Monday , August 21 2017
Home / ہندوستان / گجرات میں ایک پاکستانی لڑکا محروس گزشتہ ایک سال سے وطن واپسی کا منتظر

گجرات میں ایک پاکستانی لڑکا محروس گزشتہ ایک سال سے وطن واپسی کا منتظر

احمد آباد۔/8ستمبر، ( سیاست ڈاٹ کام ) پاکستانی ماہی گیروں کے ایک گروپ کے ساتھ محروس ایک کمسن لڑکا گزشتہ 18ماہ سے اپنے مکان واپس جانے کے انتظار میں ہے کیونکہ سرکاری طور پر اس کی شہریت کی تصدیق نہیں ہوسکی۔ گوکہ اس کے والد ماہ جولائی میں اپنے وطن پاکستان واپس چلے گئے۔ پولیس سپرنٹنڈنٹ ضلع دیوبھومی دوارکا مسٹر جگدیش پٹیل نے بتایا کہ جمن تھیروکا 13سالہ لڑکا غلام حسین تھیرو گذشتہ سال مارچ سے جونیل آبزرویشن ہوم جام نگر میں محروس ہے لیکن دونوں ممالک کی جانب سے ویفریفکیشن ( تصدیق ) نہ ہونے پر اس لڑکے کو رہا نہیں کیا گیا۔ ایک پولیس عہدیدار نے بتایاکہ غلام حسین کو88مچھیروں بشمول اس کے والد جمن کے ساتھ گزشتہ سال ہندوستانی آبی حدود میں داخل ہونے پر حراست میں لے لیا گیا تھا اور گزشتہ سال جئے پور میں دونوں ممالک کے وزارت خارجہ کے عہدیداروں کی جانب سے شہریت کی تصدیق کے بعد تمام محروسین بشمول لڑکے کے والد کو رہا کردیا گیا اور وہ واگھا سرحد کے راستہ پاکستان واپس ہوگئے لیکن بعض ناگزیر وجوہات کی بناء کمسن غلام حسین کی شناخت نہیں کی جاسکی جس کے باعث وہ جام نگر کے آبزرویشن ہوم میں قید و بند کی زندگی گذارنے پر مجبور ہے۔ واضح رہے کہ ایک 23سالہ ہندوستانی لڑکی گیتا جو کہ گونگی اور بہری ہے  اور 13سال قبل غلطی سے سرحد پار کرجانے کے بعد پاکستان میں پھنس گئی ہے اور اب پاکستانی کمسن لڑکا غلام حسین جو کہ گجرات میں محروس ہے۔ اداکار سلمان خان کی فلم ’ بجرنگی بھائی جان ‘ کی کامیابی کے بعد یہ دونوں (ہندوستانی لڑکی اور پاکستانی لڑکا ) مرکز توجہ بن گئے ہیں جبکہ فلمی ہیرو ایک گونگی لڑکی کو پاکستان میں اس کے خاندان سے دوبارہ ملا دیتے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT