Tuesday , August 22 2017
Home / شہر کی خبریں / ہاسپٹلس میں علاج کے نام پر کالا دھن کو سفید کرنے کی اطلاعات

ہاسپٹلس میں علاج کے نام پر کالا دھن کو سفید کرنے کی اطلاعات

محکمہ انکم ٹیکس کی تحقیقات کا آغاز ، بلس اور ٹیکس ادائیگی کا جائزہ
حیدرآباد ۔ 24 ۔ نومبر : ( سیاست نیوز ) : بڑی کرنسی کی منسوخی کے بعد کارپوریٹ ہاسپٹلس میں 500 اور 1000 روپئے کا چلن عام ہوگیا ہے ۔ محکمہ انکم ٹیکس کے عہدیداروں نے 2 لاکھ روپئے سے زائد بلز کی نقد ادائیگی کا مختلف ہاسپٹلس پہونچکر جائزہ لیا ہے ۔ بڑی نوٹوں کی منسوخی کے باوجود ایمرجنسی صورتحال اور بلز و ٹیکس کی ادائیگی کے لیے مرکزی حکومت نے 24 نومبر تک منسوخ شدہ نوٹ قبول کرنے کا فیصلہ کیا تھا ۔ ہاسپٹلس کو بھی منسوخ شدہ نوٹ قبول کرنے کی اجازت دی گئی تھی ۔ تلنگانہ میں جملہ 242 خانگی ہاسپٹلس جس میں نرسنگ ہومس ، سوپر اسپیشالیٹی ہاسپٹلس وغیرہ شامل ہیں ۔ باوثوق ذرائع سے پتہ چلا ہے کہ نوٹوں کی منسوخی کے بعد سنٹرل و اسٹیٹ انٹلی جنس اور انکم ٹیکس عہدیدار بڑے پیمانے پر ہونے والی لین دین پر نظر رکھی ہے ۔ جس سے کئی کارپوریٹ ہاسپٹلس شک کے دائرے میں شامل ہوگئے ہیں ۔ محکمہ انکم ٹیکس کے عہدیداروں نے شہر حیدرآباد کے علاوہ ریاست کے کئی نرسنگ ہومس اور کارپوریٹ ہاسپٹلس پہونچکر علاج کے لیے ادا کی گئی 2 لاکھ روپئے بلز کی نقد ادائیگی پر تفصیلات طلب کی ہے ۔ بعض ہاسپٹلس میں علاج کے نام پر نقد کی شکل میں کالا دھن کو سفید کرلینے کی بھی شکایتیں وصول ہوئی ہیں ۔ انکم ٹیکس عہدیداروں نے 15 دن کے علاج کے دوران ادا کی گئی تمام رقم اور مریضوں کی فہرست ہاسپٹلس سے طلب کرلی ہے ۔ 4 ماہ قبل موجودہ ٹیکس میں ایک فیصد کا اضافہ کرنے کے باوجود اس کی ادائیگی نہ کرنے والے ہاسپٹلس کو نوٹس بھی جاری کی ہے ۔ بڑے اور کارپوریٹ ہاسپٹلس میں 40 تا 45 فیصد نقد کی شکل میں بلز ادا کیے گئے ہیں ۔ 20 تا 25 فیصد انشورنس 30 تا 40 فیصد مرکزی اور ریاستی ملازمین ہیلت اسکیمس کے ذریعہ بلز کی ادائیگی ہوتی ہے ۔ اس طرح 50 تا 60 فیصد بلز کی ادائیگی عمل میں لائی جاتی ہے ۔ محکمہ انکم ٹیکس ان ادائیگیوں کی ٹیکس ادائیگی کا بھی جائزہ لیا ہے ۔ ہاسپٹلس سالانہ ٹیکس ادا کرتے ہیں مگر توقع کے مطابق ٹیکس ادا کیا جارہا ہے یا نہیں اس کا بھی جائزہ لیا جارہا ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT