Thursday , September 21 2017

کوّا

کوّے ہیں سب دیکھے بھالے
چونچ بھی کالی ، پَر بھی کالے
کالی کالی وردی سب کی
اچھی خاصی ان کی ڈھب کی
کالی سینا کے ہیں سپاہی
ایک سی صورت ایک سپاہی
لیکن ہے آواز بُری سی
کان میں لگتی ہے چُھری سی
یوں تو ہے کوا حرص کا بندہ
کچھ بھی نہ چھوڑے پاک اور گندہ
اچھی ہے پر اُس کی عادت
بھائیوں کی کرتا ہے دعوت
کوئی ذرا سی چیزجو پالے
کھائے نہ جب تک سب کو بُلالے
کھانے دانے پر ہے گرتا
پیٹ کے کارن گھر گھر پھرتا
دیکھ لو ! وہ دیوار پہ بیٹھا
غلے کی ہے مار پہ بیٹھا
کیوں کر باندھوں اُس پہ نشانہ
بے صبرا ، چوکنا ، سیانا
کائیں کائیں پنکھ پسارے
کرتا ہے یہ بھوک کے مارے
اُس کو بس آتا ہے اُچھلنا
جانے کیا دو پاؤں سے چلنا
اُچھلا، کُودا ، لپکا، سُکڑا
ہاتھ میں تھا بچے کے ٹکڑا
آنکھ بچاکر جھٹ لے بھاگا
واہ رے تیری پھرتی کا گا!
ہا ہا کرتے رہ گئے گھر کے
یہ جا وہ جا چونچ میں بھر کے

TOPPOPULARRECENT