Tuesday , August 22 2017
Home / Top Stories / کیرالا بھون پر دہلی پولیس کے دھاوے پر سیاسی تنازعہ

کیرالا بھون پر دہلی پولیس کے دھاوے پر سیاسی تنازعہ

گائے کا گوشت سربراہ کرنے کیرالا حکومت کی تردید،پکوانوں کی فہرست سے بھینس کا گوشت بھی خارج
نئی دہلی 27 اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام) حکومت کیرالا نے آج کہاکہ کیرالا ہاؤز پر دہلی میں بڑا گوشت مہمانوں کو سربراہ نہیں کیا جارہا ہے۔ دہلی پولیس سے ایک شکایت کی گئی تھی کہ بعض کارکن سرکاری زیرانتظام گیسٹ ہاؤز میں غیر مجاز طور پر داخل ہوگئے ہیں۔ کیرالا بھون کے پکوانوں کی فہرست سے بھینس کا گوشت بھی حذف کردیا گیا تھا۔ دہلی کے کیرالا ہاؤز میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے چیف سکریٹری کیرالا جی جی ٹامسن نے اِن دعوؤں کو مسترد کردیا کہ یہاں کی کینٹن میں بڑا گوشت سربراہ کیا جارہا ہے۔ اُنھوں نے کہاکہ میں اِس کی بھرپور تردید کرتا ہوں۔ ہم نے گائے کا گوشت کبھی بھی سربراہ نہیں کیا۔ صرف بھینس کا گوشت سربراہ کیا جاتا تھا لیکن اِسے ’’بیف‘‘ قرار دے دیا گیا۔ گائے کا گوشت کبھی بھی سربراہ نہیں کیا گیا۔ اُنھوں نے کہاکہ دہلی پولیس کو کیرالا بھون میں کارکنوں کے زبردستی داخلہ کی شکایت درج کروادی گئی ہے۔ اُنھوں نے رزیڈنٹ کمشنر سے بھی اجازت نہیں لی تھی۔ کل ہم سے کہا گیا تھا کہ چند کارکن رزیڈنٹ کمشنر کی اجازت کے بغیر کیرالا ہاؤز میں داخل ہوگئے ہیں۔

ہم نے اس پر اعتراض کیا اور ڈی سی پی (دہلی پولیس) سے شکایت کی۔ چیف سکریٹری نے یہ بھی کہاکہ پولیس کو کل بغیر اجازت داخل نہیں ہونا چاہئے تھا۔ تاہم کل کے واقعات کے پیش نظر کیرالا ہاؤز میں عارضی طور پر اپنے پکوانوں کی فہرست سے بھینس کا گوشت بھی حذف کردیا ہے۔ سرکاری زیرانتظام کینٹن میں اِس کی وضاحت کی۔ دریں اثناء سی پی آئی (ایم) کے رکن پارلیمنٹ کے سمپت نے جو کیرالا کے لوک سبھا حلقہ اٹنگل کی نمائندگی کرتے ہیں، کہاکہ یہ واقعہ ریاستی حکومت کے لئے ’’تحقیر‘‘ ہے۔ اُنھوں نے کہاکہ بحیثیت رکن پارلیمنٹ مجھے محسوس ہورہا ہے کہ ریاستی حکومت کی تحقیر کی گئی ہے۔ یہ (کیرالا ہاؤز) حکومت کیرالا کی جائیداد ہے۔ جیسے کہ ایک بیرونی ملک اپنا سفارت خانہ ہندوستان میں قائم کرتا ہے۔ اُنھوں نے کہاکہ وہ حکومت ہند کے اختیارات کو چیلنج نہیں کررہے ہیں لیکن جو کچھ ہوا ہے انتہائی قابل مذمت ہے۔ اُنھوں نے شبہ ظاہر کیاکہ اِس کے پس پردہ سیاسی مقاصد ہوسکتے ہیں۔ اُنھوں نے حکومت کیرالا سے خواہش کی کہ بھینس کا گوشت پکوانوں کی فہرست میں دوبارہ شامل کیا جائے۔ دریں اثناء کیرالا ہاؤز کی کینٹن کو اکثر آنے والوں نے اظہار مایوسی کیاکہ بھینس کے گوشت کا پکوان موجود نہیں ہے۔ ایک پی سی آر کال کے ذریعہ شکایت کی گئی تھی کہ بیف کا سالن کیرالا ہاؤز میں سربراہ کیا جارہا ہے۔ چنانچہ کل پولیس سرگرم ہوگئی۔ ایک ٹیم ناخوشگوار واقعہ کو ٹالنے کے لئے روانہ کی گئی۔ یہ ٹیلیفون کال پولیس کنٹرول روم کو شام 4.15 بجے وصول ہوئی تھی اور ٹیلی فون کرنے والے نے خود کو ایک غیر معروف دائیں بازو گروپ کا رکن ظاہر کیا تھا۔ اُس نے پولیس کو اطلاع دی کہ کیرالا ہاؤز میں بیف سربراہ کیا جارہا ہے۔

ملازمین پولیس نے کوئی موقع ضائع کئے بغیر اِس اطلاع پر فوری اِس کی اطلاع پارلیمنٹ اسٹریٹ پولیس اسٹیشن کو دے دی جہاں سے ایک ٹیم کیرالا بھون روانہ کی گئی تاکہ امکانی تشدد کا انسداد کیا جاسکے۔ دریں اثناء کمشنر دہلی پولیس بی وی ایس بسی نے آج چیف منسٹر دہلی اروند کجریوال کے اِس ادعا کو مسترد کردیا کہ پولیس نے ایک شکایت پر کہ کیرالا ہاؤز کی کینٹین میں بیف سربراہ کیا جارہا ہے، کارروائی کرتے ہوئے کیرالا ہاؤز کی کینٹن پر دھاوا کیا۔ اُنھوں نے ادعا کیاکہ یہ صرف ایک انسدادی اقدام تھا۔ دریں اثناء اِس واقعہ پر ایک سیاسی تنازعہ کھڑا ہوگیا ہے۔ مودی حکومت کو تنقید کا نشانہ بنانے کے لئے اِس واقعہ کو استعمال کرتے ہوئے عام آدمی پارٹی کے سربراہ چیف منسٹر دہلی اروند کجریوال نے کہاکہ پولیس کی یہ کارروائی ’’وفاقی ڈھانچہ‘‘ پر ایک ضرب ہے۔ جبکہ بی جے پی نے پولیس کارروائی کو جائز قرار دیتے ہوئے کہاکہ پولیس صرف شکایت کی بنیاد پر تحقیقات کررہی تھی اور یہ ملکی قوانین کے عین مطابق ہے۔ چیف منسٹر کیرالا وومن چانڈی پر مسئلہ کو سیاسی رنگ دینے کا الزام عائد کرتے ہوئے بی جے پی نے کہاکہ دہلی کی ریسٹورنٹ میں بیف کی سربراہی غیر قانونی ہے۔ جبکہ کیرالا ہاؤز نے اس الزام کی تردید کردی ہے۔ وزیرداخلہ کیرالا رمیش چنی تھالا نے کہاکہ یہ واقعہ ریاست کے اختیارات میں دخل اندازی کے مترادف ہے۔

TOPPOPULARRECENT