Monday , September 25 2017
Home / شہر کی خبریں / کیا مودی کی اہلیہ جشودا بین کو انصاف نہیں ملنا چاہئے

کیا مودی کی اہلیہ جشودا بین کو انصاف نہیں ملنا چاہئے

طلاق ثلاثہ مسئلہ پر سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد سوشیل میڈیا میں بحث کا آغاز

حیدرآباد۔22اگسٹ (سیاست نیوز) طلاق ثلاثہ مسئلہ پر سپریم کورٹ کے فیصلہ کے فوری بعد سوشل میڈیا پر وزیر اعظم نریند ر مودی کی اہلیہ جشودا بین مودی کی تصویر کے ساتھ ایک پوسٹ گشت کرنے لگی۔ طلاق ثلاثہ مسئلہ پر سپریم کورٹ کی 6ماہ کی پابندی اور پارلیمنٹ کو قانون سازی کی ہدایت کا فیصلہ صادر ہوتے ہی اس کی تائید و مخالفت پر تبصرے ہونے لگے ہیں اور کہا جا رہا ہے کہ صرف ایک طبقہ سے تعلق رکھنے والی خواتین کو انصاف ملا جبکہ ملک کے وزیر اعظم نریندر مودی کی اہلیہ اب بھی انصاف کی جدوجہد کر رہی ہیں اور انہیں انصاف نہیں مل سکا ہے۔ سپریم کورٹ کے فیصلہ پر ردعمل کے دوران وزیر اعظم کی اہلیہ کیلئے انصاف کی آواز اٹھائی جانے لگی ہے جو اپنی شادی شدہ زندگی کے باوجود مودی کے ساتھ نہیں رہ سکتیں اور انہیں بیوی کے حقوق بھی حاصل نہیں ہیں اور نہ وہ اپنے شوہر سے علحدہ ہو پائی ہیں۔ طلاق ثلاثہ پر سپریم کورٹ کے فیصلہ نے ایک مرتبہ پھر نریندر مودی کی اہلیہ کی تنہاء زندگی کو موضوع بحث بنادیا ہے کیونکہ لوگ وزیر اعظم کی بیوی کی بے بسی کو دور کرنا ضروری تصور کرتے ہیں اور چاہتے ہیں کہ ہندستان میں مسلم خواتین کو انصاف کے ساتھ وزیر اعظم کی اہلیہ کو بھی انصاف ملے اور وہ بھی اپنے شوہر کے ساتھ یا شوہر سے علحدگی اختیار کرکے آزادانہ زندگی گذار سکیں ۔واضح رہے کہ مودی کی اہلیہ کئی مرتبہ میڈیا و سوشل میڈیا پر بحث کا موضوع رہی ہیں ۔ مودی کے وزیر اعظم بننے سے قبل مسز جشودا بین مودی بحیثیت ٹیچر منظر عام آئی تھی بعد ازاں انکے وزیر اعظم بننے کے بعد جشودا بین مودی کی سیکیوریٹی مسئلہ کے باعث و منظر عام پر آئی ۔ اس کے علاوہ انہیں پاسپورٹ بنانے میں دشواری اور قانون حق آگہی کے تحت درخواست کے ادخال کے ذریعہ وہ ذرائع ابلاغ پر کچھ وقت کیلئے چھائی رہیں لیکن اب طلاق ثلاثہ مسئلہ پر سپریم کورٹ کا فیصلہ آیا تو جشودا بین اور نریندر مودی ایک مرتبہ پھر شادی شدہ زندگی اور ساتھ نہ رہنے کے علاوہ بیوی کے حقوق کی عدم ادائیگی کے مسئلہ پر سوشل میڈیا پر چھائی ہوئی ہیں۔

TOPPOPULARRECENT