Monday , August 21 2017
Home / اضلاع کی خبریں / کپاس کے کاشتکاروں کی مدد میں حکومت ناکام

کپاس کے کاشتکاروں کی مدد میں حکومت ناکام

کریم نگر /17 نومبر ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز ) کپاس کے کسانوں کی مدد میں مرکزی و ریاستی حکومتیں بری طرح ناکام ہوچکی ہیں ۔ سی پی آئی ریاستی سکریٹری چاڈا وینکٹ ریڈی نے یہ بات کہی ۔ وہ کریم نگر بدم یلاریڈی بھون میں پریس کانفرنس سے خطاب کر رہے تھے ۔ تلنگانہ میں کپاس کی خریدی میں ٹی آر ایس حکومت اور مرکزی حکومت کی ذمہ داری اور بی جے پی قائدین ریاستی حکومت کی ذمہ داری کہتے ہوئے کسانوں کو مشکلات کے دائرہ میں لاکھڑا کردیا ہے ۔ فارم ہاوز میں آرام سے رہ کر حکومت چلا رہے کے سی آر کو کسانوں کی خودکشی اور بے روزگاروں کی پریشانی سے کوئی تعلق نہیں ہے ۔ محض جھوٹ کی بنیاد پر حکومت چل رہی ہے ۔ کے سی آر نے انتخابات سے قبل جو وعدے کئے تھے ان پر دس فیصد بھی عمل آوری نہیں کی گئی ۔ ریاست میں محکمہ مال اور محکمہ پولیس بدعنوانیوں کے گڑھ بن چکے ہیں ۔ قانون پر عمل آوری صرف کسانوں کیلئے کی جارہی ہے ۔ امیروں پر قانون کا کسی بھی طرح سے عمل دخل نہیں ہے ۔ کسانوں کی فوری مدد کیلئے مرکئ و ریاستی حکومت کی جانب سے فوری اقدامات کی ضرورت ہے ۔ آئین میں سبھی کا خیال رکھنے اور ہر ہندوستانی کی حفاظت کا تیقن دیا گیا ہے ۔ مرکز آج کثرت میں وحدت کی قائل نہیں ہے ۔ بلکہ کثرت میں واحد ایک کی حکومت ہو اس طرح حکومت کر رہی ہے ۔ ملک سے باہر وزیر اعظم مودی بڑے فخر سے کہتے ہیں کہ ہندوستان ہمہ جہتی ہمہ مقصدی ، ہمہ تہذیبی ملک ہے ۔ ہندو ، مسلم ، سکھ ، عیسائی سبھی قبائیلی مل جل کر رہتے ہیں ۔ ہمارا ملک قومی یکجہتی کا مثالی نمونہ ہے ۔ برطانیہ جاکر کہتے ہیں کہ فرقہ پرستی کے واقعات کو روکنا ہوگا ۔ مذہبی بھید بھاؤ نہ ہونا چاہئے لیکن ملک میں انسان کو کھانے پینے کی بھی آزادی نہیں ہے کس طرح کی آمادی ہے ۔ مودی حکومت میں یکم ڈسمبر سے 6 تک قومی یکجہتی کیلئے سی پی آئی جلسے جلوس منعقد کرے گی ۔ ورنگل کے ضمنی چناؤ میں 18 تاریخ کو بائیں بازو کے امیدوار کی تائید میں بڑے پیمانہ پر جلسہ منعقد کیا جائے گا ۔

TOPPOPULARRECENT