Friday , July 28 2017
Home / دنیا / ہندوستانی طلباء کو امریکہ میں عدم تحفظ کا احساس

ہندوستانی طلباء کو امریکہ میں عدم تحفظ کا احساس

واشنگٹن ۔15 جولائی ۔(سیاست ڈاٹ کام) امریکہ میں اس وقت جو حالات پائے جاتے ہیں اُس کی بنیاد پر وہاں اعلیٰ تعلیم حاصل کرنے والے ہندوستانی طلباء میں عدم تحفظ کا احساس شدت اختیار کرگیا ہے ۔ انھیں یہ احساس بھی ستانے لگا ہے کہ طلباء برادری کا اُس انداز میں خیرمقدم نہیں کیا جارہا جیسا کہ کسی زمانے میں امریکہ کا طرہ امتیاز رہا ہے۔ انسٹی ٹیوٹ آف انٹرنیشنل ایجوکیشن (IIE) کے مطابق اُس وقت طلباء کے ذہنوں میں ماہ جون میں سپریم کورٹ کے ذریعہ جاری کئے گئے حکمنامہ کا اثر ہے جس سے امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے چھ مسلم ممالک سے آنے والوں کا امریکہ میں داخلہ پر امتناع کے فیصلہ کو ملتوی کردیا تھا۔ اعداد و شمار کے مطابق امریکہ میں مختلف ممالک سے آئے ہوئے طلباء کی تعداد زائد از از ایک ملین ہے جو امریکی معیشت کو 36 بلین ڈالرس کے ذریعہ مستحکم کررہے ہیں۔ انسٹی ٹیوٹ آف انٹرنیشنل ایجوکیشن کا قیام 1919 ء میں عمل میں آیا تھا اور اس کامقصد ابتداء سے ہی منافع کمانا نہیں تھا بلکہ مستحق طلباء کو اسکالرشپ کے ذریعہ تعلیم کے حصول میں اُن کی مدد کرتے ہوئے ایک پرامن سماج کی تخلیق رہا اور اس طرح طلباء کو نہ صرف تعلیم بلکہ ملازمت کے بھی متعدد مواقع فراہم کئے گئے ۔ آئی آئی ای کا کہنا ہے کہ حالیہ دنوں میں جو سروے کئے گئے اُن کا نتیجہ یہ سامنے آیا کہ مشرق وسطیٰ اور ہندوستان کے طلباء یہاں داخلہ لینے سے قبل بہت زیادہ غور و فکر کررہے ہیں ۔ خصوصی طورپر مشرق وسطیٰ کے طلباء میں یہ اندیشے بھی پائے جاتے ہیں کہ آیا امریکی حکومت اُن کے تعلیمی سلسلہ کو مستقبل میں جاری رکھنے کی اجازت دے گی یا نہیں اور دوسری طرف ہندوستانی طلباء کا فکرمند ہونا بھی فطری بات ہے کیونکہ مذہبی بنیاد اور کبھی کبھی غلط تشخّص کی وجہ سے بھی لوگ نفرت انگیز جرائم کا نشانہ بنائے جارہے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT