Friday , August 18 2017
Home / شہر کی خبریں / ہاسٹل میں لڑکیوں کی اموات کو خودکشی قرار دینے والوں کے خلاف سخت کارروائی کا مطالبہ

ہاسٹل میں لڑکیوں کی اموات کو خودکشی قرار دینے والوں کے خلاف سخت کارروائی کا مطالبہ

جنگل سے نعشیں برآمد ، قتل کا الزام ، انقلابی سماجی جہدکار ورا ورا راؤ کی پریس کانفرنس
حیدرآباد۔7جنوری(سیاست نیوز) ضلع ورنگل میں چند دن قبل دو گریجن لڑکیوں کی ہاسٹل میںموت کو خودکشی کا رنگ دینے کی کوشش کرنے والوں کے خلاف سخت کاروائی کا انقلابی مصنف ورا ورار ائو نے ریاستی انتظامیہ سے مطالبہ کیا۔ ورا ورا رائو نے کہاکہ چند دن قبل پرینکا او ربھومیکا نامی دونابالغ گریجن لڑکیو ں کی نعشیں جنگل سے برآمد ہوئی تھی او ریہ لڑکیاں مقامی گریجن ہاسٹل میںزیر تعلیم تھی مگر ضلع انتظامیہ مذکورہ دونو ں لڑکیو ںکی موت کو خودکشی کارنگ دینے کی کوشش کررہا ہے جبکہ حقیقت اس کے برخلاف ہے ۔ ورا ورا رائونے کہاکہ شادی میںشرکت کے لئے گئے ان لڑکیوںکی مشتبہ حالت میںنعشوں کادستیاب ہونا خود اس بات کی دلیل ہے کہ ان نابالغ لڑکیو ںنے خودکشی نہیں کی بلکہ ان کا بے رحمانہ انداز میںقتل کردیا گیا ہے ۔ ورا ورا رائو نے قتل کی اس واردات میںملوث تمام خاطیوںکے بشمول مقامی گریجن ہاسٹل ‘ پولیس اور ضلع انتظامیہ کے خلاف سختی برتنے کا مطالبہ کیا۔انہوںنے کہاکہ چیف منسٹر کے چندرشیکھر رائونے اپنے تین روزہ ورنگل دورے میں کئی اعلانات کئے اور ورنگل کی عوام پر انعام واکرام کی بارش کردی مگر ورنگل میںپیش آئے اس دوہرے قتل کی واردات پر اپنی زبان کو بند رکھا۔ انہوں نے کہاکہ ورنگل میںچیف منسٹر کے چندرشیکھر رائونے گریجن یونیورسٹی قائم کرنے کا بھی اعلان کیا مگر گریجن طبقے کے جان ومال کی حفاظت کے لئے حکومت کی جانب سے اٹھائے جانے والے اقدامات پر روشنی ڈالنے سے گریز کیا۔ اس موقع پر متوفیہ پرینکا او ربھومیکا کے والدین بھی پریس کانفرنس میںموجود تھے جنھوں نے خودکشی کے تمام دعوئوں کو غلط قراردیتے ہوئے پرینکا او ربھومیکا کو بے دردی کے ساتھ ہلاک کرنے اور خاطیوںکو بچانے کی کوشش کا ضلع پولیس پر الزام عائد کیاہے۔

TOPPOPULARRECENT