Thursday , August 17 2017
Home / ہندوستان / گجرات ہائیکورٹ میں ریزرویشن آرڈیننس کالعدم، ریاستی حکومت کو جھٹکا

گجرات ہائیکورٹ میں ریزرویشن آرڈیننس کالعدم، ریاستی حکومت کو جھٹکا

سپریم کورٹ سے رجوع ہونے کیلئے دو ہفتوں کی مہلت، تحریک تحفظات کا احیاء کرنے ہاردیک پاٹل کا اعلان
احمد آباد۔4 اگست (سیاست ڈاٹ کام) گجرات ہائی کورٹ نے آج خوشحال طبقات میں معاشی طور پر پسماندہ لوگوں کیلئے 10 فیصد تحفظات سے متعلق ریاستی حکومت کے آرڈیننس کو کالعدم کردیا ہے جس کے باعث بی جے پی حکومت کا ایک جھٹکہ تصور کیا جارہا ہے۔ حکومت نے یہ آرڈیننس پٹیل برادری کے احتجاج کو خاموش کروانے کیلئے جاری کیا تھا یکم مئی کو جاری کردہ آرڈیننس کو غیر مناسب اور غیر دستوری قرار دیتے ہوئے چیف جسٹس سبھاش ریڈی اور جسٹس و ایم پنچولی پر مشتمل ڈیویژن بنچ نے کہا کہ ریزرویشن کوٹہ میں یہ صراحت نہیں کی ہے کہ کون لوگ مستحق ہیں۔ جیسا کہ حکومت نے دعوی کیا ہے ڈیویژن بنچ کا یہ تاثر ہے کہ غیر محفوظ زمرہ میں غریبوں کے لئے 10فیصد تحفظات کی فراہمی سے جملہ کوٹہ 50 فیصد سے تجاوز کرگیا ہے جو کہ سپریم کورٹ کے سابق فیصلہ سے ہم آہنگ نہیں ہے۔ ہائی کورٹ نے یہ بھی کہا ہے کہ ریاستی حکومت نے معاشی طو رپر پسماندہ طبقات کو اندھادھند تحفظات مختص کئے ہیں جس کے لئے مطالعہ کیا گیا ہے اور نہ ہی معقول طریقہ سے اعداد و شمار حاصل کئے گئے ہیں۔ تاہم ریاستی حکومت کے وکیل نے عدالت سے اپنے احکامات پر حکم التوا دینے کی درخواست کی ہے تاکہ وہ سپریم کورٹ سے رجوع ہوسکیں جس پر ہائی کورٹ نے دو ہفتوں کی مہلت دے دی۔ درخواست گزاروں دیا رام ورما، روجی بھائی منانی، دلاری بسراگے اور گجرات پیرنٹس اسوسی ایشن نے ریاستی حکومت کے آرڈیننس کو علیحدہ علیحدہ چیلنج کیا تھا لیکن عدالت نے تمام درخواستوں کو یکجا کرکے سماعت کی تھی۔

درخواست گزاروں نے یہ استدلال پیش کیا تھا کہ تحفظات کے معاملہ میں سپریم کورٹ کے فیصلہ کی خلاف ورزی کی گئی جس نے 50 فیصد تک حد مقرر کی ہے۔ حتی کہ دستور میں بھی ریزرویشن پر تحدیدات عائد کی گئی ہے۔ ہائی کورٹ نے دلائل کی سماعت کے بعد آرڈیننس کو کالعدم قرار دیا ہے۔ واضح رہے کہ پٹیل برادری کی تحریک تحفظات کے دوران تشدد بھڑکنے پر بی جے پی حکومت کو پشیماں ہونا پڑا تھا۔ اس تحریک کو بے اثر کرنے کے لئے معاشی طور پر پسماندہ طبقات کے لئے ریزرویشن کے نام پر آرڈیننس جاری کیا تھا۔ اس کے باوجود مجالس مقامی اور پنچایت انتخابات میں حکمران جماعت کو شکست اٹھانی پڑی تھی۔دریں اثناء حکومت گجرات نے آج بتایا کہ ہائی کورٹ میں 10 فیصد ریزرویشن کوٹہ کے آرڈیننس کو کالعدم کردیئے جانے کے خلاف سپریم کورٹ سے رجوع ہوگی جبکہ پاٹیدار تحریک کے لیڈر ہاردیک پاٹل نے عدالت کے فیصلہ کا خیر مقدم کیا ہے اور کہا ہے کہ بہت جلد تحریک تحفظات کا احیاء کریں گے۔ وزیر صحت اور حکومت گجرات کے ترجمان نتن پاٹل نے بتایا کہ معاشی طور پر پسماندہ طبقات فراہمی تحفظات کے عہد پر کاربند ہیں اور ہائی کورٹ کے فیصلے کے خلاف بہت جلد سپریم کورٹ میں اپیل دائر کی جائے گی۔

TOPPOPULARRECENT