Sunday , October 22 2017
Home / Top Stories / گجرات میںپسماندہ طبقات کو خوفزدہ اور کچلا جا رہا ہے : راہول

گجرات میںپسماندہ طبقات کو خوفزدہ اور کچلا جا رہا ہے : راہول

کانگریس نائب صدر کا میڈیا سے بیان۔ وحشیانہ مارپیٹ کا شکار دلت نوجوانوں کے افراد خاندان سے ملاقات ۔ راجکوٹ میں دواخانہ کا دورہ
موٹا سمادھیالہ / راجکوٹ ( گجرات ) 21 جولائی ( سیاست ڈاٹ کام ) گجرات میں دلتوں کو مارپیٹ کے مسئلہ پر بی جے پی اور آر ایس ایس کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے راہول گاندھی نے آج کہا کہ گجرات میں پسماندہ طبقات کو خوفزدہ کیا جا رہا ہے اور انہیں کچلا جا رہا ہے ۔ یہ وہی ریاست ہے جسے وزیر اعظم نے ایک ماڈل ریاست قرار دیا تھا ۔ کانگریس کے نائب صدر ایک دن کے دورہ پر گجرات آئے ہوئے ہیں اور یہاں انہوں نے ان چار نوجوانوں کے افراد خاندان سے ملاقات کی جنہیں ہندو تنظیموں سے وابستہ نوجوانوں نے ایک مردہ گائے کی چمڑی نکالنے کی پاداش میں غیر انسانی انداز میں مارپیٹ کی تھی ۔ راہول گاندھی نے راج کوٹ میں اس دواخانہ کا دورہ بھی کیا جہاں متاثرہ نوجوانوں کو شریک کیا گیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ سماج کے پسماندہ طبقات کو گجرات میں خوفزدہ کیا جا رہا ہے اور انہیں کچلا جا رہا ہے ۔ انہوں نے اس عزم کا اظہار کیا کہ وہ نہ صرف گجرات میں بلکہ سارے ملک میں آر ایس ایس کے نظریات کو شکست دینگے ۔ راہول نے بتایا کہ جن بچوں کے والدین سے انہوں نے ملاقات کی تھی انہوں نے بتایا کہ 11 جولائی کو ان کے بچوں کو 40 افراد کے ہجوم نے مار پیٹ کی تھی ۔

راہول نے راجکوٹ ائرپورٹ پر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ نریندر مودی گجرات ماڈل کی بات کرتے ہیں لیکن اسی ریاست میں جس کسی نے ان کے نظریات کے خلاف آواز اٹھائی ‘ جو کوئی تعلیم کی بات کرتا ہے ‘ جو کوئی بڑے کارپوریٹس کے خلاف اٹھ کھڑا ہوتا ہے اسے دبایا اور کچلا جا رہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ یہ سب کیا ہے ؟ ۔ یہ در اصل دو نظریات کی لڑائی ہے ۔ ایک طرف گاندھی جی ہیں سردار پٹیل ہیں ‘ پنڈت نہرو ہیں ‘ بابا صاحب امبیڈکر ہیں تو دوسری طرف آر ایس ایس ہے ‘ گولکوالکر ہے اور نریندر مودی ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ وہ متاثرین سے کہہ چکے ہیں کہ وہ اس نظریہ کو نہ صرف گجرات میں بلکہ سارے ہندوستان میں شکست دینگے ۔ روہت ویمولہ خود کشی مسئلہ کو اٹھاتے ہوئے راہول گاندھی نے حیدرآباد یونیورسٹی کیمپس واقعہ کو حال ہی میں گجرات میں دلتوں کے احتجاج کے دوران نوجوانوں کی خود کشی کی کوشش سے مربوط کیا ۔ انہوں نے کہا کہ کچھ دن قبل وہ حیدرآباد گئے تھے ۔ وہاں ایک نوجوان نے خود کشی کی تھی ۔ دہلی میں حکومت نے اسی خاندان پر حملے ہوئے جو اپنے حقوق کیلئے مطالبہ کر رہا تھا ۔ آج وہ گجرات کے ایک دواخانہ کو گئے ۔ جہاں ریاست کے مختلف علاقوں سے تعلق رکھنے والے گیارہ افراد زیر علاج ہیں جنہوں نے حود کشی کی کوشش کی تھی ۔

اس کا مطلب کیا ہے ۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ سارے گجرات میں پسماندہ افراد کو ‘ چاہے وہ کسی بھی ذات سے تعلق رکھتے ہوں ‘ جن کے پاس پیسہ نہ ہو انہیں دبایا اور کچلا جا رہا ہے ۔ قبل ازیں متاثرین کے افراد خاندان نے بتایا کہ راہول گاندھی نے ہندوستان میں ایسے واقعات پیش آنے پر شرمندگی کا اظہار کیا ہے ۔ راجکوٹ کے دواخانہ میں راہول گاندھی نے ان افراد سے ملاقات کی جنہوں نے احتجاج کے دوران خود کشی کی کوشش کی تھی ۔ قبل ازیں راہول گاندھی نے موٹا سمادھیالیہ گاوں قریب اونا ٹاؤن کا دورہ کیا ۔ انہوں نے متاثرین کے خاندانوں سے کہا کہ اہیں شرم آتی ہے کہ ایسے وقاعات پیش آ رہے ہیں۔ انہوں نے متاثرین کو انصاف دلانے میں ہر ممکنہ مدد کا تیقن دیا ۔ راہول گاندھی کے ساتھ کانگریس قائدین کماری شیلجا اور گرو داس کامت بھی تھے ۔ انہوں نے متاثرہ خاندان کے ارکان کے ساتھ چائے نوشی بھی کی ۔ متاثرین کے افراد خاندان نے بتایا کہ راہول نے اس واقعہ کی تفصیلات کی سماعت کی اور انہیں ان کا شخصی فون نمبر حوالے کرتے ہوئے کسی بھی ہنگامی صورتحال میں انہیں فون کرنے کی خواہش کی ۔ انہوں نے گاوں میں پیش آنے والے مسائل اور امتیازی سلوک کے تعلق سے بھی ان افراد سے معلومات حاصل کیں۔ گاوں والوں نے بتایا کہ یہاں ذات پات کی بنیاد پر امتیازی سلوک ہنوز جاری ہے ۔

TOPPOPULARRECENT