Friday , August 18 2017
Home / شہر کی خبریں / کوہ نور کے متعلق مرکز کے موقف کی شدید مذمت

کوہ نور کے متعلق مرکز کے موقف کی شدید مذمت

قوم سے معذرت خواہی کا مطالبہ ، سی پی آئی قائد نارائنا کا بیان
حیدرآباد ۔ 20 ۔ اپریل : ( این ایس ایس ) : سی پی آئی قومی سکریٹری ڈاکٹر کے نارائنا نے کوہ نور ہیرے کو ہندوستان واپس لانے میں بی جے پی مرکزی حکومت کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا ۔ ایک صحافتی اعلامیہ میں ڈاکٹر کے نارائنا نے کہا کہ ہندوستان میں رہنے والے اور بیرون ملک ہندوستانی شہری مرکزی وزارت تہذیبی امور کے وکلاء کے اس اعتراض پر حیرت زدہ ہیں کہ کوہ نور ہیرے کو برطانوی حکمرانوں نے نہیں لوٹا بلکہ اس وقت کے راجہ رنجیت سنگھ نے ایسٹ انڈیا کمپنی کو بطور تحفہ کوہ نور ہیرے کو دیا تھا ۔ سی پی آئی نے مرکزی حکومت خاص کر وزیر اعظم مودی سے خواہش کی ہے کہ مرکزی وزارت تہذیبی امور کے وکلاء کی جانب سے قومی اہمیت کے حامل اس قدر اہم مقصد پر ان ( وزیراعظم ) کی بغیر اجازت اس طرح غیر ذمہ دارانہ بیان سپریم کورٹ میں کس طرح دیا ؟ آیا وزیر اعظم مودی نے خود اپنے وکلاء کو اس طرح کا بیان دینے کے احکام جاری کئے تھے تاکہ ملک کے عوام کو گمراہ کیا جائے ۔ مودی کے دورہ لندن کا ذکر کرتے ہوئے سی پی آئی قائد نے کہا کہ موجودہ وزیر اعظم برطانیہ کوہ نور ہیرے کا ذکر کرتے ہوئے مودی سے کہا تھا کہ اگر کوہ نور ہیرے کو ہندوستان کو واپس کردیا جائے تب برطانیہ خالی ہوجائے گا اور اس پر مودی کی خاموشی اس بات کا ثبوت ہے کہ مودی نے کوہ نور واپسی معاملہ پر وزیر اعظم برطانیہ سے مفاہمت کرلی ہے ۔ سی پی آئی نے مودی حکومت سے خواہش کی ہے کہ وہ کوہ نور ہیرے کو ملک کو واپس لانے کے لیے تمام تر اقدامات کو بروئے کار لائیں اور کوہ نور ہیرے کے تئیں کی گئی فاش غلط بیانی پر قوم سے معذرت خواہی کریں ۔۔

TOPPOPULARRECENT