مطالبہ بھی کیا ۔ دریں اثناء مرکز کی مخلوط حکومت میں شامل شیوسینا نے جموں و کشمیر میں گورنر راج نافذ کرنے کا مطالبہ کیا ۔ کیونکہ ریاست کی صیانتی صورتحال مکمل طور پر ناکام ہوچکی ہے ۔ سابق چیف منسٹر جموں و کشمیر عمر عبداللہ نے آج مرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ سے ملاقات کرکے ریاست کی نظم و قانون کی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا ۔ ملاقات 30 منٹ جاری رہی ۔

TOPPOPULARRECENT