Friday , June 23 2017
Home / کھیل کی خبریں / گجرات کا آج کولکتہ سے مقابلہ، دونوں ہی ٹیمیں بہتر شروعات کیلئے کوشاں

گجرات کا آج کولکتہ سے مقابلہ، دونوں ہی ٹیمیں بہتر شروعات کیلئے کوشاں

راجکوٹ۔6 اپریل (سیاست ڈاٹ کام ) انڈین پریمیئر لیگ میں گزشتہ برس اپنے پہلے سیشن میں ہی شاندار کھیل سے سب کو حیرت زدہ کرنے والی گجرات لائنس  ٹورنمنٹ کے دسویں ایڈیشن کا آغاز اپنے گھریلو میدان میں  دو مرتبہ کی چیمپئن اور انتہائی تجربہ کار کولکتہ نائٹ رائڈرس کے خلاف کرے گی ۔ آئی پی ایل 2016  میں قدم رکھنے والی کپتان سریش رینا کی گجرات لائنس جمعہ کو اپنے گھریلو سوراشٹر کرکٹ اسٹیڈیم میں ٹورنمنٹ کے دسویں اجلاس کا آغاز کرے گی۔ حالانکہ اس کا پہلا ہی مقابلہ 2012 اور2014 کی فاتح ٹیم کولکتہ سے ہوگاجو گوتم گمبھیر کی کپتانی میں مسلسل بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کر رہی ہے اور ٹورنمنٹ کی سب سے زیادہ کامیاب ٹیموں میں شامل ہے ۔گجرات نے گزشتہ سال بہترین آغاز کرتے ہوئے  گروپ مرحلے میں سات میں سے چھ میچ جیت کر وہ فہرست میں سب سے آگے رہی۔ لیکن ٹورنمنٹ کے آگے بڑھنے کے  ساتھ اس کا حوصلہ جواب دے گیا اور وہ اپنے آخری سات مقابلوں میں شکست کھاکر اس دوڑ سے باہر ہو گئی۔وہیں طویل عرصہ سے ہندستانی ٹیم سے باہر رہنے والے  رائنا کے سامنے بھی اپنی کپتانی میں گجرات کو آگے تک لے جانے کا چیلنج ہے۔دوسری جانب گمبھیر کی کپتانی میں کولکتہ دو مرتبہ چیمپئن بنی ہے ‘ اداکار شاہ رخ خان کی ٹیم دسویں ایڈیشن میں خطابی ہیٹ ٹرک کا خواب دیکھ رہی ہے ۔2011  میں اسٹارگوتم گمبھیر کو ٹیم کا کپتان بنایا گیا تھا اور ان کی قیادت میں کولکتہ نے پھر پانچ سیزن میں چار مرتبہ پلے آف تک رسائی حاصل کی اور دو مرتبہ خطاب بھی جیتا۔ انتہائی پرسکون رہنے والے گمبھیر نے آئی پی ایل میں نہ صرف کپتانی میں بلکہ اپنے بیٹ سے بھی ٹیم کا پوری طرح ساتھ دیا ہے اور وہ ایک بار پھر اس کے لئے تیار دکھائی دے رہے ہیں۔ گزشتہ سال آئی پی ایل میں کولکتہ نے اچھا آغاز کیا تھا لیکن وہ ایلیمنیٹر میں بعد میں چیمپئن بنی سن رائزرس حیدرآباد سے مقابلہ گنوا بیٹھی تھی۔کے کے آر کے پاس گمبھیر جیسے اہم کھلاڑی سمیت بہت اچھی بیٹنگ لائن اپ ہے اور یہ اس کی سب سے بڑی طاقت ہے ۔ اس کے علاوہ ٹیم میں ویسٹ انڈیز کے تجربہ کار ڈیرن براوو، روومین پاول اور نیوزی لینڈ کے شاندار آل راؤنڈر کولن ڈی گرینڈھومے ہیں جن کا ٹوئنٹی 20 میں کافی اچھا ریکارڈ ہے ۔ لیکن گزشتہ سیزن میں اس کا مڈل آرڈر ناکام رہا تھا جس نے کئی مواقع پر ٹیم کو پریشانی میں ڈال دیا تھا۔ امید ہے کہ وہ نیا آغاز اور نئی حکمت عملی سے کرے گی۔ٹیم کے پاس کلدیپ یادو، سنیل نارائن، پیوش چاولہ، ٹرینٹ بولٹ، کرس ووکس اور ناتھن کاولٹ نائل جیسے زبردست بولرس ہیں۔ اس کے علاوہ اسٹار آل راؤنڈر بنگلہ دیش کے شکیب الحسن بھی اس کے لئے ہر مرتبہ کی طرح اہم ثابت ہو سکتے ہیں۔ حالانکہ اس بار آندرے رسیل اپنی ایک سالہ معطلی کی وجہ لیگ کا حصہ نہیں بن پائے ہیں، لیکن اس سے کے کے آر کو مزید فکر نہیں ہوگی کیونکہ اس کے پاس ووکس اور لن جیسے کھلاڑی موجود ہیں۔آئی پی ایل کی نئی ٹیم گجرات کے لئے 10 واں سیزن شاید ٹورنمنٹ میں اس کا آخری سیشن ہو گا کیونکہ چنائی سوپر کنگ اور راجستھان رائلس کے دو دو سال کی معطلی کی وجہ ان کی جگہ گجرات اور رائزنگ پونے سوپرجائنٹس کو لیگ کا حصہ بنایا گیا تھا۔  اگلے سیزن میں پرانی ٹیموں کی واپسی سے شاید ان دونوں ٹیموں کا سفر یہیں ختم ہو جائے اور ایسے میں گجرات کی پوری کوشش رہے گی کہ وہ اس مرتبہ مکمل جارحیت کے ساتھ کھیلے ۔ رائنا کے علاوہ اس کے پاس،  تمل ناڈو کی اپنی گھریلو ٹیم کو حال میں دیودھر چیمپئن بنانے والے دنیش کارتک، ڈوائن براوو، آرون فنچ، جیمز فاکنر، برنڈن مکالم، انگلینڈ کے جیسن رائے جیسے اچھے اور تجربہ کار کھلاڑی ہیں جن سے ایک مرتبہ پھر کسی کرشماتی کارکردگی کی توقع گجرات کو رہے گی۔ حالانکہ اس مرتبہ بھی سب سے زیادہ امید رائنا سے ہے جنہیں ہندوستانی ٹیم میں کافی وقت سے سلیکٹرز نے نظر انداز کیا ہے لیکن وہ آئی پی ایل کے سب سے زیادہ کامیاب اور فعال کھلاڑیوں میں شامل ہیں۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT