Thursday , August 17 2017
Home / Top Stories / گاؤکشی امتناع پر تمام ریاستوںکا اتفاق ہونا ضروری

گاؤکشی امتناع پر تمام ریاستوںکا اتفاق ہونا ضروری

New Delhi: Union Home Minister Rajnath Singh after a Cabinet meeting at South Block in New Delhi on Thursday. PTI Photo by Subhav Shukla(PTI10_27_2016_000056B)

مغل دور میں بھی گائے کا احترام اور تحفظ کیا جاتا تھا :راجناتھ سنگھ
نئی دہلی ۔ /6 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ نے آج کہا کہ گاؤں کشی پر امتناع عائد کرنے کے مسئلہ پر تمام ریاستوں کو اعتماد میں لینے کی ضرورت ہے ۔ انہوں نے کہا کہ مغل حکمراں کے دور میں بھی گائے کا تحفظ کیا جاتا تھا اور اس کا احترام بھی ہوتا تھا ۔ یہاں ایک تقریب کے دوران خطاب کرتے ہوئے راجناتھ سنگھ نے کہا کہ ویدیک دور سے ہی گاؤکشی اور بیف پر پابندی تھی ۔ مغل دور حکومت کے دوران بھی گائے کا ذبیحہ ممنوع تھا ۔ بہادر شاہ ظفر ، اکبر اور جہانری کے دور میں بھی گاؤکشی پر پابندی تھی اور یہ بات بابر نامہ میں تحریر کی گئی ہے اور لکھا گیا ہے کہ جب تک گاؤکشی پر آپ پابندی عائد نہیں کریں گے اس وقت تک ہندوستان پر کوئی بھی حکومت نہیں کرسکتا ۔ وزیر داخلہ نے کہا کہ اس معاملہ میں تمام ریاستوں کو اعتماد میں لینے کی ضرورت ہے ۔ اگرچہ کے کئی ریاستوں میں اس مسئلہ پر بیداری پیدا ہونے کے بعد گاؤکشی پر امتناع عائد کیا گیا ہے ۔ جہاں تک گائے کا تعلق ہے یہ نہ صرف ثقافتی مسئلہ ہے بلکہ عقیدہ کا بھی مسئلہ ہے ۔ عقیدہ کے مسئلہ کے علاوہ یہ ملک کے معاشی ، تاریخی اور سائنسی نقطہ نظر سے بھی اہمیت رکھتا ہے ۔ راجناتھ سنگھ نے کہا کہ این ڈی اے حکومت گاؤکشی پر مکمل پابندی لگانے کیلئے کوشش کررہی ہے  اور بنگلہ دیش سے مویشیوں کی اسمگلنگ کو روکنے کے اقدامات کررہی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT