Monday , August 21 2017
Home / شہر کی خبریں / کے چندر شیکھر راؤ ، ڈپٹی چیف منسٹرس اور وزراء کو غلام سمجھتے ہیں

کے چندر شیکھر راؤ ، ڈپٹی چیف منسٹرس اور وزراء کو غلام سمجھتے ہیں

ورنگل ضمنی انتخاب حکومت تلنگانہ کے لیے ریفرنڈم ثابت ہوگا ، ایس جے پال ریڈی
حیدرآباد ۔ 3 ۔ نومبر : ( سیاست نیوز ) : کانگریس کے سینئیر قائد سابق مرکزی وزیر مسٹر ایس جئے پال ریڈی نے کہا کہ چیف منسٹر تلنگانہ مسٹر کے چندر شیکھر راؤ ڈپٹی چیف منسٹرس اور وزراء کو غلام سمجھتے ہیں ۔ ورنگل لوک سبھا کا ضمنی انتخاب حکومت تلنگانہ کے لیے ریفرنڈم ثابت ہوگا ۔ 12 فیصد مسلم تحفظات پر دھوکہ دیا جارہا ہے ۔ آلیر میں 5 مسلمانوں کا انکاونٹر کردیا گیا ۔ سماج کے تمام طبقات حکومت کے خلاف ووٹ دیں ۔ کانگریس کو کامیاب بناتے ہوئے گھمنڈ و تکبر کا شکار ہونے والے چیف منسٹر تلنگانہ کو سبق سکھائیں ۔ آج گاندھی بھون میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مسٹر ایس جئے پال ریڈی نے کہا کہ ورنگل لوک سبھا کے ضمنی انتخاب میں ٹی آر ایس کی شکست سے ٹی آر ایس اقتدار سے بیدخل نہیں ہوگی اور نہ ہی کے سی آر چیف منسٹر کے عہدے سے برطرف کئے جائیں گے ۔ مگر باقی ساڑھے تین سال تک حکومت سنبھل کر کام کرے گی اور عوام سے کئے گئے وعدوں پر عمل کرے گی ۔ ورنگل کے ضمنی انتخاب میں اصل مقابلہ کانگریس اور ٹی آر ایس کے درمیان ہے ۔ عوام کی ذمہ داری ہے کہ وہ سوچ سمجھ کر فیصلہ کریں ۔ ٹی آر ایس نے 2014 کے اپنے انتخابی منشور اور انتخابی مہم کے دوران عوام سے جو بھی وعدے کئے تھے ان 17 ماہ کے دوران آیا ان وعدوں پر کوئی عمل آوری ہوئی اس پر غور کریں ۔ اگر ہوئی ہے تو ٹی آر ایس کو ووٹ دیں نہیں ہوئی تو کانگریس کو ووٹ دیں ۔ ٹی آر ایس کے انتخابی منشور میں مسلمانوں کے ساتھ ساتھ قبائلی طبقہ کو 12 فیصد تحفظات فراہم کرنے کا وعدہ کیا گیا ۔ مسلمان اور قبائلی طبقہ فیصلہ کریں کیا انہیں تحفظات ملے ہیں بیروزگار نوجوانوں کو روزگار فراہم کرنے اور کنٹراکٹ پر خدمات انجام دینے والے ملازمین کی خدمات کو مستقل کرنے کا وعدہ کیا ۔ دلت کو چیف منسٹر بنانے کا وعدہ کرنے والے کے سی آر خود چیف منسٹر بن گئے تمام دلت افراد کو تین ایکڑ اراضی فراہم کرنے کا وعدہ کیا گیا ۔ ڈبل بیڈ روم فلیٹس کا خواب دکھایا گیا ۔ نصف فیصد آبادی رکھنے والی خواتین کو تلنگانہ کی کابینہ میں نظر انداز کردیا گیا ۔ آلیر میں انکاونٹر کے ذریعہ 5 زیر دریافت مسلم قیدیوں کا انکاونٹر کردیا وہ صحیح ہیں یا غلط اس کا فیصلہ عدالت کرتی مگر حکومت نے فیصلہ کردیا ہے ۔ ورنگل میں انکاونٹر کردیا گیا کے سی آر نے جھوٹے وعدوں کے ذریعہ اقتدار حاصل کیا ۔ ان پر عمل کرنے میں ناکام ہونے کی وجہ سے عوامی اعتماد سے محروم ہوگئے ۔ جمہوریت میں انانیت ، گھمنڈ اور تکبر کو عوام برداشت نہیں کرتے تاریخ گواہ ہے ۔ عوام نے غرور و تکبر کے خلاف ہمیشہ ووٹ دیا ہے ۔ تلنگانہ کے عوام کے پاس حکومت کو جھنجھوڑنے کا ورنگل لوک سبھا ضمنی انتخاب کی صورت میں بہترین موقع ہے اس کو ضائع نہ کریں کانگریس کے امیدوار مسٹر راجیا کو بھاری اکثریت سے کامیاب بناتے ہوئے صدر کانگریس مسز سونیا گاندھی کو تحفہ پیش کریں تلنگانہ تحریک کے دوران پارلیمنٹ میں راجیا کی جدوجہد ناقابل فراموش ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT